آج بابری مسجد کی شہادت ۲۵؍ویں برسی پر

آج بابری مسجد کی شہادت ۲۵؍ویں برسی پر

ملک بھر میں حفاظتی انتظامات سخت
مرکزی وزارت داخلہ کی تمام ریاستوں کو لاء اینڈ آرڈر کی برقراری کی ہدایت، آج لیفٹ کی طرف سے ’یوم سیاہ‘ اور مظاہرہ
ممبئی۔ ۵؍دسمبر: (نمائندہ خصوصی) ایودھیا میں بابری مسجد کی شہادت کے یوم ۶؍دسمبر سے ایک روز قبل مرکز نے ریاستی سرکاروں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو ملک بھر میں امن وامان اور لاء اینڈ آرڈر کی برقراری کے احکامات دئیے ہیں۔ مرکزی وزارت داخلہ نے ایک ایڈوائژری جاری کرکے تمام ریاستوں سے کہا ہے کہ ۶؍دسمبر کے روز، جو یوم شہادت بابری مسجد ہے، امن وامان اور لاء اینڈ آرڈر برقرار رکھا جائے۔ مرکزی وزارت داخلہ کے ذرائع کے مطابق تمام ریاستوں اور تمام مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو بھائی چارہ اور قومی یکجہتی برقرار رکھنے کی ہدایت دی گئی ہے۔ کہاگیا ہے کہ ۶؍دسمبر کو دونوں ہی فرقوں کی جانب سے مظاہرے ہوتے ہیں اس لیے سخت ترین چوکسی رکھی جائے اور حا لات سے نمٹنے کے لیے ہر ممکنہ اقدامات اُٹھائےجائیں۔ واضح رہے کہ ۶؍دسمبر کو مسلمانوں کی جانب سے ’یوم سیاہ‘ منایا جاتا ہے اور مسلم تنظیمیںمختلف طریقے سے بابری مسجد کو یاد کرتی ہیں۔ رضا اکیڈمی ممبئی کی جانب سے اس روز اذانیں دی جاتی ہیں۔ اس روز سنگھ پریوار کی ذیلی تنظیمیں ’شوریہ دوِس‘ مناتی ہیں جسے ’یوم فتح‘ بھی کہا جاتا ہے۔ بایاں محاذ کی جانب سے ’یوم سیاہ‘ منانے کا اعلان کیاگیا ہے۔ لیفٹ کی چھ پارٹیاں سی پی آئی(ایم)، سی پی آئی، آر ایس پی، اے آئی ایف پی، سی پی آئی (ایم ایل) اور ایس یو سی آئی (سی) نے تمام یونٹوں کو یہ ہدایت دی ہے کہ وہ ملک بھر میں بابری مسجد کی شہادت کے خلاف ’یوم سیاہ‘ مناکر احتجاج اور مظاہرے کیں۔ لیفٹ نے اسے ملک میں بڑھتی ہوئی فرقہ وارانہ منافرت کے خلاف ایک مہم بھی بتایا ہے۔ ۶؍دسمبر کو لیفٹ کی طرف سے بابا صاحب امبیڈکر کی برسی بھی منائی جائے گی۔ اطلاعات کے مطابق ۶؍دسمبر کے پیش نظر ایودھیا میں ہائی الرٹ کردیاگیا ہے او رملک بھر کی ریاستوں نے حفاظتی انتظامات سخت کردئیے ہیں۔ مہاراشٹر میں فڈنویس سرکار نے سیکوریٹی سخت کردی ہے۔ حساس علاقوں میں پولس گشت تیز کردیاگیا ہے۔ ممبئی شہر میں جو، ۶؍دسمبر کے بعد شدید ترین فرقہ وارانہ فسادات سے دوچار ہوا تھا سیکوریٹی کے انتظامات سخت کیے گئے ہیں۔