Baseerat Online News Portal

بہار الیکشن: لولی آنند اور بیٹے چیتن آنند آر جے ڈی میں شامل

پٹنہ، 28؍ستمبر( بی این ایس )
بہار اسمبلی انتخابات کے جھونکے ہر ہر لمحہ ہوا کا رخ بدل رہا ہے۔ آج لالو پرساد یادو کی پارٹی آر جے ڈی میںلولی آنند اپنے بیٹے چیتن آنند کے ساتھ آر جے ڈی میں شامل ہوگئے۔ پارٹی کے ریاستی صدر جگدانند سنگھ نے انہیں 10 سرکلر روڈ رابڑی دیوی کی رہائش گاہ پر رکنیت دلائی۔ آر جے ڈی میں شامل ہوکر لولی نے کہا کہ آج ہم پوری ذمہ داری کے ساتھ آر جے ڈی کے ممبر بن چکے ہیں۔ اپنے حامیوں سے یہ کہنا چاہتے ہیں کہ نتیش حکومت نے ہمیں دھوکہ دیا ہے۔ آنند موہن جی کے جیل بھیجنے والوں کوعوام جواب دے گی ۔ہمارے حامی اب آر جے ڈی کے ممبر بن چکے ہیں۔ہم اپنے حامیوں سے یہ کہنا چاہتے ہیں کہ وہ اس اسمبلی انتخابات میں حکومت کو سبق سکھائیں اور انہیں اقتدار سے بے دخل کردیں، ہم تیجسوی یادو کو وزیر اعلی بنانے کے لیے آئے ہیں۔لولی آنند نے کہاکہ حکومت نے تمام سینئر رہنمائوںکو جیل میں ڈال دیا ہے۔ہم لوگوں کو کہنا چاہتے ہیں کہ وہ موجودہ حکومت کا تختہ پلنے دیں ۔ پارٹی ہمیں جو بھی ذمہ داری دے گی ہم اسے نبھائیں گے۔وہیں آر جے ڈی نے ان کا کھل کر خیرمقدم کیا ۔ پارٹی کے ان نئے ممبروں کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے آر جے ڈی کے ریاستی صدر جگدانند سنگھ نے کہاکہ آر جے ڈی نے احترام کے ساتھ لولی آنند کا خیرمقدم کیا ہے۔ آنند موہن جیل میں ہیں، لیکن لولی آنند اور ان کے بیٹے چیتن آنند آر جے ڈی کی حمایت کریں گے، تاکہ فرقہ پرست طاقتوں کو شکست دی جاسکے۔ لولی آنند جی نے اپنے حامیوں کے ساتھ آر جے ڈی میں شامل ہوئی ہیں ۔ تیجسوی یادو نے اپنے دستخط کے ساتھ اپنی ٹیم شامل کرایا ہے۔ لولی آنند نے اپنے سیاسی کیریئر کا آغاز اپنے شوہر آنند موہن سنگھ کی بہار پیپلز پارٹی سے کیا تھا۔ لولی آنند کاسیاسی سفر یقینی طور پر بہار پیپلز پارٹی کے ساتھ شروع ہوا تھا، لیکن بعد کے دنوں میں اس نے بہت ساری جماعتیں تبدیل کیں اور وہ ممبر پارلیمنٹ کے ساتھ ساتھ ایم ایل اے بھی رہیں۔ انہوں نے 1994 میں ویشالی پارلیمانی سیٹ کے ضمنی انتخاب میں سابق وزیر اعلی ستیندر نارائن سنہا کی اہلیہ کشوری سنہا کو شکست دی تھی، لیکن وہ اس کامیابی کو برقرار نہیں رکھ سکیں۔ 2014 کے عام انتخابات سے قبل وہ کانگریس میں تھیں، لیکن کانگریس سے ٹکٹ نہ ملنے کے بعد انہوں نے کانگریس کو چھوڑ دیا اور سماج وادی پارٹی (ایس پی) کے ٹکٹ پر انتخاب لڑا ، جس میں وہ ہار گئیں۔ سال 2015 میں وہ جیتن رام مانجھی کی پارٹی ہندوستانی عوام مورچہ (سیکولر) سے بھی وابستہ تھیں۔ وہ جنوری 2019 میں ایک بار پھر کانگریس میں شامل ہوگئیں اور آج یعنی 28 ستمبر 2020 سے وہ دوبارہ آر جے ڈی میںشامل ہوگئیں۔

You might also like