Baseerat Online News Portal

زرعی بل کسانوں کیلئے فائدہ مند، اپوزیشن پارٹیاں کررہی ہیں گمراہ:نریندر مودی

نئی دہلی، 18 ستمبر (بی این ایس )
وزیر اعظم نریندر مودی نے جمعہ کو ملک کے کسانوں کو یقین دلایا کہ لوک سبھا کے ذریعہ منظور شدہ زرعی اصلاحات سے متعلق بل ان کے دفاع کے لئے کام کرے گا اور نئی شق کے نفاذ کی وجہ سے وہ اپنی فصل کو ملک کے کسی بھی حصے میں بیچ سکتے ہیں۔ آپ اپنی من پسند قیمت پر مارکیٹ میں فروخت کرسکتے ہیں۔ وزیر اعظم نے اپوزیشن جماعتوں بالخصوص کانگریس پر ان بلوں کی مخالفت کرکے کسانوں کو الجھانے کی کوشش کرنے کا الزام عائد کیا اور دعوی کیا کہ ان بلوں کے نفاذ کے بعد 21 ویں صدی میں ہندوستان کے کسان غلامی میں نہیں رہیں گے۔ انہوں نے ان بلوں کو ملک کی ضرورت اور وقت کا مطالبہ قرار دیا۔ انہوں نے کسانوں پر زور دیا کہ وہ اپوزیشن کی طرف سے پائے جانے والے الجھن میں نہ پڑیں اور محتاط رہیں۔ بہار کے ریلوے مسافروں کی سہولت کے لئے تاریخی کوسی ریل مہاسیتو کو قوم کے لئے وقف کرنے اور 12 ریلوے منصوبے شروع کرنے کے بعد مودی نے یہ باتیں آج اپنے خطاب میں کہی۔ ویڈیو کانفرنس کے ذریعہ بہار کے گورنر فاگو چوہان، وزیر اعلی نتیش کمار، نائب وزیر اعلی سشیل کمار مودی، مرکزی وزیر پیوش گوئل، روی شنکر پرساد، گری راج سنگھ اور نتیانند رائے نے بھی شرکت کی۔ مودی نے کہاکہ کل وشوکرما جینتی کے دن لوک سبھا میں تاریخی زرعی اصلاحات کے بل منظور کیے گئے ہیں۔ کسانوں اور کسٹمر کے مابین ایجنٹوںسے حفاظت کے لئے یہ بل بہت اہم تھے، جو خود کسانوں کی کمائی کا ایک بڑا حصہ لیتے ہیں۔ یہ بل کسانوں کے لئے دفاعی شیلڈ کے طور پر سامنے آئے ہیں۔ انہوں نے الزام لگایا کہ جو لوگ کئی دہائیوں سے اقتدار میں ہیں اور ملک پر حکمرانی کرتے ہیں وہ اس موضوع پر کسانوں کو الجھانے اور ان سے جھوٹ بولنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے الزام لگایا کہ جس اے پی ایم سی ایکٹ، کو لے کراب یہ لوگ سیاست کر رہے ہیں، زرعی منڈی کی دفعات میں تبدیلی کی مخالفت کر رہے ہیں، ان کے منشور میں بھی یہی تبدیلی لکھی گئی تھی لیکن اب جب این ڈی اے حکومت نے یہ تبدیلی کی ہے، تو یہ لوگ مخالفت کرنے آئے ہیں۔ یہ پروپیگنڈا کیا جارہا ہے کہ حکومت کو کسانوں کو ایم ایس پی (کم از کم سپورٹ پرائس) کا فائدہ نہیں دیا جائے گا۔ یہ بھی کہا جارہا ہے کہ حکومت کسانوں سے دھان گندم وغیرہ نہیں خریدے گی۔ یہ سراسر جھوٹ ہے، غلط، کسانوں کو دھوکہ دیا گیا ہے۔مودی نے کہا کہ نتیش کمار اچھی طرح سمجھتے ہیں کہ اے پی ایم سی ایکٹ کے ذریعہ کسانوں کو کیا نقصان پہنچا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ بہار کے وزیر اعلی بننے کے بعد انہوں نے ابتدائی سالوں میں بہار میں اس قانون کو ختم کردیا۔ انہوں نے کہاکہ جو کام بہار نے ایک بار کیا تھا، ملک آج اسی راہ پر گامزن ہے۔

You might also like