اخبارجہاں

صابن اور گرم پانی کا استعمال، الکحل کی نسبت سے کرونا سے بچائو میں زیادہ مفیدہے: ماہرین

آن لائن نیوزڈیسک
دنیا بھر میں پھیلنے والے کرونا وائرس سے بچائو کے لیے مختلف طریقے اور ٹوٹکے بیان کیے جا رہے ہیں۔ سی این این نے ماہرین صحت کی آراکی روشنی میں ایک رپورٹ نشر کی ہے جس میں ماہرین نے گرم پانی اور صابن کے ساتھ ہاتھ منہ دھونے کی تجویز پیش کی ہے۔ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر پانی گرم ہو کم سے کم 20 سکینڈز تک ہاتھ دھوئے جائیں اور اگر پانی ٹھنڈا ہو تو ہاتھ دوھونے کا دورانیہ 30 سکینڈ ہونا چاہیے۔ یہ طریقہ ہرطرح کے متعدد امراض بالخصوص کرونا جیسی خطرناک بیماری سے بچائو میں بہت مفید ثابت ہوسکتا ہے۔پیٹسبرگ چلڈرن ہاسپٹل میڈیکل سنٹرمیں شعبہ امراض اطفال اور متعدی امراض کے محکمہ کے سربراہ ڈاکٹر جان ولیم کہتے ہیں کہ یہاں چار مختلف وائرل وائرس ہیں جو لوگوں کے درمیان مستقل طور پر ہر سال گردش کرتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ وہ بنیادی طور پر نزلہ زکام کا سبب بنتے ہیں۔ درحقیقت وہ عام نزلہ زکام ایک تہائی حصہ ہوتے ہیں۔ لیکن وہ موت کا سبب نہیں بنتے ہیں۔نہ صرف پانی اور صابن سے کرونا وائرس کا خاتمہ ہوتا ہے ، بلکہ یہ فلو جیسے دوسرے مضر وائرل وائرس کو بھی ہلاک کرتا ہے۔ کرونا وائرس انسان کے سانس کے نظام کو متاثر کرتا ہے اور بعض معاملات میں اس سے نمونیا کی بیماری اور بڑھ جاتی ہے۔پانی ، صابن یا الکحل وائرس سے چھٹکارا حاصل کرنے کے لیے کس طرح کام کرتے ہیں؟ اس کے بارے میں ڈاکٹر ولیمز بتاتے ہیں کہ صابن یا شراب وائرس کے لیے چکنائی کو تحلیل کرنے میں مؤثر طریقے سے مدد کرتا ہے۔ چربی کی پرت تحلیل ہونے پر وائرس میں جسمانی طور پر خلل پیدا ہوجاتا ہے کیونکہ پانی ، صابن اور الکحل سے وائرس متاثر ہوتا ہے اور وہ انسانی خلیات پر اثرا نداز ہونے کے قابل نہیں رہتا۔گرم پانی تن تنہا بیکٹیریا یا وائرس کو نہیں مارتا اور اس سے ہاتھوں کی جلد میں جلن ہوسکتی ہے۔ لہذا ایموری یونیورسٹی کے ایسوسی ایٹ پروفیسر کیمسٹ بل ویسٹ کا کہنا ہے کہ ٹھنڈا پانی یقینا مثبت نتیجہ برآمد کرے گا لیکن 30 سیکنڈ تک وافر جھاگ حاصل کرنے کے لیے صابن سے ہاتھ اچھی طرح صاف کرنے کی بات کو یقینی بنانا ضروری ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ صابن کے ساتھ گرم پانی زیادہ بہتر اور تیز جھاگ پیدا کرتا ہے جو کسی بھی گندگی ، بیکٹیریا یا وائرس سے آسانی سے چھٹکارا حاصل کرنے میں مدد کرتا ہے۔شیفنر نے وضاحت کی ہے کہ الکحل کے محلول سے ہاتھوں کی صفائی وائرس سے نجات دہندگی میں صابن کی طرح موثر ثابت ہوسکتی ہے اگر صحیح استعمال کیا جائے۔ تاہم دیکھنا یہ چاہیے کہ ہاتھ دھوتے وقت پانی اور الکحل میں الکحل کی مقدار 60 فی صد سے کم نہ ہو۔ کوویڈ-19 ایک سب سے زیادہ متعدی بیماری ہے جس نے پچھلی دہائیوں میں کسی دوسرے وائرس کی نسبت ہمارے سیارے کو سب سے زیادہ متاثر کیا ہے۔ اس کے باوجود مصنوعی ذہانت کرونا کے خلاف سب سے زیادہ موثر ہے؟۔شیفنر نے وضاحت کی ہے کہ صرف ہاتھ کی ہتھیلی میں چھوٹے چھوٹے پوائنٹس ڈالنا اور جلدی سے مسح کرنا جراثیم اور وائرس کے خاتمے کے لئے کافی نہیں ہے بلکہ ایک ایسی مقدار جو ہاتھ کی پوری ہتھیلی کو ڈھانپتی ہے اور ہر طرف اور انگلیوں کو ہر طرف اچھی طرح اپنی لپیٹ میں لیتی ہے۔شیفنر نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ لکحل میں صابن سے مختلف کیمیائی مرکبات ہوتے ہیں۔ یہ بیکٹیریل جھلیوں کو توڑنے میں مدد کرتا ہے لیکن اس بات کو یقینی بنانا ہوگا کہ شراب بیکٹیریا یا وائرس پر مشتمل تمام حصوں سے براہ راست مل جائے۔ولیمز کا خیال ہے کہ ایسے معاملات ہیں الکحل کے بجائے پانی اور صابن کا استعمال بہتر ہے ، کیونکہ صابن اور پانی کی صلاحیت مائکروجنزموں کو مار ڈالتا ہے۔ولیمز کا مزید کہنا ہے کہ شراب جراثیم کے خاتمے میں بہت کارآمد ہے لیکن پانی اور صابن بہتر ہے کیونکہ ایسے نقصان دہ جراثیم اور بیکٹیریا موجود ہیں جن کا پیٹ ہموار نہیں ہوتا ہے اور صابن کے بلبلوں اور جھاگوں سے ہیپاٹائٹس اے وائرس ، پولیو ، میننجائٹس اور نمونیہ کو ختم کیا جاسکتا ہے۔

Tags
Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker