Baseerat Online News Portal

زرعی بل پر ریاستوں سے مشورہ نہیں کیاگیا:سچن پائلٹ

جے پور29ستمبر(بی این ایس )
کانگریس زرعی قانون سازی کے حوالے سے جارحانہ موڈمیں ہے۔ راجستھان کے سابق نائب وزیراعلیٰ سچن پائلٹ نے زرعی قانون کے خلاف جے پور میں پریس کانفرنس کی ، جب کہ وزیراعلیٰ اشوک گہلوت اور ریاستی صدر گووند سنگھ ڈوٹاسار راج بھون گئے اور گورنر کلراج مشرا کو ایک یادداشت پیش کی۔سچن پائلٹ نے کہاہے کہ کسان زرعی ایکٹ کی زد میں آگئے ہیں۔راجیہ سبھا میں جس طرح سے بل منظور ہوا وہ جمہوریت کا قتل ہے۔ جس طرح سے بل منظور کیا گیا ہے اس سے یہ واضح ہوتا ہے کہ حکومت کے پاس اکثریت نہیں ہے۔ سچن پائلٹ نے کہاہے کہ نہ صرف کانگریس بلکہ این ڈی اے کے حلقے بھی زرعی قانون کی مخالفت کر رہے ہیں۔راجستھان کے قبائلی علاقوں میں تشدد کے بارے میں سچن پائلٹ نے کہاہے کہ تشدد کسی بھی مسئلے کا حل نہیں ہے۔ کوئی بھی حکومت امن و امان خراب ہونے کاخواہاں نہیں ہے۔ کچھ لوگوں نے اس تحریک کو مشتعل کرنے کے لیے کام کیا ہے۔ ہمارے قبائلی بھائی بہنیں تشدد پر یقین نہیں رکھتے۔ سچن پائلٹ نے کہاہے کہ جب کانگریس زرعی قانون کی مخالفت کر رہی ہے تو راجستھان میں اس کو کیسے لاگو کیا جاسکتا ہے۔ زراعت ریاست کا موضوع ہے ، لیکن کسی سے بات نہیں ہوئی۔اسی کے ساتھ ہی گورنر کلراج مشرا کو میمورنڈم پیش کرنے کے بعد ، سی ایم گہلوت نے ٹویٹ کیاہے کہ راجستھان ریاستی کانگریس کمیٹی نے نئے زرعی قوانین کو واپس لینے اور ترمیم کے لیے راجستھان گورنرکومیمورنڈم پیش کیاہے۔اس سے قبل اشوک گہلوت نے مودی سرکار پر حملہ کرتے ہوئے کہاتھاکہ ان فاشسٹوں کو جمہوریت پراعتمادنہیں ہے ، لہٰذا وہ ایسے کام کرتے رہتے ہیں جس سے لوگوں کی توجہ ہٹ جاتی ہے۔انھوں نے کہاہے کہ جس طرح سے یہ تینوں بل پارلیمنٹ میں منظور ہوئے وہ شرمناک ہے۔

You might also like