Baseerat Online News Portal

سابق ضلع پریشد رکن حبیب اللہ ہاشمی کی کاوش رنگ لائی ،قاضی بہیڑہ میں انٹر تک کی پڑھائی کا آغاز ہونے پرعلاقے میں خوشی

 

 

رفیع ساگر /بی این ایس

13 اگست 2020

 

جالے۔۔ مقامی بلاک کے قاضی بہیڑہ باشندہ سابق ضلع پریشد رکن حبیب اللہ ہاشمی کی کوششوں سے پنچایت میں انٹر تک کی تعلیم کا آغاز ہونے پر علاقے میں کافی خوشی کا ماحول ہے۔اس مسئلے کو مسٹر حبیب اللہ ہاشمی ضلع سے لیکر وزیر اعلی نتیش کمار اور وزیر تعلیم کرشن نندن پرساد ورما تک لگاتار اٹھاتے رہے ہیں۔ان میں سابق ایم پی محمد علی اشرف فاطمی کا رول بھی قابل ستائش رہا ہے جنہوں نے ہر موڑ پر ان کی رہنمائی کی ۔جمعرات کو سابق ضلع پریشد رکن حبیب اللہ ہاشمی نے کہا کہ کسی بھی قوم یا ملک کی ترقی و خوشحالی تعلیم پر ہی منحصر ہے کیونکہ یہ انسان کی بنیادی ضرورتوں میں سے ایک ہے اس کیلئے ضروری ہیکہ ملک کے خطے خطے میں تعلیمی ادارے کا قیام عمل میں لایا جائے اور جب اس سمت میں کسی بھی سیاسی لیڈروں کے ذریعہ تگ و دو کیا جاتا ہو تو تعلیمی ترقی کی افادیت و اہمیت مزید بڑھ جاتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ضلع پریشد رکن رہتے ہوئے گاوں میں ہائی اسکول لانے کیلئے زیریں سطح سے لیکر بالائی سطح تک دفتری کارروائی پر کر کافی محنت و مشقت کے بعد اپنے مشن میں کامیاب ہوپایا ہوں۔یہ کامیابی ان کی محنت کا نتیجہ اور عوام کے دعاوں کا ثمرہ سے۔ اتنا ہی نہیں جب حکومت کی پہل پر ریاست کے ہائی اسکولوں کو پلس 2 تک کیلئے اپگریڈ کیا جارہا تھا تو اس وقت بھی میں نے کافی جد و جہد کے بعد اس اسکول کو پلس 2 میں اپگریڈ کرواہی لیا تھا۔ یہی وجہ ہے کہ عوام میں میری مقبولیت بڑھی ہے۔ پوچھنے پر مسٹر حبیب اللہ ہاشمی نے بتایا کہ سیاست میں آنے کا اہم مقصد تعلیم کو ترجیح دینے کے علاوہ علاقے کو تعلیمی اعتبار سے مثالی بنانا تھا اور اس دوران عوام کا اعتماد و یقین نے میرے اندر کام کرنے کا عزم و حوصلہ بڑھا دیا جس باعث پوری ایمانداری کے ساتھ عوام کی فلاح کیلئے شب و روز ایک کر اپنی فرض کی ادائیگی کیا۔ انہوں نے کہا کہ آج اس اسکول میں سائنس اور آرٹ دونوں شعبوں میں تعلیم فراہم کی جاتی ہے اور امسال ہنوز 57 طلبا اس میں داخلہ لے چکے ہیں جو میرے لئے فخر کی بات ہے۔انہوں نے کہا کہ عوام کی محبت و اعتماد میرے ساتھ یوں ہی رہا تو مستقبل قریب میں ہی علاقے میں تکنیکی تعلیم کے فروغ کیلئے معیاری ٹیکنیکل انسٹی ٹیوٹ لانے کیلئے بھی جد و جہد کرونگا۔ مسٹر حبیب اللہ ہاشمی نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ قبرستان کی گھیرا بندی کے وقت بھی انہوں نے اہم رول ادا کیا تھا۔ غور طلب ہو کہ حبیب اللہ ہاشمی جیسی با وقار شخصیت اور علمی صلاحیت کے حامل فرد کو اگر مستقبل میں دوبارہ سیاست میں آنے کا موقع ملے تو علاقے ی تقدیر اور تصویر بدل سکتی ہے۔کیونکہ یہ صرف ایک لیڈر ہی نہیں بلکہ عوام کا بیٹا اور ہمدرد بھی ہے

You might also like