جہان بصیرتنوائے خلق

ملائم سنگھ کو ایودھیا میں گولی چلوانے کا دکھ کیوں؟

مکرمی!
سیکولرزم کے نام پر ٹوپی اوڑھ کر مسلمانوں کو بے وقوف بنانے والے ملائم سنگھ یادو کی بھگوا دوستی اب ڈھکی چھپی نہیں رہی، جن مسلمانوں کے ووٹ بینک پر آج ملائم سنگھ یادو نے اپنے بیٹے کو وزیر اعلی بنایا،جن مسلمانوں کے دم پر آج سماجوادی پارٹی نے اترپردیش میں لوٹ کھسوٹ مچا رہی ہے،انہی مسلمانوں سے کئے گئے ملائم سنگھ کے تمام وعدے کھوکھلے ثابت ہوئے، اور انہی مسلمانوں کو ملائم سنگھ اپنی سرکار میں کوئی خاص فائدہ نہ پہنچا سکے، بے گناہ مسلمانوں کی رہائی کا وعدہ مزید گرفتاریوں کی سوغات میں مل رہا ہے، 18 فیصد ریزرویشن کا وعدہ بھی بے جان ثابت ہوا، اسی طرح اگر کہا جائے کہ ملائم سنگھ یادو کی سرکار میں مسلمانوں کو کوئی قابل ذکر فائدہ بالکل بھی نہیں پہنچا تو یہ کہنا کوئی جھوٹ یا بے جا نہیں ہوگا۔ بلکہ کہا جائے کہ مسلمانوں کے لئے یہ بہت بڑاالمیہ ہے کہ مسلمانوں کے ووٹ بینک سے سماجوادی جیتے تو یادو کو ترقی اور اگر بہوجن سماج پارٹی جیتے تو دلت کو ترقی، مسلمان بے چارہ نئی امید کی کرن سے ان کو ووٹ دیتا ہے لیکن پھر اپنے آپ کو ٹھگا ہوا محسوس کرتا ہے۔
ملائم سنگھ یادو نے الیکشن کے وقت مسلمانوں سے وعدے تو بہت سے کئے تھے جن کو پورا کرنے میں وہ بالکل ناکام ہوئے، مزید براں اتر پردیش کی اس سیکولر سرکار میں 300 سے زائد ہندو مسلم فسادات ہوئے جن میں مظفر نگر شاملی جیسے مسلم کش فسادات بھی ہیں۔ جن میں خوں ریزی کو انجام دینے والی سوابھیمان سینا کا اسی سرکار میں انکشاف ہوچکا ہے۔
لیکن مزید کریلہ اور نیم چڑھا کہ جب سے بی جے پی اقتدار میں آئی ہے ملائم سنگھ یادو جی کی بھگوا دوستی کوئی ڈھکی چھپی نہیں رہی جس کی وجہ سے مسلمان اضطراب کا شکار ہیں، اور یہ بات بھی پوری طرح واضح ہوچکی ہے کہ ٹوپی اوڑھ کر مسلمانوں کے مسیحا بن جانے والے ملائم سنگھ یادو کے ہر اس شدت پسند بھگوا دھاری سے دوستی ہے جو مسلمانوں کی جان کا دشمن ہے۔ اور جس کی زبان مسلمانوں کا سکون غارت کرنے کے لئے کھلی رہتی ہے۔
شاید یہ اسی بھگوا دوستی کا اثر ہے کہ ملائم سنگھ یادو جی نے اب اپنے دل کی بات اس طرح کہی ہے کہ ان کو بابری مسجد کی شہادت کے وقت ایودھیا میں گولی چلوانے پر بہت افسوس ہے، اور اس پر ان کا دل بھی بہت دکھتا ہے۔
ہمیں اس بات پر افسوس ہوا کہ ملائم سنگھ یادو جی کو بابری مسجد کی شہادت اور ان کی سرکار میں کی جانے والی مسلم نسل کشی پر کبھی افسوس نہیں ہوا ہے۔
چاہت محمدقاسمی
(بصیرت فیچرس)

Tags

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker