ترکی صدرنے اپنے روسی ہم منصب سے شام کے غوطہ اورعفرین پرگفتگوکی

ترکی صدرنے اپنے روسی ہم منصب سے شام کے غوطہ اورعفرین پرگفتگوکی

ماسکو :7؍مارچ(بی این ایس؍ایجنسی)
ماسکو میں کریملن ہاؤس کے ایک اعلان کے مطابق روسی صدر ولادیمیر پوتین اور ان کے ترک ہم منصب رجب طیب ایردوآن نے ٹیلفون پر شام کے علاقے الغوطہ الشرقیہ کی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا۔
منگل کی شام جاری بیان میں کرملن نے بتایا کہ ایردوآن نے پوتین کو شام کے علاقے عفرین میں جاری ترکی کے فوجی آپریشن کے بارے میں بھی آگاہ کیا۔
دونوں سربراہان کی گفتگو میں توانائی کے سیکٹر میں مشترکہ حکمت عملی کے منصوبے بھی زیر بحث آئے۔
عفرین کے حوالے سے فرانس یہ اعلان کر چکا ہے کہ اس نے ترکی پر زور دیا ہے کہ وہ شمالی شام میں واقع شہر عفرین میں اپنی عسکری کارروائیاں روک دے۔
فرانسیسی وزیر خارجہ جان ایف لودریاں نے منگل کے روز پارلیمنٹ میں خارجہ امور کی کمیٹی کے سامنے بتایا کہ شام کے حوالے سے عالمی برادری کی توجہ اس امر پر مرکوز ہے کہ اپوزیشن کے زیر کنٹرول علاقے الغوطہ الشرقیہ میں اقوام متحدہ کی سپورٹ سے فائر بندی پر عمل درامد کیا جائے۔ البتہ لودریاں کا یہ بھی کہنا تھا کہ کردوں کے زیر کنٹرول علاقے عفرین کی صورت حال کو بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔
فرانسیسی وزیر خارجہ نے باور کرایا کہ “فائر بندی کی خواہش سب کی خاطر ہے، پورے شام کی خاطر ہے۔ ہم آئندہ دنوں میں الغوطہ الشرقیہ کے مسئلے کے حوالے سے جمع ہوں گے تاہم جنگ بندی کا نفاذ بھی سب پر ہوتا ہے جس میں عفرین بھی شامل ہے”۔