تازه ترين

اسرائیل میں پناہ گزیں افریقی مہاجرین کودوماہ کے اندرملک چھوڑنے کانوٹس جاری

اسرائیل میں پناہ گزیں افریقی مہاجرین کودوماہ کے اندرملک چھوڑنے کانوٹس جاری

تل ابیب:7؍فروری(بی این ایس)
اسرائیل نے افریقی سیاسی پناہ کے متلاشیوں کو نوٹس جاری کرنے کا آغاز کر دیا ہے کہ انہیں دو ماہ کے اندر اندر اسرائیل کو چھوڑ کر ایک نامعلوم ملک جانا ہو گا۔ انسانی حقوق کے گروپ اس اسرائیلی فیصلے کی مذمت کر رہے ہیں۔اسرائیل نے افریقی مہاجرین اور تارکین وطن کو دو ماہ کے اندر اندر اسرائیل چھوڑ کر کسی تیسرے ملک روانہ ہونے کا حکم جاری کر دیا ہے۔ اسرائیلی اخبار ’ہاریٹز‘ کے مطابق اتوار کے روز سے ان تارکین وطن کو خطوط ملنا شروع ہو گئے ہیں جن میں انہیں جہاز کے ٹکٹ کے علاوہ ساڑھے تین ہزار ڈالرز فراہم کرنے کی پیشکش کی گئی ہے۔ اخبار کے مطابق اسرائیل میں ایسے 15 سے 20 ہزار افریقی تارکین وطن موجود ہیں۔اسرائیل کے امیگریشن حکام کے مطابق یہ نوٹس کُل 38 ہزار افریقی تارکین وطن میں سے محض ان افراد کو جاری کیے گئے ہیں جو اکیلے ہیں اور ان میں سے زیادہ تر کا تعلق ایریٹیریا یا سوڈان سے ہے۔
اسرائیلی امیگریشن اتھارٹی کی طرف سےجن لوگوں کو نوٹس جاری کیے گئے ہیں انہیں مارچ کے آخر تک اسرائیل چھوڑنے کا حکم دیا گیا ہے ورنہ انہیں جیل بھیجے جانے اور پھر حتمی طور پر ملک بدر کرنے کی دھمکی دی گئی ہے۔
اسرائیل میں موجود افریقی سیاسی پناہ کے متلاشیوں کو ایک ایسے نامعلوم افریقی ملک روانہ کرنے کے منصوبے کا اعلان تین جنوری کو اسرائیلی وزیراعظم بینجمن نیتن یاہو نے کیا تھا۔ اس سلسلے میں اُس افریقی ملک کے ساتھ ایک خفیہ معاہدہ بھی کیا جا چکا ہے۔اسرائیلی وزیر اعظم سیاسی پناہ کے ایسے متلاشیوں کو معاشی تارکین وطن قرار دیتے ہیں اور ان کے لیے ایسے ’دراندازوں‘ کی اصطلاح استعمال کرتے ہیں جو مصر سے داخل ہو رہے ہیں۔اسرائیلی حکومت کے اس فیصلے پر افریقی تارکین وطن کے علاوہ اسرائیلی اور بین الاقوامی انسانی حقوق کے گروپ احتجاج کر رہے ہیں۔