مضامین ومقالات

مشہور تابعی حضرت ابو حازم رحمۃ اللہ علیہ کی بادشاہ سلیمان بن عبد الملک رحمۃ اللہ علیہ سے مکالمہ

مولانا ندیم احمد انصاری
اکابر و اسلاف کی باتیں بڑی مؤثر و پُر مغز ہوا کرتی ہیں۔ اخلاف و اصاغر کو چاہیے کہ ان سے عبرت حاصل کریں۔ بڑوں کے واقعات قصہ و کہانی کے طور پر نہیں، سبق حاصل کرنے کے لیے سننے، پڑھنے او ر بیان کرنے چاہئیں۔ اسی مقصد کے تحت ان مشکل حالات میں آج ایک دل چسپ اور سبق آموز واقعہ آپ کی خدمت میں پیش کیا جا رہا ہے، اللہ تعالیٰ مفید بنائے۔ (آمین)
ایک مرتبہ سلیمان بن عبد الملکؒ مکہ مکرمہ جاتے ہوئے مدینہ طیبہ سے گزرے۔ انھوں نے معلوم کیا : کیا مدینہ میں کوئی ایسا شخص ہے جس نے حضرت نبی کریم ﷺ کے کسی صحابی سے ملاقات کی ہو ؟ لوگوں نے بتایا : ابو حازمؒ ہیں۔ سلیمانؒ نے انھیں بُلوا بھیجا۔وہ آئے تو سلیمان نے کہا: اے ابو حازم ! یہ کیسی جفا ہے ؟ ابو حازم نے کہا :آپ کون سی جفا کی بات کر رہے ہیں؟ سلیمان نے کہا : تمام اہلِ مدینہ میرے پاس ملاقات کے لیے آئے، لیکن آپ نہیں آئے۔ ابو حازم نے کہا : اے امیر المومنین ! میںاللہ کی پناہ چاہتا ہوں کہ آپ وہ کہیں جو ہوا ہی نہیں ہے۔ میںآج سے پہلے نہ آپ کو جانتا تھا اور نہ میں نے پہلے کبھی آپ کو دیکھا ہے! سلیمان محمد بن شہاب زہری کی طرف متوجہ ہوئے تو زہری نے کہا : شیخ ابو حازم نے صحیح کہا ہے، غلطی آپ کی ہے۔
qسلیمان نے پوچھا : اے ابو حازم ! کیا وجہ ہے کہ ہم موت کو ناپسند کرتے ہیں ؟ ابو حازم نے کہا: کیوں کہ تم نے اپنی آخرت کو خراب کردیا ہے اور دنیا کو آباد کیا ہے، اس لیے تم آبادی سے خرابی کی طرف جانے کو ناپسند کرتے ہو۔سلیمان نے کہا : اے ابو حازم ! آپ نے صحیح کہا۔
qسلیمان نے پوچھا: یہ بتائیں کہ ہم کل اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں کیسے آئیں گے ؟ابو حازم نے کہا : جو نیکو کار ہے وہ اُس مسافر شخص کی طرح آئے گا جو اپنے گھر والوں کے پاس سفر سے (خوش و خرم) واپس آتا ہے اور جو بدکار ہے وہ بھاگے ہوئے غلام کی طرح آئے گا جسے پکڑ کر آقا کے سامنے لایا جاتا ہے۔ سلیمان یہ سن کے رونے لگے۔
qسلیمان نے پوچھا: کاش ہمیں معلوم ہو جاتا کہ اللہ تعالیٰ نے ہمارے لیے کیا صورت تجویز کر رکھی ہے! ابوحازم نے کہا : اپنے اعمال کو کتاب اللہ پر پیش کرو۔ سلیمان نے پوچھا : ہمیں کیسے اپنا ٹھکانا معلوم ہوگا ؟ ابو حازم نے کہا : إِنَّ الْأَبْرَارَ لَفِي نَعِيمٍ ﴿١٣﴾ وَإِنَّ الْفُجَّارَ لَفِي جَحِيمٍ ﴿١٤﴾ یقین رکھو کہ نیک لوگ یقیناً بڑی نعمتوں میں ہوں گے، اور بدکار لوگ ضرور دوزخ میں ہوں گے۔ (سورۃ الانفطار)
