Baseerat Online News Portal

تمام طبقے باہمی اعتماداورہم آہنگی کے ساتھ ملک کی تعمیرکے لیے متحدہوجائیں

بابری مسجدشہادت کیس کے فیصلے کے بعد آر ایس ایس کی اپیل،عدالتی فیصلے کا خیرمقدم کیا
نئی دہلی،30؍ستمبر( بی این ایس )
راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (آر ایس ایس) نے بدھ کے روز سینٹرل بیورو آف انویسٹی گیشن (سی بی آئی) کی خصوصی عدالت کے ذریعہ بابری مسجد انہدام کیس کے تمام 32 ملزمان کوبری کرنے کا خیرمقدم کیا ہے۔آر ایس ایس نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے وطن عزیز سے اپیل کی ہے کہ اس فیصلے کے بعد معاشرے کے تمام طبقات باہمی اعتماد اور ہم آہنگی کے ساتھ متحد ہوجائیں اور ملک کو درپیش چیلنجوں کا مقابلہ کریں۔آر ایس ایس کے لیڈر سریش بھیاجوشی نے کہاہے کہ راشٹریہ سویم سیوک سنگھ انہدام کیس کے تمام ملزموں کو بری کرنے کے لیے سی بی آئی کی خصوصی عدالت کے فیصلے کا خیرمقدم کرتاہے۔انہوں نے کہاہے کہ اس فیصلے کے بعد معاشرے کے تمام طبقات کو باہمی اعتماد اورہم آہنگی کے ساتھ متحد ہونا چاہیے اور ملک کو درپیش چیلنجوں کا کامیابی سے مقابلہ کرنا چاہیے اور قوم کو ترقی کی طرف لے جانے کاکام کرنا چاہیے۔یہ بات مشہور ہے کہ آر ایس ایس اور اس کی اتحادی تنظیموں جیسے وشو ہندو پریشد نے پورے ملک میں رام مندر کی تحریک میں بڑا کردار ادا کیا۔سی بی آئی کی خصوصی عدالت نے بدھ کے روز 6 دسمبر 1992 کو ایودھیا میں بابری مسجد شہادت کرنے کے فیصلے میں تمام ملزموں کو بری کردیا۔اس معاملے میں 32 ملزمان تھے جن میں سابق نائب وزیر اعظم ایل کے اڈوانی ، سابق مرکزی وزیر مرلی منوہر جوشی ، اوما بھارتی اور اتر پردیش کے سابق وزیر اعلی کلیان سنگھ شامل ہیں۔سی بی آئی کی خصوصی عدالت کے جج ایس کے یادو نے فیصلہ سنایا کہ بابری مسجد انہدام کا واقعہ پہلے سے منصوبہ بند نہیں تھا ، یہ ایک حادثاتی واقعہ تھا۔ انہوں نے کہا ہے کہ ملزم کے خلاف کوئی ٹھوس ثبوت نہیں ملا ، بجائے اس کے کہ ملزم نے مشتعل ہجوم کو روکنے کی کوشش کی۔

You might also like