Baseerat Online News Portal

پپویادواورچندرشیکھرآزادنے نئے اتحادکااعلان کیا،ایس ڈی پی آئی شامل،کشواہابھی مدعو

پٹنہ28ستمبر(بی این ایس )
بہارکی سیاست میں اسدالدین اویسی کی آل انڈیامجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) نے قدم نہیں رکھاتھاکہ جنوبی ہندوستان کی دوسری مسلم پارٹی نے دستک دی ہے۔ اے آئی ایم آئی ایم کے بعد اب پاپولر فرنٹ آف انڈیاکی سیاسی ونگ سوشل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (ایس ڈی پی آئی) بہار میں اپنی قسمت آزمانے کے لیے میدان میں اتر رہی ہے۔ ایسی صورتحال میں مسلم ووٹوں کو لے کرسیاسی جدوجہد ہورہی ہے اور دیکھنا یہ ہے کہ کون سی جماعت مسلمانوں کی پہلی پسندبن جاتی ہے؟ایس ڈی پی آئی بہارمیںجن ادھیکارپارٹی کے قومی صدرپپویادوکی سربراہی میںپروگریسوڈیموکریٹک الائنس(PDA) کاحصہ ہے جس میں دلت لیڈر چندرشیکھر آزاد کی پارٹی بی ایم پی بھی شامل ہے۔اس درمیان پپویادونے اپنے اوپیندرکشواہاکوبھی مدعوکیاہے ۔اتحادمیں پپو یادونے تین چھوٹی جماعتوں کو اکٹھا کرکے دلت مسلم-یادو ووٹوں کے مساوات پیداکرنے کی کوشش کی ہے۔ تاہم اسد الدین اویسی نے بہار میں اپنا سیاسی اڈہ بڑھانے کے لیے سابق مرکزی وزیر دیویندرپرساد یادو کی پارٹی ، جسے یونائیٹڈ ڈیموکریٹک سیکولر الائنس (یو ڈی ایس اے) کا نام دیا گیا ہے ، سماج وادی جنتا دل کے ساتھ بھی اتحاد کیاہے۔

You might also like