کیوں نہیں منظور یہ کالا قانون؟

کیوں نہیں منظور یہ کالا قانون؟

محمد اللہ قیصر قاسمی
1-مرد نے غصے میں تین طلاق دے دیا۔
– 2 عورت نے غصے میں پولس کمپلین کردی۔
-3 پولس ن جنے مرد کو ناقابل ضمانت وارنٹ پر جیل میں ڈال دیا۔
4 ۔اب عورت کی ذمہ داری ہے کہ وہ یہ ثابت کرے کہ مرد نے اسے تین طلاق دیا ہے(جو مشکل ہے اور اس میں عورت پریشان ہوگی)
5 ۔ثابت ہوگیا، مرد تین سال کیلئے گیا جیل.6 عورت اور بچوں کا خرچ کون برداشت کرے گا؟7
عورت دوسری شادی بھی نہیں کر سکتی کیونکہ ابھی طلاق نہیں ہوئ(اس نئے قانون کے مطابق)
8 ۔کیا عورت کو اس کے ساس، سسر، نند، دیور اس گھر میں رہنے دینگے؟ جس کی شکایت پر اس کا بیٹا/بھائ جیل گیا ہے۔
9 ۔مرد تین سال جیل کی سزا کاٹنے کے بعد گھر واپسی پر اس عورت کے ساتھ رہے گا جس کی وجہ سے وہ گھر سے نکلا ہے؟ کبھی نہیں۔
10 ۔ اس درمیان صلح کی جو تھوڑی سی گنجائش تھی وہ بھی ختم، اس کے ساتھ مرد عورت سمیت بچوں کی زندگی بھی تباہ ہو گئی۔
جو پارٹی مسلمانوں کو آتنک وادی، دیش دروہی،پاکستانی، اور کٹوا جیسے الفاظ سے خطاب کرتی ہے،جو پارٹی بیف اور لو جہاد کے نام پر مسلمانوں کو قتل کراتی ہے. وہ کیا واقعی مسلمانوں کا بھلا سونچ سکتی ہے؟ درحقیقت حالیہ طلاق مخالف بل ایک اینٹی مسلم، کالا قانون ہے۔