ناندیڑ میونسپل کارپوریشن انتخابات میں کانگریس کی شاندار فتح

ناندیڑ میونسپل کارپوریشن انتخابات میں کانگریس کی شاندار فتح

بی جے پی ، راشٹروادی، شیوسینا اور ایم آئی ایم کی شرمناک شکست
ناندیڑ۔۱۲؍اکتوبر: (روزنامہ ممبئی اردو نیوز) ناندیڑ میونسپل کارپوریشن کے عام انتخابات کے نتائج کا اعلان آج 12 اکتوبر صبح 10 بجے پالی ٹیکنک کالج احاطہ میں کیاگیا ۔ انتخابات میں کانگریس نے شاندار کامیابی حاصل کرتے ہوئے 81 نشستوں کے منجملہ 69 نشستوں پر شاندار کامیابی حاصل کرکےتمام سیاسی جماعتوں کو شکست دی جبکہ پربھاگ نمبر 2 تروڑہ علاقہ کے پولنگ بوتھ مراکز پر وی وی پی اے ٹی مشین کا استعمال کیا گیا تھا جس کی وجہہ سے دیر رات تک اس پربھاگ کی رائے شماری جاری تھی ۔آج کے نتائج میں سب سے پہلا نتیجہ شہر کے پربھاگ نمبر 11 حیدر باغ علاقہ کا جاری کیا گیا جس میں کانگریس کے چاروں امیدواروں نے ایم آئی ایم کے امیدواروں کو شکست دیتے ہوئے شاندار کامیابی حاصل کی۔ اس پربھاگ کے کانگریس کے امیدوار مسعود احمد خان کو 6500 ووٹ حاصل ہوئے جبک ایم آئی ایم کے امیدوار خواجہ مسیح الدین کو صرف 3051 ووٹ حاصل ہوئے اسی زون کے کانگریسی امیدوار سید شیر علی کو 5537 ووٹ حاصل ہوئے جبکہ ایم آئی ایم کے عبدالباسط کو 2400 ووٹ حاصل ہوئے۔ اسی طرح کانگریس کی آسیہ بیگم حبیب باغبان نے 6024ووٹ حاصل کرتے ہوئے ایم آئی ایم کے سید عظیمہ بی کو 3468 ووٹ حاصل ہوئے ۔اس کے علاوہ کانگریس کی رضیہ بیگم کو 5537 ووٹ حاصل ہوئے جبکہ ایم آئی ایم کے قیصر بیگم کو 2418 ووٹ حاصل ہوئے۔ اس زون میں ایم آئی ایم چاروں امیدواروں کو شکست کا سامنا کرنا پڑا ۔شہر کے زون نمبر 5 بھاگیہ نگر میں کانگریس کے امیدوار فاروق علی خان نے 4881 ووٹ حاصل کئے جبکہ بی جے پی آنند جوادوار کو 3007 ووٹ حاصل ہوئے۔ اسی زون کے بقیہ تینوں نشستوں پر کانگریس کے امیدوار اپرنا نیرلکر، جئے شری پاو ڑے اور مہیندر پمپڑے نے بی جے پی کے امیدواروں کو شکست دیتے ہوئے کامیابی حاصل کی۔اس کے علاوہ پرانے شہر کے زون نمبر 12 عمر کالونی ،زون نمبر 13 مدینہ نگر، زون نمبر 14 ہولی ،زون نمبر 15 اتوارہ ،زون نمبر 5 بھاگیہ نگر، زون نمبر 7 سراوستی نگر، زون نمبر 8 شیواجی نگر، زون نمبر 9 نیا مونڈھا ،زون نمبر 10 دت نگر ان تمام زون نمبر میں کانگریس کے تمام امیدواروں نے شاندار جیت حاصل کرتے ہوئے بی جے پی کے امیدواروں کو شکست دی ۔ان انتخابات میں جہاں ایک طرف راشٹر وادی ،ایم آئی ایم ،سماج وادی پارٹی کو بری طرح شکست کا سامنا کرنا پڑا ۔جبکہ بی جے پی اور شیو سینا کو بھی بری طرح سے شکست کا سامنا کرنا پڑا ۔ان انتخابات سے یہ بات ظاہر ہے کہ ناندیڑ میں ریاست کے سابق وزیر اعلیٰ اور مہاراشٹر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر اشوک چوہان کا سیاسی اثر و رسوخ آج بھی قائم ہے۔ جیت حاصل کرنے والے تمام امیدواروں کا کہنا ہے یہ جیت اشوک چوہان کی جیت ہے کیوں کہ ان کی ہی بدولت آج ناندیڑ کی تاریخ میں پہلی مرتبہ میونسپل کارپوریشن کے انتخابات میں کانگریس کو اتنی شاندار پیمانے پر جیت حاصل ہوئی ہے۔ واضح ہو کہ پچھلی میونسپل انتخابات میں کانگریس کو صرف 40 نشستوں پر کامیابی حاصل ہوئی تھی جبکہ راشٹر وادی کانگریس 10 شیو سینا 15،ایم آئی ایم 11 ، بی جے پی 2 اور سنویدھا پارٹی کو 2 نشستیں حاصل ہوئی تھی ۔اس مرتبہ کے انتخابات میں یہ قیاس آرائی کی جارہی تھی کہ بی جے پی زیادہ نشستیں حاصل کر پائے گی کیوں کہ جس طرح پچھلی 15 دنوں سے بی جے پی کی ہائی ٹیک تشہیری مہم زور و شور سے جاری تھی اور تشہیری مہم میں ریاست کے وزیر اعلیٰ دیویندر پھڑنویس سمیت ریاست کے دو درجن سے زائد وزراءنے اس تشہیری مہم میں حصہ لیا تھا وہیں دوسری جانب شیوسینا نے بھی ان انتخابات میں ایڑی چوٹی کا زور لگاتے ہوئے کامیابی کی پھر پور کوشش کی اور تشہیری مہم کے لئے پارٹی کے پرمکھ ادھو ٹھاکرے سمیت ریاست کے شیو سینا کے کئی وزراءنے بھی ان انتخابات میں تشہیری مہم میں حصہ لیا تھا۔ لےکن پچھلی انتخابات میں جہاں شیو سینا نے 15 نشستوں پر کامیابی حاصل کی تھی آج ان انتخابات میں وہ صرف 1نشست پر سمٹ کررہ گئی ہے اسی طرح اس بات کی قیاس آرائی کی جارہی تھی کہ بی جے پی بہت زیادہ نشستوں پر کامیابی حاصل کرے گی لیکن وہ بھی صرف 6 نشستوں تک ہی محدود رہے گئی۔ مجلس اتحاد المسلمین نے پچھلے انتخابات میں 11 نشستوں پر کامیابی حاصل کر ریاست مہاراشٹر میں ایک تاریخ رقم کی تھی لیکن اس بار ان کے تمام 32 امیدواروں کو شکست کا سامنا کرنا پڑا ۔راشٹر وادی کانگریس پارٹی نے بھی ان انتخابات میں ایڑی چوٹی کا زور لگاتے ہوئے اپنے کئی امیدوار میدان میں اتارے تھے لیکن انہیں بھی بری طرح سے شکست کا سامنا کرنا پڑا اور ان کا ایک بھی امیدوار جیت حاصل نہیں کر پایا ۔اس انتخابات میں سب سے حیرت انگیز نتائج یہ رہے کہ کارپوریشن کے اپوزیشن لیڈر شیوسینا کے امیدوار بنڈو کھیڑکر ،شیو سینا سے بی جے پی میں جانے والے باڑو کھومنے ،کانگریس سے بی جے پی میں شامل ہونے والے سابق رکن اسمبلی کے فرزند نول پوکرنا ،سابق کانگریس کے رکن پارلیمان بھاسکر راو پاٹل کھت گاو ں کر کے انتہائی قریبی رفیق سرجیت سنگھ گل ،کشور یادو ،سابق مئےر سدھاکر پانڈھرے کی دختر اور موجودہ کارپوریٹر اسنیہا پانڈھرے کے علاوہ راشٹر وادی کانگریس کے فیروز خان لالہ ،بی بی ابراہیم (محمد پاشاہ )،راشٹر وادی کانگریس پارٹی کے ریاستی نائب صدر ایڈوکیٹ محمد خان پٹھان کے فرزند محسن خان پٹھا ن،راشٹر وادی کے قد آور شخصیت وہ آج تک ہمیشہ کامیاب ہونے والے غفار خان پٹھان ،مجلس کے ریاستی صدر سید معین کی والدہ ذکیہ بیگم محمد مختار ،کانگریس کی مئیر کی دوڑ کی اہم امیدوار ڈاکٹر کلپنا جمداڑے ،کانگریس کے امیدوار جو سابق میں مجلس سے چن کر آئے تھے عبدالحبیب باوزیر، دختر ایوب خان پٹھان، مجلس سے راشٹر وادی میں جانے والے انجم بیگم محمد افروز ،راشٹر وادی سے شیو سینا میں شامل ہونے والے موجودہ کارپوریٹر سید جانی ،بی جے پی کے قد آور قائد دلیپ کندکرتے کے فرزند کنہال دلیپ کندکرتے ،سنویدھا پارٹی سے کانگریس میں شامل ہونے والے با لا صاحب دیشمکھ ،انجلی سریش گائےکواڑ کو شرم ناک شکست کا سامنا کرنا پڑاـ رات دیر گئے تک زون نمبر 2 کی رائے شماری جاری تھی۔

 




Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *