Baseerat Online News Portal

بھارت نے لداخ میں ایل اے سی سے متعلق چین کے دعوے کومستردکردیا

نئی دہلی29ستمبر(بی این ایس )
بھارت نے لائن آف ایکچول کنٹرول (ایل اے سی) سے متعلق چین کے دعوے کومستردکردیاہے۔ ہندوستانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ بھارت نے 1959 میں یکطرفہ طور پر چین کی ایل اے سی قبول نہیں کی۔ 1993 کے بعد بہت سارے معاہدے ہوئے جن کا مقصد حتمی معاہدے تک سرحد پر امن اور جمود برقرار رکھنا تھا۔ 2003 تک دونوں طرف ایل اے سی کے عزم کی سمت میں کوشش کی جارہی تھی لیکن اس کے بعد چین نے دلچسپی کا مظاہرہ کرناچھوڑدیاہے۔لہٰذایہ عمل رک گیا ہے۔ اب چین کا کہنا ہے کہ صرف ایک ایل اے سی ہے ،یہ پچھلی رضامندی کی خلاف ورزی ہے۔پچھلے کچھ مہینوں سے چین یکطرفہ انداز میں ایل اے سی کی الاٹمنٹ کو تبدیل کرنا چاہتاہے۔10 ستمبر کو وزرائے خارجہ کے اجلاس میں چین نے اب تک کے معاہدوں کو قبول کرنے کی بھی یقین دہانی کرائی ہے۔ ہندوستان کو امید ہے کہ چین معاہدوں پرقائم رہے گا اور یکطرفہ طور پر ایل اے سی کو تبدیل کرنے کی طرف نہیںبڑھے گا۔دوسری جانب ہندوستانی فوج کئی دہائیوں کے اپنے سب سے بڑے فوجی آپریشن کے تحت ، مشرقی لداخ کے اونچائی والے علاقوں میں،تقریباََچارماہ کی شدید سردی کے تناظر میں ، ٹینک ، بھاری ہتھیاروں ، گولہ بارود ، ایندھن اشیائے خوردونوش اور اشیائے ضروریہ کی فراہمی میں بھی مصروف ہے۔ فوجی ذرائع نے یہ اطلاع دی ہے۔

You might also like