طلاق ثلاثہ بل راجیہ سبھا میں پیش نہیں کیا جاسکا ، اپوزیشن کے مثالی اتحاد کے سامنے حزب اقتدار نے گھٹنے ٹیکے!

طلاق ثلاثہ بل راجیہ سبھا میں پیش نہیں کیا جاسکا ، اپوزیشن کے مثالی اتحاد کے سامنے حزب اقتدار نے گھٹنے ٹیکے!

نئی دہلی 10 اگست (بصیرت نیوز سروس) حزب اختلاف کے مثالی اتحاد کے سامنے حکومت نے گھٹنے ٹیک دئے اور مانسون اجلاس کے آخری دن بھی طلاق ثلاثہ بل راجیہ سبھا میں پیش نہیں ہوا.
پارلیمنٹ کے مانسوس اجلاس کے آخری دن کانگریس اور بی جے پی میں آر پار کی جنگ دیکھنے کو ملی۔ حکومت کی طرف سے ترمیم شدہ طلاق ثلاثہ بل پیش کرنے کی کوشش کی گئی؛ لیکن حزب احتلاف کے اتحاد نے حکومت کو ایسا کرنے سے ناکام کر دیا۔ آخر کار حزب اقتدار کو ہار ماننی پڑی اور طلاق ثلاثہ پر مبنی بل پیش نہیں کیا جا سکا۔ اس بل کو منظور کرانے کے لئے اب حکوت کو اگلے اجلاس کا انتظار کرنا پڑے گا ۔
جمعہ کو پارلیمنٹ کی کارروائی کا آغاز ہونے پر کانگریس نے رافیل سودے کا معاملہ اٹھایا اور زبردست ہنگامہ کیا۔ اس کے بعد اپوزیشن جماعتوں نے طلاق ثلاثہ پر مبنی بل کو پیش کئے جانے کی مخالفت کی۔ ہنگامہ کے چلتے راجیہ سبھا کی کارروائی کو 2.30 بجے تک ملتوی کر دینی پڑی۔ بعد میں کارروائی کا ازسر نو آغاز ہوا۔ .
جمعرات کو ہی مودی کابینہ نے اس بل میں ترامیم کی تھیں، جس کے بعد حکومت کو امید تھی اب بل منظور ہو جائے گا۔ واضح رہے کہ اس بل میں تمام طرح کی خامیاں تھیں جس کی وجہ سے کانگریس سمیت اپوزیشن کا اس پر سخت اعتراض تھا۔ جمعہ کے روز یو پی اے کی چیئر پرسن سونیا گاندھی نے میڈیا سے یہ کہا تھا کہ ان کا موقف وہی ہے جو پہلے تھا اور اس میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔ جمعہ کے روز حکومت کی جانب سے راجیہ سبھا میں ترمیم شدہ بل کی کاپیاں بھی بانٹی گئی۔ لیکن حکومت کی ایک نہ چلی، بل پیش نہیں ہو سکا اور حکومت کو اسے منظور کرانے کے لئے اب اگلے اجلاس کا انتظار کرنا ہوگا۔
اپوزیشن کی طرف سے طلاق ثلاثہ بل کی مخالفت
تین طلاق بل کو لے کر ٹی ایم سی کے رکن پارلیمنٹ ڈیریک او برائن نے کہا کہ جمعہ کو پرائیویٹ بلوں پر بحث ہوتی ہے ایسے میں حکومت طلاق ثلاثہ پر مبنی بل کیسے لا سکتی ہے!