Baseerat Online News Portal

قربانی کی خوشیاں اور مال کے ضیاع کا ملال قول سدید : مفتی احمد نادر القاسمی اسلامک فقہ اکیڈمی انڈیا 

قربانی کی خوشیاں اور مال کے ضیاع کا ملال

قول سدید : مفتی احمد نادر القاسمی

اسلامک فقہ اکیڈمی انڈیا

 

اللہ تعالی نے دنیا میں موجود کسی بھی چیز کو بے کار پیدا نہیں کیا ۔ہرچیز میں اس رب نے انسان کے لٸے فواٸد اورایسی نفع بخش خصوصیات رکھی ہیں ۔جو کسی نہ کسی ناحیہ سے انسان کوکام آنے والی ہوتی ہیں۔ ۔یہاں تک کہ وہ شیٸ جو بظاہر مضر اور نقصأن پہونچانے والی نظرآتی ہے ۔اس میں بھی فواٸد کےپہلو پاۓ جاتے ہیں ۔ جیسے آپ سانپ ہی کودیکھ لیجٸے ۔اللہ نے اسے زہریلا جانور بنایا ہے ۔اگر وہ انسان یاکسی بھی جاندار کو ذنس لے تو اس کا زندہ بچ جانا مشکل ہوجاتاہے ۔مگر اسی کے زہر میں ہی ۔زہر کو ختم کرنے کا تریاق بھی ہے ۔جو ڈ سے ہوۓ کی جان بچالیتاہے ۔اس کادوسرافاٸدہ یہ ہے کہ جس علاقے میں سانپ کی کثرت ہوتی ہے ان علاقوں میں فصلوں کو بربادکرنے والے چوہے نہیں ہوتےاور سانپ یاتو انھیں اپنا لقمہ بنالیتاہے یاپھر وہ چوہے وہاں سے راہ فرار اختیار کرلیتے ہیں۔ ۔جب ہم صرف۔ایک ۔سانپ کے نفع اور ضرر کے پہلو کو دیکھتے ہیں تو دل پکار اٹھتاہے۔”إن فی خلق السماوات والارض۔واختلاف اللیل والنھار۔لآیات للأولی الألباب۔۔الذین یذکرون اللہ قیاما وقعودا وعلی جنوبھم۔ ویتفکرون فی خلق السماوات والارض۔۔ربناماخلقت ھذا باطلا ۔سبحانک فقنا عذاب النار۔“ (سورہ آل عمران۔١٩١)تو اللہ کی دیگر مخلوقات کی افادیت کا کیا کہنا۔

آج یوم نحر۔اور عید الاضحی کا دوسرا دن ۔ہے ۔اللہ تعالی نے پورے عالم میں اپنے جس مومن بندے کو توفیق دی ۔اورصاحب استطاعت بنایا اس نے جانور کی قربانی کانذرانہ ۔شکرانے میں پیش کیا۔اللہ کی طرف میزبانی ہوٸی ۔بندے مہمان قرار پاۓ ۔اور ضیافت تازہ اور لذیذ گوشت سے رب نے فرمانی سبحان اللہ۔۔اس پر بھی بندے پر رب کاشکریہ اداکرنا واجب ہے ۔”ولہ الحمد والشکر وحدہ لاشریک لہ ولہ الملک وھو علی کل شیٸ قدیر“

جب شام کو گھر سے باہر نکلا تو جانور کے فضلات کے ساتھ بکرے اور بڑے جانوروں کی کھالیں بھی کوڑے کے ڈھیر پہ بڑی مقدار میں پڑی اورپھیکی ہوٸی دیکھی۔

قارٸین أ میں بتانہیں سکتا اس منظرکودیکھ کر میرا یہ ننہا سادل کس قدر چوراچورا اورمغموم وملول ہوا۔ اور ٹوٹ کررہ گیا۔ اورتعفن اوربدبوکے بوجود وہاں کھڑاہوکر یہ سوچتارہاکہ وہ رب جس نے ان جانوروں کی ہر چیز۔ گوشت۔بال کھال اور ہڈیوں میں بھی انسانوں کے لٸے نفع رکھا تھا ۔ معاشی فواٸد سے مالامال کیا تھا۔کیسے اللہ کی ان نعمتوں کی پالی اور ضیاع پرلوگوں کو مجبورکیاگیا ۔افسوس کرتے ہوۓ ۔مجبور ہونا پڑا اور ہم دیکھتے اور ہاتھ ملتے رہ گٸے۔اے رب کریم ہم جن انسانوں کے درمیان زندگی گزاررہے ہیں ۔کیسے بے رحم اورناسمجھ ہیں ۔جو انسانوں کالقمہ چھین کر خوشیاں مناتے ہیں ۔اپنے دلوں کوتسکین دیتے اورایک فاتح کی طرح فخر کرتے ہیں۔کیا انھیں جیسے لوگوں کے بارے میں تو رب نے نہیں فرمایاکہ:۔إنھم لایعقلون۔اور إن قوماضالین۔

افسوس اس پرہواکہ جانورجس کے فواٸداس خالق نے یہ یہ بیان کٸے بتایا:”واللہ جعل لکم من بیوتکم سکناوجعل لکم من جلود الأنعام بیوتا تستخفونھا یوم ظعنکم ویوم إقامتکم۔ومن أصوافھا وأوبارھاوأشعارھا أثاثاومتاعا إلی حین۔۔۔واللہ جعل لکم مماخلق ظلالاوجعل لکم من الجبال أکناناوجعل لکم سرابیل تقیکم الحر وسرابیل تقیکم بأسکم۔کذلک یتم نعمتہ علیکم۔لعلکم تسلمون۔۔فإن تولوا فإنماعلیک البلاغ المبین۔یعرفون نعمة اللہ ثم ینکرونھا۔وأکثرھم الکافرون“[اور اللہ نےتمہارےلٸے تمہارے گھروں کو سکون کی جگہ بنادیا اورچوپایوں کے چمڑوں سےتمہارے لٸے ایسے ڈیرے بنادیٸے جن کو سفر چلنے کے دن اورٹھرنےکے دن ہلکامحسوس کرتےہو۔نیز بھیڑیوں کے اون۔اونٹوں کی ببریوں۔اوربکریوں کے بالوں سے بہت سے سامان اور ایک وقت تک نفع اٹھانے کی چیزیں پیدافرمادیں۔۔اوراللہ نےتمہارے لٸے اپنی بعض مخلوق کے ساٸے بنادیٸے ۔پہاڑوں میں پہاہ گاہیں بنادیں اورتمہارے لیٸے ایسے لباس بنۓ جو تم کوگرمی سے بچاتےہیں۔{اورسردی سےبھی}اورایسے لباس بھی بناۓ جوجنگ میں تمہاری حفاظت کرتے ہیں ۔اسی طرح اللہ تعالی تم پر اپنی نعمت پوری فرماتے ہیں تاکہ تم فرمانبردار ہوجاٶ۔اورپھر بھی اگر منہ موڑتے ہیں توآپ پر تو صرف وضاحت کے ساتھ پیغام پہوچادیناہے۔۔وہ لوگ(منکرین)اللہ کی نعمتوں کوپہچانتے ہیں پھربھی ان سے انجان ہوجاتے ہیں۔اوران میں سے زیادہ تر لوگ ناشکری کرنے والے ہیں ۔اورجس دن ہم ہرامت میں سے ایک ایک گواہ کھڑاکردیں گے توکفرکرنےوالوں کو(معذرت کرنے)کی اجازت دی جاۓ گی اورنہ اللہ کو راضی کرنے کا مطالبہ )“(سورہ نحل۔٨٠۔٨١۔٨٢۔٨٣۔٨٤

افسوس اس بات پربھی بےحد ہوا کہ برادران وطن کی حکمراں جماعت اور ان کے حواریین صرف مسلمانوں کی دشمنی اورعناد میں نہ صرف یہ کہ اللہ کی عظیم نعمت کو برباد کرنے کے درپیٸے ہوۓ ۔کھال کی فیکٹریوں کو مقفل کیا ۔طرح طرح کی بندشیں لگاٸیں اوراب تک اسی حال میں ہے۔نہ ٹینڈریاں کھل رہی ہیں ۔نہ کھالیں فروخت ہورہی ہیں ۔ جس کانتیجہ سال گزشتہ بھی اورسال رواں بھی یہ ہوا کہ اربوں کا مال خاک میں مل گیااورضاٸع ہوکر رہ گیا۔انھوں نے یہ نہیں سوچاکہ ۔ان کھالوں کی قیمت سے صرف مدارس اورمسلمانوں کاہی فاٸدہ نہیں۔ بلکہ ملک معیشت کابھی فاٸدہ تھا ۔نقصان ایک کی ضد میں دونوں کاہوا ۔ملک کا ہوا۔سب کا ہوا۔۔

یہ ہے وہ بات ہے جس کے لٸے۔میں نے یہ عنوان قاٸم کیا۔ہرصاحب نظر کومیری طرح ہی تکلیف ہورہی ہوگی۔اور کیفیت یہ کہ ایک طرف عید کی خوشی ہے تودوسری طرف مال اور اللہ کی نعمت کے ضاٸع ہونے کا ملالااور صدمہ ۔اللہ تعالی ہدایت اور سمجھ عطافرماۓ آمین إن ربی لسمیع الدعاء..

You might also like