ہندوستان

سوشل میڈیا پر فرقہ پرستوں کی جانب سے بیرسٹر اسدالدین اویسی کے خلاف جھوٹا پروپیگنڈہ وزہرافشانی،…. نرمل کے مجلسی قائدین کی بروقت پولیس تھانے میں شکایت

نرمل۔30 جون ( اسٹاف رپورٹر بصیرت نیوز بیورو ضلع نرمل)

ملک میں عالمی مہلک وبا کورونا وائرس کووڈ-19 کے قہر کے ابتدائی مرحلے میں گودی میڈیا نے اس وبا کو مسلمانوں کی سب سے بڑی جماعت تبلیغی جماعت سے جوڑ کر مسلمانوں کو بدنام کرنے کی ناکام کوششیں کی،  بالآخر جب گودی میڈیا کے بعض نیوز چینل کے اینکرز اور اسٹاف کو کورونا وائرس نے اپنے لپیٹ میں لے لیا تب گودی میڈیا کی عقل ٹھکانے لگی اور سبھوں نے یہ مان لیاکہ بیماری کا کوئی مذہب نہیں ہوتا اور ملک کے تمام باشندوں کے لیے مذہبی امتیازات سے بالا تر ہوکر اس وبا سے لڑنے کی سخت ضرورت ہے،
عبرت کے ان تازیانوں کے باوجود آج بھی ملک میں فرقہ وارانہ، زہریلی ذہنیت کے حامل ایسے تنگ نظر لوگ موجود ہیں جو بسا اوقات اچھے خاصے صحتمند مسلم قائدین کو کورونا مریض باورکرکے اپنے باؤلے پنے کا ثبوت دیتے رہتے ہیں۔
چناں چہ ایسا ہی ایک واقعہ امن کی نگری نرمل میں اس وقت پیش آیا جب ”شیوا یادو“ نامی ایک فرقہ پرست شریر شخص نے فیس بک پر، مسلمانوں کی ایک عظیم سیاسی جماعت آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے قومی صدر ،جناب بیرسٹر اسدالدین اویسی صاحب رکن پارلیمنٹ حیدرآباد کے خلاف ان کی فوٹو سمیت جھوٹے پروپیگنڈہ پر مشتمل ایک پوسٹ کی جس میں لکھا تھا کہ:
*”اسد الدین اویسی اور اس کے گھر والے کورونا وائرس سے متاثر ہوچکے ہیں اور مذکورہ فرقہ پرست شخص ہی نے واٹسپ اسٹیٹس پر لکھا کہ اسد الدین اویسی مرگیا تو تلنگانہ کی ”شنی“ (نحوست) ختم ہوجائے گی”۔*
یہ اور اس جیسے نفرت انگیز مواد پر مشتمل پوسٹ کرکے شیوا یادو نے مسلمانوں کے ایک قدآور لیڈر کی توہین کی ہے جس سے مسلمانوں کے جذبات مجروح ہوئے چنانچہ جیسے ہی مجلس اتحاد المسلمین شاخ نرمل کے قائدین کو اس کی اطلاع ملی تو فوراً مجلسی قائدین پر مشتمل ایک وفد، صدر مجلس جناب عظیم بن یحییٰ کی زیرِ قیادت ،شیوا یادو کی زہر افشانی کے خلاف سائبر ایکٹ کے تحت “نقض امن” اور فرقہ وارانہ کشیدگی پھیلانے کا مقدمہ درج کرنے کے لیے پولیس اسٹیشن ٹاؤن پہنچا اور سب انسپکٹر آف پولس نرمل رمیش صاحب کو ایک شکایت نامہ حوالے کیا جس میں شیوا یادو کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کیا گیا ۔
اس موقع پر مجلسی قائدین: عظیم بن یحییٰ (صدر)، محمد مظہر (معتمد)،مجاہد علی ( کونسلر) محمد ابرار (کونسلر)، رفیع احمد قریشی سابق مجلسی کونسلر،محمد عرفان،حبیب بن علی، طیب بن صلاح محمد شائز ودیگر موجود تھے۔

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker