Baseerat Online News Portal

وزیراعظم نے وارانسی کے غیرسرکاری اداروں کے نمائندگان سے گفت وشنیدکی

نئی دہلی9جولائی(بی این ایس )
وزیراعظم نریندر مودی نے آج ویڈیوکانفرنسنگ کے توسط سے وارانسی میں مصروف عمل مختلف النوع غیرسرکاری تنظیموں سے گفت وشنید کی، جو جاری کووڈ -19 بحران کیدوران راحت کاری میں مصروف ہیں۔ وزیراعظم نیوارانسی نے مقدس اوربابرکت شہر کے عوام کی تعریف کی اور کہا کہ ان کے اندر کورونا وبائی مرض کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے ہرطرح سے امید او ر جوش کا جذبہ کارفرما ہے۔ مودی نے کہا کہ انہیں لگاتار اس امر کی اطلاعات حاصل ہورہی ہیں کہ کس طرح سے عوام خدمت اورجراَت کے جذبے سے سرشار ہوکر ضرورت مندوں کی مدد کررہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ چھوت کی روک تھام کے لئے کئے جانے والے مختلف اقدام ، مختلف اسپتالوں کی حالت ،قرنطائن انتظامات اور نقل مکانی کرکے آنے والے مزدوروں کی فلاح وبہبود کے لئے کئے جانے والے انتظامات سے بھی انہیں آگہی حاصل ہورہی ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ کاشی کے بارے میں ایک پرانا عقیدہ یہ ہے کہ وہاں کوئی شخص بھوکا نہیںسوتا کیونکہ اس شہر کو ماں اَن پورنا اور باباوشو ناتھ کی کرم فرمائی کا اعزاز حاصل ہے۔وزیر اعظم نے کہا کہ ہم سب کے یہ ازحد اعزاز کی بات ہے کہ اس مرتبہ مالک حقیقی نے ہمیں ناداروں کی خدمت کا ذریعہ بنایا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ اگرچہ اس مقدس شہرمیں مختلف النوع مذہبی سرگرمیوں پر روک لگ گئی ہیتاہم وارانسی کے عوام نے یہ ثابت کرکے دکھایا ہے کہ وہ کرونا کے خلاف نبردآزمائی میں کسی سے پیچھے ہیں نہیں ہیں اور اسی جوش وجدبے کے تحت وہ ناداروں اور ضرورت مندوں کو خوراک اور ادویہ فراہم کررہے ہیں۔ وزیر اعظم نے مختلف سرکاری اورمقامی بلدیاتی انتظامی اداروں کے ساتھ تال میل بناکر کام کرنے کے لئے این جی اوز کی کوششوں کی ستائش کی۔ وزیراعظم نے کہا کہ فوڈ ہیلپ لائن اور کمیونٹی کچن کے وسیع نیٹ ورک کو ایک مختصر مدت میں فراہم کرکے ، ہیلپ لائنوں کا انتظام کرکے ، ڈاٹا سائنس کا استعمال کرکے ،وارانسی اسمارٹ سٹی کے کنٹرول اور کمان مرکز کا پورا استعمال کرکے ہرکسی کے پاس یہ صلاحیت ہے کہ وہ ہرسطح پر ناداروں کی مدد کرسکتا ہے۔ انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے بتایا کہ ڈاک کا محکمہ اس وقت کس طرح سے ضلعی انتظامیہ کے ساتھ تعاون کرنے کے لیے تیارہوگیا، جب خوراک کی تقسیم کے لئے گاڑی کی کمی پڑرہی تھی۔ سنت کبیر داس کا حوالہ دیتے ہوئے مودی نے کہا کہ جو دوسروں کی خدمت کرتا ہے، وہ خدمات کے صلے کا تقاضہ بھی نہیں کرتا اور دن رات بے لوث خدمات انجام دیتا ہے۔وزیر اعظم نے کہا کہ بھار ت کی وسیع آبادی اوردیگرچنوتیوں کو دیکھتے ہوئے اس وبائی مرض سے نمٹنے میں بھارت کی صلاحیتوں کے سلسلے میں متعدد ماہرین نے سوالات اٹھائے۔اترپردیش جہاں کی آبادی 23 یا 24 کروڑ کے بقدر ہے ، اندیشہ یہ تھا کہ وہ اس چھوت کا تدارک نہیں کرسکے گاتاہم اس ریاست کے عوام کے تعاون اور جانفشانی کے نتیجے میں یہ تمام اندیشے بے بنیاد ثابت ہوئے۔ انہوں نے اس بات پر اطمینان کا اظہار کیا کہ اترپردیش میں چھوت کے پھیلنے کی رفتار پر قابو حاصل کرلیا گیا ہے اور جو لوگ اس سے متاثر ہوئے ہیں وہ بھی تیزی سے روبہ صحت ہورہے ہیں۔وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ مرکزی حکومت ضرورت مندوں کو مختلف سہولتیں فراہم کررہی ہے اورتقریباََ 80 کروڑ افراد ان اسکیموں سے استفادہ کرنے جارہے ہیں جو نہ صرف یہ مفت راشن فراہم کررہی ہیں بلکہ مفت سلنڈر بھی فراہم کررہی ہیں۔ انہوں نے کہاہے کہ بھارت کی آبادی امریکہ کے مقابلے میں دوگنی ہے تاہم بھارت تمام خدمات بغیر کسی معاوضے کے انجام دے رہا ہے اور اب اس اسکیم کی توسیع نومبرکے آخر تک یعنی دیپاولی اورچھٹ پوجا تک کردی گئی ہے۔وزیراعظم نے کہاہے کہ مختلف النوع صناعوں خصوصاََبنکروں کی پریشانیوں کو دور کرنے کے لیے بھی کوششیں کی جارہی ہیں اور وارانسی کے تاجروں اور کاروباریوں کے مسائل بھی حل کیے جارہے ہیں۔وزیراعظم نے بتایاہے کہ 8 ہزارکروڑروپے کے بقدر مختلف النوع بنیادی ڈھانچہ اوردیگرپروجیکٹوں کو تیز رفتاری کے ساتھ نافذ کیا جارہا ہے۔

You might also like