Baseerat Online News Portal

جتنے ایام میں اس عالمِ فانی میں رہا غم ترا نام مرے دشمنِ جانی میں رہا

جتنے ایام میں اس عالمِ فانی میں رہا

غم ترا نام مرے دشمنِ جانی میں رہا

خوبصورت تھااسے دل میں کہیں رہنا تھا

ہائے افسوس مِری آنکھ کے پانی میں رہا

یوں تو کردار بدلتے رہے موقع موقع

ایک ہی شخص مگر ساری کہانی میں رہا

جارہے ہو کوئی الزام تو دیتے جاؤ

زخم جو تم نے دیا وہ تو نشانی میں رہا

موت کے بعد ہی ممکن ہے ٹھکانہ ملنا

عمر ساری میں فقط نقل مکانی میں رہا

چھین لی گردش حالات نے چہرے کی چمک

ساٹھ کا بوڑھا تو میں عین جوانی میں رہا

راستہ روکنے آئی تھیں بلائیں کتنی

قافلہ پھر بھی مرا اپنی روانی میں رہا

گفتگو جب بھی کبھی میری کسی سےبھی رہی

تو ہی لفظوں میں رہا تو ہی معانی میں رہا

شوق حالات نے جذبات مسل ڈالے ہیں

دل مرا اب نہ کسی رات نہ رانی میں رہا

سلیم شوق پورنوی

You might also like