Baseerat Online News Portal

آئی یوایم ایل نے عدالت کا فیصلہ افسوسناک قرار دیا

نئی دہلی ،30؍ستمبر( بی این ایس )
آئی یوایم ایل نے بابری مسجد شہادت کیس سے متعلق خصوصی عدالت کے ذریعہ دیئے گئے فیصلے کو بدھ کے روز افسوس ناک قرار دیتے ہوئے کہا گیاہے کہ فیصلے کے خلاف اپیل کی جائے۔ عدالت نے اس معاملے میں بی جے پی کے تجربہ کار ایل کے اڈوانی سمیت تمام 32 ملزموں کو بری کردیا ہے۔ یہاں میڈیا کو مخاطب کرتے ہوئے ، آئی یو ایم ایل کے سربراہ حیدر علی شہاب تھانگل نے کہاہے کہ بدقسمتی کی بات ہے کہ لکھنؤمیں سی بی آئی کی خصوصی عدالت نے اس کیس کے تمام ملزموں کو بری کردیاہے۔اس کے خلاف اپیل کرناچاہیے۔ امن اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو برقرار رکھنا ہوگا۔آئی یو ایم کے رہنما اور رکن پارلیمنٹ پی کے کنہلکٹی نے بھی کہاہے کہ عدالت کے فیصلے کے خلاف اپیل کی جانی چاہیے۔ کنہلیکٹی نے نامہ نگاروں کوبتایاہے کہ یہ فیصلہ بدقسمتی ہے۔ اس فیصلے کے خلاف اپیل کی جانی چاہیے۔ پوری دنیا نے دیکھا کہ کسی نے بھی مسجد کو منہدم ہونے سے بچانے کی کوشش نہیں کی ہے۔ادھر کیرالہ بی جے پی نے کہا کہ لکھنؤ میں قائم سی بی آئی عدالت کے فیصلے کے ساتھ تین دہائیوں تک شک کی بنیاد پر تفتیش کا نتیجہ اخذکیاگیا۔ کیرالہ بی جے پی نے کہاہے کہ بی جے پی کے خلاف جھوٹے الزامات کانگریس اور دیگر جعلی سیکولر پارٹیوں نے لگائے تھے جوجھوٹے ثابت ہوئے ہیں۔بی جے پی نے کہاہے کہ کانگریس کو متنازعہ ڈھانچے کی بنیاد پر ملک کو تقسیم کرنے کی کوشش کرنے پر معذرت کرناچاہیے ۔ کیرالہ بی جے پی کے صدرکے سریندرن نے ایک بیان میں کہاہے کہ عدالتی فیصلہ ان لوگوں کا جواب ہے جنھوں نے ایل کے اڈوانی سمیت سینئر رہنماؤں کی شبیہ کو داغدار بنانے کی کوشش کی۔ سازش تو نہیں ہوئی ہے لیکن عدالت نے بھی مہر ثبت کردی ہے۔

You might also like