Baseerat Online News Portal

فوجیوں کوضروری اشیاء کی زبردست کمی،کپڑوں کی خریداری میں چارسال کی تاخیر

سی اے جی کی رپورٹ پر راہل گاندھی نے گھیرا، وزیر اعظم کو صرف اپنی شبیہ کی فکر
نئی دہلی 8اکتوبر(بی این ایس )
کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے لداخ میں بھارتی فوجیوں کی صورتحال سے متعلق جاری کیگ کی رپورٹ پروزیراعظم مودی پر حملہ کیا ہے۔ راہل گاندھی نے کہا ہے کہ وزیر اعظم مودی نے اپنے لیے 8400 کروڑ کا ہوائی جہازخریدا۔ اس میں سیاچن-لداخ پر تعینات فوجیوں کے لیے بہت کچھ خریدا جاسکتا ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی کو صرف فوجیوں کی نہیں اپنی شبیہ کی فکر ہے۔راہل گاندھی نے اپنے ٹویٹر ہینڈل پرلکھاہے کہ وزیراعظم نے اپنے لیے 8400 کروڑکاطیارہ خریدا۔ اس طرح سیاچن-لداخ بارڈر پرتعینات ہمارے فوجیوں کے لیے کتنی خریداری ہوسکتی ہے۔ گرم کپڑے:3000000، جیکٹ کے دستانے600000 ، جوتے:6720000 ۔ وزیر اعظم کوصرف اپنی شبیہ کی فکر ہے نہ کہ فوجیوں کی۔سی اے جی کی رپورٹ کے مطابق ، 2015-16 اور 2017-18 کے دوران کے آڈٹ میں انکشاف ہواہے کہ اونچائی اور سرد مقامات پر فوج کی تعیناتی کے لیے درکار لباس اور سامان کی خریداری میں چار سال تک کی تاخیرہوئی ہے۔ برف میں لگانے کے لیے شیشوں کی بھی کمی تھی۔سیاچن اور لداخ میں موسم کے مطابق ناہموار حالات ہیں۔ ایسے میں پارلیمنٹ کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے بھی وہاں تعینات ہندوستانی فوجیوں کے لیے درکار گرم کپڑوں اور سامان کی خریداری میں تاخیرپرتشویش کا اظہار کیا ہے۔ پی اے سی صدر اھدیر رنجن چودھری نے اس سلسلے میں لوک سبھا اسپیکر اوم برلاکو خط لکھاہے۔اس میں انہوں نے لداخ کو ایک پینل بھیجنے کی اجازت طلب کی ہے ، تاکہ پینل لداخ میں سرحد پر تعینات فوجیوں سے مل سکے اور وہاں کی صورتحال کوجانے اورسمجھے۔

You might also like