q سلیمان نے پوچھا: اے ابو حازم ! اللہ تعالیٰ کی رحمت کہاں ہے ؟ ابو حازم نے کہا : إِنَّ رَحْمَتَ اللَّـهِ قَرِيبٌ مِّنَ الْمُحْسِنِينَ ﴿٥٦﴾یقیناً اللہ کی رحمت نیک لوگوں سے قریب ہے۔(اعراف)
qسلیمان نے پوچھا: اے ابو حازم ! اللہ کے کون سے بندے معزز ہیں ؟ ابو حازم نے کہا : جو مروّت اور عقلِ سلیم رکھتے ہیں۔
q سلیمان نے پوچھا : کون سے اعمال افضل ہیں ؟ ابو حازم نے کہا : حرام چیزوں سے بچتے ہوئےفرائض و واجبات کا ادا کرنا۔
q سلیمان نے پوچھا : کون سی دعا زیادہ سنی جاتی ہے ؟ ابو حازم نے کہا :وہ دعا جو کوئی شخص اپنے اوپر احسان کرنے والے کے لیے کرتا ہے۔
q سلیمان نے پوچھا : کون ساصدقہ افضل ہے ؟ ابو حازم نے کہا : مصیبت زدہ سائل کے لیے کیا گیا صدقہ اور وہ صدقہ جو اپنے افلاس کے باوجود کیا جائے، اور اس طرح کیا گیا صدقہ جس میں احسان اور اذیت نہ ہو۔
q سلیمان نے پوچھا : کون سا کلام زیادہ بہتر ہے ؟ ابو حازم نے کہا : اس شخص کے سامنے حق بات کرنا، جس سے تم ڈرتے ہو یا جس سے تم کوئی امید رکھتے ہو (اور ڈر اور امید پوری نہ ہونے کا خوف دامن گیر ہونے کے باوجود تم سچ بات کہو)۔
q سلیمان نے پوچھا : کون سا مومن عقلمند ہے ؟ ابو حازم نے کہا : وہ جو اللہ کی طاعت کرے اور طاعت پر لوگوں کی رہنمائی کرے۔
q سلیمان نے پوچھا کون سا مومن احمق ہے ؟ ابو حازم نے کہا : وہ جو اپنے بھائی کی مدد کرے، باوجود اس کے کہ وہ ظالم تھا۔اس نے گویا اپنی آخرت کو غیر کی دنیا کے بدلے بیچ ڈالا۔سلیمان نے کہا : آپ نے صحیح کہا۔
q سلیمان نے پوچھا: ہم جس حالت میں ہیں، اس کے متعلق آپ کیا کہتےہیں ؟ ابو حازم نے کہا : اے امیر المومنین ! آپ مجھے اس سوال سے معاف رکھیں؟ سلیمان نے کہا : نہیں! آپ ضرور مجھے نصیحت کی بات کہیے۔ ابو حازم نے کہا : اے امیر المومنین ! آپ کےآباو اجداد نے تلوار کے ذریعے لوگوں پر جبر کیا اور مسلمانوں کی رضا اور مشورے کے بغیر یہ ملک سختی سے حاصل کیا، یہاں تک انھوں نے بہت سے لوگوں کو قتل کیا اور یہ سب کرنے کے بعد دنیا چھوڑ کر چلے گئے۔ کاش ! آپ کو معلوم ہوتا کہ جو انھوں نے (مرنے کے بعد حسرت کے ساتھ) کہا اور جو ان کے بارے میں کہا گیا۔ سلیمان کے ایک حواری نے کہا: اے ابو حازم ! آپ نے بہت بری بات کہی۔ ابو حازم نے کہا : تم جھوٹ کہتے ہو، میں کوئی بُری بات نہیں کہی۔ اللہ تعالیٰ نے علما سے عہد لیا ہے کہ وہ لوگوں کے سامنے حق بیان کریں اور اُسے ہرگز نہ چھپائیں۔
q سلیمان نے پوچھا : اب ہم کیسے اصلاح کریں ؟ ابو حازم نے کہا : ڈینگیں مارنا چھوڑدو، مروّت اختیار کرو اور حقوق والوں کو ان کے حقوق انصاف کے ساتھ برابر تقسیم کرو۔
