Baseerat Online News Portal

سنسیکس 37 ہزار سے نیچے گرا

ممبئی، 3 اگست (بصیرت نیوز سروس /ایجنسی ) مینوفیکچرنگ کے شعبے کی سست روی کے بعد سرمایہ کاری کے کمزور رجحان کے درمیان بی ایس ای سنسیکس آج مسلسل چوتھے روز 37،000 سے نیچے گر گیا، نیشنل اسٹاک ایکسچینج کا نفٹی بھی 11،900 پوائنٹس کی نفسیاتی سطح سے نیچے پر بند ہوا، ریلائنس انڈسٹریز ، ایچ ڈی ایف سی اور ایچ ڈی ایف سی بینک سمیت بیشتر اہم کمپنیوں میں گراوٹ کے سبب سینسیکس 667.29 پوائنٹس یعنی 1.77 فیصد کی کمی سے 36،939.60 پوائنٹس پر بند ہوا۔ نفٹی 173.60 پوائنٹس یعنی 1.57 فیصد گر کر 10،899.85 پر بند ہوا۔ سنسیکس 16 جولائی کے بعد پہلی مرتبہ 37 ہزار کے نیچے گر کر 36939 پر کاروبار کر رہا ہے، اور نفٹی 10،900 کے نیچے کی سطح پر بند ہوا ہے۔
آئی ایچ ایس مارکیٹ کے ذریعہ آج جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق ، جولائی میں مینوفیکچرنگ کے شعبے میں کمی جون کے مقابلے میں شدت اختیار کر گئی۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کووڈ 19 کے معاملات میں کمی آنے شروع ہونے تک سرگرمیوں کا انتظار کرنا پڑے گا۔ اس نے مارکیٹ میں سرمایہ کاری کے رجحانات کو کمزور کیا اور سرمایہ کاروں کو فروخت پر مجبور کردیا.

بینکنگ ، فنانس اور انرجی گروپس سب سے زیادہ دباؤ میں تھے۔ کوٹک مہندرا بینک کا اسٹاک تقریبا ساڑھے چار فیصد اور انڈس انڈ بینک میں تقریبا چار فیصد کی کمی ہوئی۔ ایکسس بینک اور او این جی سی کو بھی تین فیصد سے زیادہ کا نقصان ہوا۔ ایچ ڈی ایف سی بینک ، بجاز آٹو اور ریلائنس انڈسٹریز کے حصص میں تقریبا 3 3 فیصد کی کمی ہوئی۔ ٹائٹن میں تین فیصد سے زائد کا اضافہ دیکھا گیا۔
سینسیکس کے برعکس ، سرمایہ کاروں نے چھوٹی کمپنیوں میں خریداری کی۔ بی ایس ای کا اسمال کیپ 1.02 فیصد اضافے کے ساتھ 13،154.61 پوائنٹس پر بند ہوا۔ درمیانے درجے کی کمپنیوں کا مڈ کیپ انڈیکس 0.31 فیصد گر کر 13،716.79 پوائنٹس رہا۔
ایشین مارکیٹوں میں ملا جلا رجحان رہا۔ جاپان کی نکی 2.24 فیصد ، چین کی شنگھائی کمپوزٹ 1.75 فیصد اور جنوبی کوریا کی کوسپی میں 0.07 فیصد اضافے کے ساتھ بند ہوئی- جبکہ ہانگ کانگ کا ہینگ سینگ 0.56 فیصد تک گر گیا۔ یورپ میں ابتدائی تجارت تیز تھی۔ جرمنی کے ڈی اے ایکس نے 1.27 فیصد اور برطانیہ کے ایف ٹی ایس ای 0.01 فیصد کو مضبوط ہوا۔

You might also like