Baseerat Online News Portal

بینی پور میں سیلاب کے پانی میں سرکاری ٹیچر انیل مہتو اور اس کے 2 بیٹوں کی ڈوب کر ہوئی موت سے آبائی گاوں قاضی بہیڑہ میں غم کا ماحول ،

بینی پور میں سیلاب کے پانی میں سرکاری ٹیچر انیل مہتو اور اس کے 2 بیٹوں کی ڈوب کر ہوئی موت سے آبائی گاوں قاضی بہیڑہ میں غم کا ماحول ،

رفیع ساگر (بی این ایس)

جالے۔۔ بینی پور بلاک میں کٹباسا- بینی پور سڑک پر سیلاب کے پانی میں بہہ کر جالے بلاک کے قاضی بہیرہ باشندہ راجا رام مہتو کے لڑکے 45 سالہ انیل کمار مہتو و اس کے 2 لڑکے پریانشو (16) اور دیویانشو (10) کی المناک موت کی خبر سے گاوں میں سکتہ طاری ہے۔جیسے ہی ناگہانی حادثہ کی خبر قاضی بہیرہ گاوں میں پہونچی پورا علاقہ سوگوار ہوگیا۔ بتایاگیا یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب تینوں باپ بیٹے سیلاب کا پانی دیکھنے کے مقصد سے کٹباسا-بینی پور میں کتھنا چوڑ کے پاس گئے تھے جہاں پیر پھسلنے سے بڑے لڑکے پانی کی دھار میں بہنے لگے جسے دیکھ کر والد انیل مہتو اور چھوٹا لڑکا دیویانشو بھی بچانے کے لئے پانی میں چھلانگ لگا دیا جس کے بعد تینوں کا کہیں پتہ نہیں چل سکا۔ماسٹر انیل مہتو کی لاش تو بدھ کی رات برآمد کرلی گئی تھی لیکن اس کے لاپتہ دونوں بیٹوں کی لاش جمعرات کو ایس ڈی آر ایف کی ٹیم نے کافی کھوج بین کے بعد باہر نکالا۔ ایک ساتھ ایک گھر سے 3 افراد کے جاں بحق ہونے پر بینی پور اور جالے میں غم کا ماحول پایا جا رہا ہے۔جیسے ہی ایک ساتھ تینوں باپ بیٹے کے ڈوبنے کی اطلاع سامنے آئی انتظامی افسران میں ہڑکمپ مچ گیا۔ مقامی لوگوں نے اسکی اطلاع ایس ڈی او پردیپ کمار جھا و علاقائی ایم ایل اے سنیل کمار چودھری کو دی۔ایم ایل اے کی درخواست پر ایس ڈی او پردیپ کمار جھا ، ڈی ایس پی امیشور چودھری و سرکل آفیسر پنکج کمار جھا موقع پر پہونچ کر مقامی غوطہ خوروں کی مدد سے لاش کو گھنٹوں تک تلاش کروایا لیکن کامیابی ہاتھ نہیں لگ پائی۔ اس کے بعد ایم ایل اے سنیل چودھری نے واقعہ کی اطلاع دربھنگہ ڈی ایم ڈاکٹر تیاگ راجن ایس ایم کو دی تھی جس پر ڈی ایم نے فوری پہل کرتے ہوئے ایس ڈی آر ایف کی ٹیم کو جائے وقوع پر بھیجا تھا جہاں ٹیم نے موقع پر پہونچتے ہی لاش کی کھوج بین شروع کردی تھی کئی گھنٹوں کی تلاشی کے بعد شام میں ٹیچر انیل مہتو کی لاش کتھنی چوڑ سے برآمد ہوئی تھی لیکن اس کے دونوں بیٹوں کی تلاش جاری رہی۔جب تک موقع پر ہزاروں کی بھیڑ جمع ہوگئی تھی۔جیسے ہی اس حادثے کی خبر اس کے گھر قاضی بہیڑہ پہنچی یہاں سے اس کے رشتہ دار وہاں روانہ ہوگئے۔ بھائی – بھتیجے کے موت کی خبر جیسے ہی بھائی امیت مہتو کو ملی وہ بھی غش کھا کر گر پڑے جسے فوری طبی امداد کیلئے سب ڈویزن اسپتال میں داخل کروایاگیا ہے۔واضح رہیکہ مہلوک انیل مہتو ایک سرکاری ٹیچر تھے اور جگدیش پور مڈل اسکول میں اپنے فرائض انجام دے رہے تھے ۔ان کی پوری فیملی ضلع کے بینی پور واقع سسرال میں ہی رہائش پذیرتھے۔ بڑا لڑکا متوفی پریانشو کوٹا میں رہ کر پڑھائی کرتا تھا جو لاک ڈاؤن میں واپس گھر آیا ہوا تھا جبکہ چھوٹا لڑکا متوفی دیویانشو بینی پور میں ہی درجہ چہارم میں پڑھائی کررہا تھا۔تینوں کی ناگہانی موت پر ایم ایل اے سنیل کمار چودھری ،جالے ایم ایل اے جیویش مشرا ،قاضی بہیڑہ کے مکھیا مہیش ساہ ،سابق ضلع پریشد رکن حبیب اللہ ہاشمی ،جے ڈی یو لیڈر ولی امام بیگ چم چم اور سماجی کارکن انجینیئر شہزاد تمنا نے گہرے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پسماندگان کو سرکاری سطح سے دی جانے والی تمام تر امداد دلانے میں پوری کوشش کی جائے گی ساتھ ہی انہوں نے علاقے کے لوگوں سے بلا وجہ سیلاب کے پانی کے دوران باہر نہ نکلنے کی بھی اپیل کی ہے۔

You might also like