Baseerat Online News Portal

مرکز کے کسان مخالف زرعی بل کے خلاف کانگریس پارٹی نرمل کی احتجاجی ریلی

نرمل (25، ستمبر 2020، بصیرت ڈسٹرکٹ نیوز بیورو)

 

تلنگانہ کانگریس پارٹی کے اے آئی سی سی اور پی سی سی کی ہدایت پر مرکزی حکومت کے بالجبر منظور کردہ زرعی بلز کے خلاف احتجاج کرنے کے لیے عمران اللہ کونسلر کی زیرِ قیادت کانگریس یونٹ نرمل کی جانب سے سابق رکنِ اسمبلی الیٹی مہیشور ریڈی کے مکان واقع محلہ گنج بخش سے لیکر کلکٹر آفس نرمل تک  پرامن مارچ نکالا گیا،ریلی کے شرکاء،   اس دوران  زرعی بل کو لیکر مودی حکومت کے خلاف “نریندر مودی کسان دشمن” اور “واپس لو، واپس لو، کسان دشمن بل واپس لو”  کے نعرے بلند کررہے تھے ، ریلی کے شرکاء کلکٹر آفس پہنچ کر کلکٹریٹ کے روبرو دھرنے پر بیٹھ گئے۔ بعد ازاں اسی ضمن میں کانگریس پارٹی کی جانب سے ڈی آر او نرمل کریم اللہ صاحب کو ایک یادداشت پیش کی گئی،جس میں کہا گیا کہ:

پارلیمنٹ میں پیش کردہ تینوں بل، زرعی پیداوار تجارت (فروغ اور سہولت) بل 2020، زرعی (بااختیار اور تحفظ) قیمت اور زرعی خدمات اور ضروری اشیاء (ترمیمی)  یہ تینوں بلز کسانوں کے فائدے کیلئے نہیں ہیں بلکہ اس بل سے کارپوریٹس کو فائدہ ہوگا۔ اس بل کی منظوری کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے ایک وزیر نے استعفی دیدیا ہے اور کسان اس بل کے خلاف سڑکوں پر ہیں جن کا بھی یہی دعوی ہے کہ یہ بل سراسر ا ن کے خلاف ہے، کسانوں کا خیال ہے کہ فوڈ کارپوریشن آف انڈیا (ایف سی آئی) اور دیگر مرکزی ایجنسیاں ریاستوں سے گندم اور چاول کی سالانہ خریداری کرنا بند کردیں گی، جس سے وہ تاجروں کے رحم و کرم پر آجائیں گے۔ کسانوں کے ان خدشات کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا ہے، اس لیے یہ ملک کی وفاقی نوعیت کے برعکس ہے، یادداشت میں کہا گیا ہے کہ  مرکزی حکومت اسٹیک ہولڈرس کو ان امور سے متعلق تبادلہ خیال میں شامل نہ کرکے مطلق العنانی کی طرف تیزی سے آگے بڑھ رہی ہے۔ مطالبہ میں مرکزی حکومت پر زور دیا گیا ہے کہ وہ بلوں کو نافذ کرنے سے قبل کسانوں کی طرف سے اٹھائے گئے خدشات کو دور کرے،ورنہ بصورت دیگر بڑے پیمانے پر ملکی احتجاج منظم کیا جائےگا۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے جنید میمن ترجمان ضلعی کانگریس نے مرکزی حکومت پر کسانوں کے مفادات کے ساتھ کھلواڑکرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ وہ کسانوں کے ارمانوں کے ساتھ کھیلنے پر تلی ہوئی ہے جسے کانگریس پارٹی کسی بھی صورت میں برداشت نہیں کرے گی۔

اس موقع پر کانگریسی قائدین: الطاف خضر،محمد رفیع،چندو،رامنا ریڈی کے علاوہ قابلِ ذکر سی پی آئی کے ضلعی سکریٹری ایس ولاس اور بہوجن لیفٹ فرنٹ کے ڈی رام گوڈ ودیگر لوگ موجود تھے۔

You might also like