اسرائیل کے وزیر اعظم کے دورہ ہند کو رد کرنے کا مطالبہ

اسرائیل کے وزیر اعظم کے دورہ ہند کو رد کرنے کا مطالبہ

آزاد میدان میں علماءکرام اور ائمہ مساجد کا ۱۵؍جنوری سے ۱۹؍جنوری تک احتجاجی دھرنا دینے کا اعلان
ممبئی:12؍جنوری(بی این ایس)اسرائیل کے وزیراعظم کے دورہ ہند کو رد کرنے کا مطالبہ رضااکیڈمی،سنی جمعیت علماء،مسلم کونسل اور رحمانی گروپ نے کرتے ہوئے ۱۵؍جنوری سے ۱۹؍جنوری تک آزاد میدان میں علماءکرام اور ائمہ مساجد کے پانچ روزہ احتجاجی دھرنے کا اعلان کیاہے۔رضا اکیڈمی کےبانی الحاج محمد سعید نوری نے کہا کہ قبلہ اول کا دشمن، فلسطینی بچوں اور پوری انسانیت کاقاتل اسرائیل کا وزیر اعظم نیتن یاہو کی مخالفت میں ممبئی کے آزاد میدان میں ۱۵؍جنوری سے ۱۹؍جنوری تک علماءکرام اور ائمہ مساجد کے پانچ روزہ دھرنے کا فیصلہ کیاگیا ہے۔اس احتجاج کا مقصد قبلہ اول کے غاصب ،بے گناہ فلسظینیوں اور خاص طور سے چھوٹے چھوٹے مظلوم بچوںکے قاتل کے جرم کو عوام کے سامنے آشکار کرناہے۔یہ احتجاجی دھرنا انتہائی اہمیت کا حامل ہے اس لئے ہم تمام علماءکرام اور ائمہ مساجد سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ زیادہ سے زیادہ تعداد میں اس احتجاجی دھرنےمیں شرکت کریں تاکہ اسرائیل کے وزیر اعظم کا دورہ حکومت رد کرنے کے لئے مجبور ہوجائیں۔حضرت مولانا امان اللہ رضا نے کہا کہ اسرائیل کے وزیر اعظم نیتن یاہو کے دورہ ہند کی خبر سے ہر مسلمان اور ملک کے سیکولر افراد میں بے چینی کا ماحول ہے۔چونکہ وہ انسان دوست نہیں ہے۔اس نے فلسطین کے مسلمانوں پر ظلم ڈھانے میں کوئی کسر نہیں اٹھا رکھی ہے۔لہذا ہم اس کی سخت مخالفت کرتے ہیں۔حضرت مولانا اعجاز کشمیر ی نے کہا کہ ہندوستان کی جمہوریت کی دشمن حکومت کی دعوت پر دنیا کا سب سے بڑا دہشت گرد اسرائیل کا وزیر اعظم نیتن یاہو ہندوستان کے امن کو ختم کرنے کے لئے ہندوستا ن آرہا ہے۔ہندوستان کی تاریخ ہے کہ اس نے ملک اور عالمی سطح پر ہمیشہ مظلومین کی حمایت کی ہے لیکن افسوس کی بات ہے کہ حکومت ہند کی دعوت پر نیتن ہاہو ہندوستان آرہا ہے جس سے ہندوستان کے دامن پر بد نما داغ لگے گااور اس سے ملک کے ہر انصاف پسند شہری کے دل کو ٹھیس پہنچے گی ۔ہم علماءکرام سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ کثیر تعداد میں اس دھرنے میں شرکت کریں اور امت محمدیہﷺکو یہ پیغام دیں کہ علماءکرام آج بھی اپنی جانوں کو ہتھیلی پر رکھ کر ہر ظالم کے خلاف کھڑے ہیں۔دارالعلوم اہلسنت غریب نواز نئی ممبئی کے صدرالمدرسین حضرت مولانا محمد خلیل اللہ سبحانی نے کہا کہ دنیا میں اچھے اور برے انسان ہوتے ہیں ۔لیکن اس وقت دنیا کا سب سے بد ترین انسان جس کے دامن پر نہ جانے کتنے بچوں کے خون کے دھبے لگے ہوئے ہیں ۔وہ اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو ہندوستان کے دورے پر آنے والا ہےلیکن حکومت اگر انھیں مدعو نہ کرتی تو بہتر ہوتاچونکہ ہمارا وطن امن پسندہے اور یہاں ایسے لوگوں کی ہرگز کوئی ضرورت نہیں ہے۔حضرت مولانا ولی اللہ شریفی نے کہا کہ انسانیت کاقاتل خصوصاً مسلمانوں کا قاتل اور فلسطین کے مظلومین کو میزائل کا نشانہ بنانے والا اسرائیل کا ظالم وزیر اعظم نیتن یاہو ملک میں آنے والا ہے جس کی ہم سخت مذمت کرتے ہیں۔لہذا ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اسرائیل کے وزیراعظم کا دورہ ہند کو رد کریں۔دارالعلوم حاجی علی کے بانی قاری عبدالرحمان ضیائی نے کہا کہ نیتن یاہو جو امن کا دشمن ہے۔عالمی مجرم ہے ۔ہمارا ملک جو ہمیشہ فلسطین نواز رہا ہے۔ایسے غاصب اور ظالم حکمراں کا استقبال یہاں کا انصاف پسند شہری کبھی نہیں کرےگا۔لہذا ہم حکومت ہند سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اگر وہ واقعی سب کا ساتھ سب کاوکاس کا دعویٰ کرتی ہے تو وہ مسلمانوں کے جذبات کا احترام کرتے ہوئے نیتن یاہو کے ہندوستان کے دورہ کو رد کردیں۔رضا اکیڈمی کے صدر دفتر میں منعقد اس میٹنگ میںرحمانی گروپ کے رکن آصف سردار، حضرت قاری نیاز احمد رضوی ،حضرت قاری وسیم القادری،حضرت حافظ جنید رضا ،حضرت احمد رضا شریفی،حافظ اسلم رضوی،رضا اکیڈمی چیتاکیمپ کے عبدالقیوم ،اعلیٰ حضرت فاؤنڈیشن کے عبدالظفر خان،رئیس احمد شیخ،حضرت عبدالرحمان و دیگر علماء کرام موجود تھے۔