Baseerat Online News Portal

بی جے پی کا اصل دلت مخالف چہرہ سامنے آیا، ایس پی لیڈرنے کہا، یوگی اپنے پرانے راستے کی طرف لوٹ رہے ہیں

لکھنو5اکتوبر(بی این ایس )
اترپردیش میں نسلی فسادات کو بھڑکانے کی سازش کا انکشاف ہاتھرس میں ایک دلت خاتون کے ساتھ اجتماعی عصمت دری اورموت کے واقعہ کے بعد ہوا ہے۔ انٹلیجنس سے حاصل کردہ ان پٹ کی بنیاد پر ، پولیس کا دعویٰ ہے کہ واقعے کے بعد راتوں رات ایک ویب سائٹ جسٹس فار ہاتھرس‘‘ بنائی گئی تھی۔ اس کے ذریعے وزیراعلیٰ یوگی کے غلط بیانات نشر کیے گئے تاکہ ماحول خراب ہو۔ لیکن اس کے انکشافات کے بعد کانگریس اور ایس پی کی حکمران جماعتیں بی جے پی پر حملہ آور ہوگئیں۔کانگریس نے اسے جعلی اور مضحکہ خیز قرار دیا ہے۔اس نے کہاہے کہ اس سے بی جے پی کا دلت مخالف چہرہ سامنے آگیا ہے۔اس دوران اسی پی نے کہاہے کہ سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ اپنے پرانے راستے کی طرف لوٹ رہے ہیں۔ لوگ محتاط رہیں۔ سی ایم یوگی اور ان کی ٹیم کی وجہ سے ہونے والے فسادات کو روکنے کے لیے سوشلسٹوں کو سب سے بڑی قربانی دینے کے لیے تیاررہناچاہیے۔ عوام کو ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے۔چودھری نے کہاہے کہ ریاست کے عوام اب صرف ایک ہی مطالبہ کر رہے ہیں کہ ریاست میں امن وامان بحال کیا جائے ، بیٹیوں کی حفاظت کو یقینی بنایا جائے۔ سماج وادی پارٹی اوراپوزیشن عوام کے اس مطالبے کو وزیراعلیٰ یوگی تک بڑھانا چاہتی ہے۔ لیکن اس آواز کو نہیں سننا چاہتے۔ بربریت ، جبراورگرفتاری کی طاقت پر اپوزیشن کی آواز کو کچلنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ لوگوں کی توجہ اس صورتحال سے ہٹانے کے لیے وزیر اعلیٰ کواچانک فسادات کھیلنے کے اپنے پرانے کھیل کا احساس ہوگیا ہے۔ جس کا اظہار انہوں نے کچھ لوگوں اور حزب اختلاف پر الزامات عائد کرنے کے بہانے کیاہے۔ ریاست کے ہر حساس اور باشعور انسان کو اس بارے میں محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ وزیراعلیٰ اپنی پارٹی کے لوگوں کو اپنی ناکامیوں کو چھپانے کے لیے اکساتے ہوئے نسلی اور فرقہ وارانہ فسادات کو بھڑکانے کی سازش کا موزوں جواب دینے میں ہوشیارہیں۔

You might also like