Baseerat Online News Portal

سپریم کورٹ نے کہا :کورونا ٹیسٹ کی قیمت پورے ملک میں ایک ہونی چاہیے

نئی دہلی:19؍ جون ( بی این ایس )
ملک بھر میں کورونا وائرس ٹیسٹ کی مختلف قیمتوں کے بارے میں سپریم کورٹ نے اہم رائے دی ہے۔ جمعہ کے روز سپریم کورٹ نے کہا کہ کورونا ٹیسٹ کی قیمت پورے ملک میں ایک ہونی چاہئے، کہیں یہ ٹیسٹ 2200 اور کہیں 4500 روپے ہے۔ ایسا نہیں ہونا چاہئے۔ جسٹس اشوک بھوشن بھی اس کیس کی سماعت کرنے والی بینچ میں شامل ہیں۔ سماعت کے دوران جسٹس بھوشن نے کہاکہ کورونا ٹیسٹنگ کے لئے مناسب شرح طے کی جانی چاہئے۔ اس سلسلے میں ملک بھر میں یکساں قیمت ہونی چاہئے۔کورونا کے علاج اور اسپتالوں میں کورونا سے متاثرہ لاشوں کے ساتھ بُرا سلوک کرنے کے معاملے میں بھی عدالت میں سماعت ہوئی ہے۔ عدالت نے اس معاملے کا خود نوٹس لیا ہے۔ اس کی سماعت جسٹس اشوک بھوشن، جسٹس سنجے کشن کول اور جسٹس ایم آر شاہ کررہے ہیں۔سپریم کورٹ نے سماعت میں کہا کہ ماہرین کی ٹیم اسپتالوں کا دورہ کرے۔ وہاں ضروری چیزوں کے لئے ٹھوس اقدامات کئے جائیں۔ عدالت نے حکم دیا کہ مریضوں کی دیکھ بھال اور دیکھ بھال میں پائی جانے والی خامیوں کو دور کرنے کا خیال رکھنا چاہئے اور تمام وارڈوں میں سی سی ٹی وی کیمرے لگائے جائیں۔ دہلی حکومت نے اپنے حق میں کہا کہ کسی بھی ڈاکٹر یا طبی کارکن کے خلاف ایف آئی آر درج نہیں کی گئی ہے۔ ایک ملازم کے خلاف کارروائی کی گئی وہ بھی واپس ہوگئی ۔ حکومت نے کہا کہ گنگارام اسپتال کے خلاف دفعات پر عمل نہ کرنے پر ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔واضح رہے کہ نجی اسپتال سر گنگارام اسپتال کے خلاف دہلی حکومت کی طرف سے ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ یہ معاملہ دہلی حکومت کے محکمہ صحت کے ڈپٹی سکریٹری کی شکایت پر درج کیا گیا ہے۔ اسپتال کے خلاف سرکاری حکم کی خلاف ورزی کا مقدمہ درج کیا گیا ہے۔

You might also like