Baseerat Online News Portal

لڑکیوں نے دهمول بازار میں کینڈل مارچ نکال کر گلناز کے لئے انصاف کی گہار لگائی

لڑکیوں نے دهمول بازار میں کینڈل مارچ نکال کر گلناز کے لئے انصاف کی گہار لگائی۔۔

 

نوادہ محمد سلطان اختر

 

نوادہ ضلع کے تحت دھمول بازار میں لڑکیوں نے بھی خصوصی طور پر گلناز کے لئے کینڈل مارچ کرکے احتجاج درج کرایا، یہ کینڈل مارچ جناب قمر الباری دھمولوی راجد اقلیتی کمیٹی کے صدر نوادہ کی قیادت میں دوشیزہ لڑکیوں نے کینڈل مارچ کرکے گلناز کے لئے حکومت بہار سے مطالبہ کیا کہ گلناز کے مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے، احتجاج میں موجود لڑکیوں نے موجودہ نتیش حکومت سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ہم لوگوں کے حفاظت کے لئے حکومت سخت قدم اٹھائے، لڑکیوں کے تحفظ کے تعلق سے ریاست بہار میں قانون بنایا جائے، لڑکیوں نے احتجاج میں یہ بھی کہا کہ “”گلناز ہم سب شرمندہ ہیں””

“” تیرے قاتل ابھی بھی زندہ ہیں””اِن نعروں کے ساتھ لڑکیوں نے احتجاج کا آغاز کیا اگر اسی طرح سے ملک بھر میں لڑکیوں کے ساتھ زنا بالجبرظلم و زیادتی ہوتی رہی تو یقیناً ایسے معاشرے میں لڑکیوں کا وجود مستقبل میں بڑا خطرہ لاحق کریگا اس لئے حکومت ہند سے لے کر ریاستی حکومت تک سے التجاء ہے کہ ایسا مستقل قانون بنایا جائے تاکہ درندگی کرنے والے کو پھانسی پر پہنچایا جاسکے۔۔ افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ مظلوم کے ساتھ اُنکے گھر والوں کو بھی آٹھ سے دس سالوں تک مقدمہ کا سامنا کرنا پڑتا ہے بلآخر لڑکیوں کے گھر والے انصاف لینے سے محروم رہ جاتے ہیں اور عدالت کا چکر کاٹ کر تھک جاتےہیں اوپر سے سماج بھی رسوا کرتی ہے۔احتجاج میں موجود لڑکیوں نے یہ مطالبہ کیا کہ اگر گلنازکے قاتلوں کو گرفتار کر کے پولیس کے ذریعہ عدالت میں اسپیڈی ٹرائل چلاکر پھانسی پر لٹکایا جائے،

لڑکیوں نے ويشالي ڈی ایم اور ایس پی پر بھی سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اِن لوگوں کے ناقص کارکردگی کی وجہ کر گلناز کی جان چلی گئی ہے اس لئے ایسے ڈی ایم اور ایس پی و تھانہ انچارج،ڈی پی او سب کو معطل کیا جائے،تاکہ دوسرے آفیسر سبق حاصل کریں۔

اِس موقع پر انجم آرا،شکیلہ خاتون،مسرورا باری،سونم پروین،اسماء خاتون،واجدہ پروین،سایہ بیگم،سلمیٰ،نغمہ،فرحت کے علاوہ درجنوں لڑکیاں موجود تھیں۔

You might also like