Baseerat Online News Portal

سعودی عرب:دارالحکومت ریاض عالمی سمارٹ شہروں کی درجہ بندی میں آگے

آن لائن نیوزڈیسک
سوئس بزنس سکول آئی ایم ڈی کے شہریوں کے اطمینان سے متعلق سالانہ سروے کے مطابق سعودی عرب کا شہر ریاض دنیا کے سمارٹ شہروں کی درجہ بندی میں آگے بڑھ گیا ہے۔
سعودی دارالحکومت ریاض 18 درجے ترقی کر کے 109 شہروں میں سے 53 ویں نمبر پر آ گیا ہے جو 2020 کے سروے میں سب سے بڑی بہتری ہے۔
ریاض کی نئی درجہ بندی نے اسے ٹوکیو، روم، پیرس اور بیجنگ جیسے عالمی طور پر تسلیم شدہ شہروں سے بھی آگے کر دیا ہے۔ آئی ایم ڈی نے ایک بیان میں کہا ’سروے کے مطابق جس میں شہر میں دستیاب ٹیکنالوجی اور خدمات کے لحاظ سے رہائشیوں کے اطمینان کی پیمائش کی جاتی ہے۔ ریاض میں رہنے والے دنیا کے کئی ترقی یافتہ شہروں کی نسبت اپنے شہر کی پیشکش سے زیادہ مطمئن ہیں۔‘
رہائشیوں نے ریاض کو خاص طور پر صحت اور حفاظت میں خدمات کی فراہمی کے ساتھ ساتھ سرکاری دستاویزات پر کارروائی کرنے کی آن لائن رسائی پر بھی اعلیٰ درجہ دیا ہے۔
سنگاپور 2020 کے سروے میں پہلے نمبر پر آیا۔ اس کے بعد فن لینڈ میں ہیلسنکی اور سوئٹزر لینڈ میں زیورچ کا نمبر تھا۔ امریکی شہر نیو یارک 28 درجے ترقی کر کے 10 ویں جو 2020 کے سروے میں اس شہر کے لیے سب سے بڑی بہتری ہے جبکہ واشنگٹن ڈی سی 19 درجے ترقی کر کے 12 ویں نمبر پر آ گیا ہے۔
لندن پانچ درجے اضافے کے ساتھ 15 ویں نمبر پر آ گیا۔ سروے میں شامل کچھ افراد کا کہنا ہے کہ بریگزٹ برطانیہ کے دارالحکومت کو کاروبار کرنے کی ایک آسان جگہ بنا دے گا۔
ابو ظبی اور دبئی دونوں شہروں کی درجہ بندی میں بہتری آئی ہے جو سروے کے نتائج میں بالترتیب 42 اور 43 ویں نمبر پر آ گئے ہیں۔ قطر کے شہر دوحہ کے رہائشیوں کو سروے میں شامل نہیں کیا گیا۔
واضح رہے کہ اپریل اور مئی میں 109 شہروں کے سیکڑوں شہریوں کا سروے کیا گیا۔ سروے میں شہریوں سے ان کی صحت اور حفاظت، نقل و حرکت، سرگرمیوں، مواقع اور گورننس جیسے کلیدی شعبوں سے متعلق سوالات کیے گئے۔
ریاض 2030 تک اپنی آبادی کو دگنا کرنے کے لیے اربوں ڈالر کے سرمایہ کاری پروگرام کے وسط میں ہے۔

You might also like