qسلیمان نے پوچھا : ہم ٹیکس کیسے لیں ؟ ابوحا زم نے کہا : جس سے لینا جائز ہے، اُس سے وصول کرو، اور جو حق دار ہے، اسے پہنچاؤ۔
qسلیمان نے عرض کیا : اے ابو حازم ! کیا آپ کے لیے ممکن ہے کہ آپ ہمارے ساتھ رہیں، تاکہ ہم آپ سے استفادہ رک سکیں؟ ابو حازم نے کہا : میں اللہ کی پناہ چاہتا ہوں! سلیمان نے پوچھا : ایسا کیوں ؟ ابو حازم نے کہا : مجھے اندیشہ ہے کہ میں آپ کی خاطر کسی تھوڑی سی چیز کو جھکادوں اور اللہ تعالیٰ مجھے دنیا وآخرت کا دوہرا عذاب دے۔
qسلیمان نے کہا : آپ کی کوئی ضرورت ہو تو ہمیں بتائیے! ابو حازم نے کہا : آپ مجھے جہنم سے بچا لیجیے اور جنت میں داخل کروا دیجیے۔ سلیمان نے کہا : یہ تو میری قدرت میں نہیں۔ ابو حازم نے کہا : مجھے اس کے علاوہ آپ سے اور تو کوئی حاجت نہیں۔
q سلیمان نے کہا : آپ میرے لیے دعا کیجیے۔ ابو حازم نے دعا کی : اے اللہ ! اگر سلیمان آپ کا پسندیدہ بندہ ہے تو اس کے لیے دنیا وآخرت کی خیر آسان فرمادے، اگر آپ کا دشمن ہے تو اس کی پیشانی کو پکڑ کر اپنی رضا والے کاموں کی طرف لے آ۔ سلیمان نے کہا : یہ کافی ہے! ابو حازم نے کہا : میں نے مختصر دعا مانگی ہے اور اگر آپ اس دعا کے اہل ہیں تو میں نے زیادہ مانگ لیا ہے، اور اگر آپ اس کے اہل نہیں ہیں تو مناسب نہیں کہ میں ایسی کمان سے مارا جاؤں جس کا وتر نہ ہو۔
q سلیمان نےعرض کیا : مجھے کوئی وصیت کیجیے۔ ابو حازم نے کہا: میں آپ کو مختصر سی وصیت کروں گا؛آپ اپنے رب کی عظمت بیان کیجیے، اور ایسی جگہ نہ جائیے جس سے اس نے منع کیا ہے، یا ایسی جگہ سے مفقود نہ ہوئیے جہاں اس نے حاضر ہونے کا حکم دیا ہے۔
qجب ابو حازم باہر چلے گئے تو سلیمان نے اُن کی خدمت میں سو دینار بھیجے اور لکھا :آپ اِنھیں خرچ کریں اور آپ کے لیےمیرے پاس اس کی مثل بہت سے دینار ہیں۔ راوی کہتے ہیں کہ ابو حازم نے وہ دینار واپس کر دیے اور خط میں لکھا : اے امیر المومنین ! میں آپ سے اللہ کی پناہ مانگتا ہوں کہ آپ کا مجھ سے سوالات کرنا مذاق ہو یا میں اس پر آپ سے عطا کی امید رکھوں۔ جب میں اس مال کو آپ کے لیے پسند نہیں کرتا، تو اپنے لیے کیسے پسند کروں گا؟ نیز ابو حازم نے کہا : یہ سو دینار میری گفتگو کا عوض ہیں تومیرے لیے مردار خون اور خنزیر کا گوشت – جو کہ حالتِ اضطرار میں حلال ہوتا ہے- وہ اس سے بہتر ہے، اور اگر یہ بیت المال میں سے میرے حق کی وجہ سے ہے توکیا اس میں میرے جیسے اور لوگ بھی ہیں؟ اگرآپ نے دیگر علما اور مجھ میں برابری کی ہے تو فبہا، ورنہ مجھے اس رقم کی ضرورت نہیں ہے۔(تفسیرِ قرطبی، بذیل :سورۂ بقرۃ، آیت:42) (مضمون نگار الفلاح اسلامک فاؤنڈیشن، انڈیا کے ڈیرکٹر و محقق ہیں)

Tags
Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker