Baseerat Online News Portal

مشہوربسکٹ کمپنی پارلے- G نے نفرت پھیلانے والے نیوز چینلز کواشتہارنہ دینے کاکیافیصلہ

نئی دہلی:12؍اکتوبر(بی این ایس؍ایجنسی) ملک کی مشہور بسکٹ کمپنی ‘پارلے جی نے حال ہی میں ایک بڑا فیصلہ لیا ہے۔ دراصل ، پارلے کی مصنوعات تیارکرنے والی کمپنی نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ زہریلے اور نفرت انگیز مواد نشر کرنے والے نیوز چینلز کو مزید اشتہار نہیں دے گا۔ یہ اطلاع ‘انڈین سول لبرٹیز یونین کے ٹویٹر ہینڈل نے دی ہے۔
ٹویٹ میں لکھا ہے ، ’’پارلے جی کمپنی نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ زہریلے اور نفرت انگیز مواد نشر کرنے والے نیوز چینلز کو مزید اشتہار نہیں دے گی۔ یہ چینلز اس قسم کے نہیں ہیں جس میں کمپنی اپنے پیسوں کی سرمایہ کاری کرناچاہتی ہو۔ کیوں کہ یہ ان کے ہدف کے سامعین کے حق میں نہیں ہے۔ ٹوئیٹ میں مزیدلکھاکہ یہی وہ وقت ہے کہ پارلے اور بجاج کی سربراہی میں مزید کمپنیاں شامل ہوں ‘‘۔


اس موقع پربالی ووڈ اداکارہ سوارا بھاسکر نے پارلے جی کے فیصلے پر اپنا رد عمل ظاہر کیا ہے۔ سوارا بھاسکر نے ٹویٹ کرکے پارلے جی کے فیصلے کی حمایت کی ہے۔ اس ٹویٹ کو ری ٹویٹ کرتے ہوئے اداکارہ سوارا بھاسکر نے لکھا ، “یار ، پارلے کے لئے تین خوشی۔” لوگ سوارا بھاسکر کے ٹویٹ پر کافی تبصرے کر رہے ہیں اور اپنی رائے دے رہے ہیں۔ میں آپ کو بتاتا چلوں کہ حال ہی میں نیوز چینلز کی ٹی آر پی کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ جس کے لئے بی جے پی کے سینئر رہنما اور مرکزی وزیر پرکاش جاوڈیکر نے کہا ہے کہ پہلے وہاں پیلے رنگ کی صحافت ہے ، پھر پیڈ نیوز ہے ، پھر جعلی خبر ہے اور اب ٹی آر پی جرنلزم ہے۔ اس ٹی آرپی کے چکرمیں بہت سے اچھےادارے آگئے ہیں۔ پہلے ٹی اے ایم ایک نجی ادارہ تھا جو ٹی آر پی نکالتاتھا۔ پچھلے دو مہینوں میں یہ کہاں سے کہاں پہونچ گیا۔

You might also like