Baseerat Online News Portal

بابری مسجدشہادت کیس: 30 ستمبر کو فیصلہ سنایاجائے گا،اڈوانی سمیت سبھی 32 ملزموں کوحاضر رہنے کی ہدایت

لکھنو16ستمبر(بی این ایس )
بابری شہادت کیس میں سی بی آئی خصوصی عدالت 30 ستمبر کواپنافیصلہ سنانے جارہی ہے۔ عدالت نے اس کیس کے تمام 32 مرکزی ملزموں سے کہا ہے کہ وہ اس دن سماعت میں حاضر ہوں۔ ان میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے سینئر لیڈران جیسے ایل کے اڈوانی ، اوما بھارتی ، مرلی منوہر جوشی اور کلیان سنگھ شامل ہیں۔ اس معاملے میں سی بی آئی کے خصوصی جج جج ایس کے یادویصلہ سنانے جارہے ہیں۔ اس سے قبل 22 اگست کومقدمے کی اسٹیٹس رپورٹ دیکھنے کے بعدخصوصی جج نے سماعت مکمل ہونے کی آخری تاریخ میں ایک ماہ کی توسیع 30 ستمبر کردی تھی۔ عدالت نے مقدمے کی سماعت مکمل کرنے کے لیے 31 اگست تک کا وقت دیا۔ اس کیس میں فیصلہ لکھنے کاعمل2 ستمبر سے شروع ہونا تھا۔ سماعت کے دوران سینئر وکلاء مرڈل راکیش ، آئی بی سنگھ اور مہیپال اہلووالیا نے ملزم کی جانب سے زبانی دلائل پیش کیے۔ اس سے قبل عدالت نے برہمی کااظہارکیاتھاکہ ملزمان اپنے تحریری جواب داخل نہیں کررہے ہیں۔ خصوصی جج نے دفاعی وکیل کوبتایاہے کہ اگر وہ زبانی طور پر کچھ کہنا چاہتے ہیں تووہ یکم ستمبر تک کہہ سکتے ہیں۔ بصورت دیگر اس کے امکانات ختم ہوجائیں گے۔اس کے بعد سی بی آئی کے وکیل للت سنگھ ، آر یادواور پی چکرورتی نے بھی زبانی دلائل دیئے۔ سماعت کے دوران سی بی آئی نے ملزمان کے خلاف 351 گواہ اور 600 کے قریب دستاویزات پیش کی ہیں۔ فیصلہ سناتے وقت عدالت کوسی بی آئی کے گواہوں اور دستاویزات پرغورکرناہوگا۔یہ ادارہ 400 صفحات پرمشتمل تحریری مباحثہ پہلے ہی داخل کرچکاہے۔

You might also like