Baseerat Online News Portal

کالا ہرن شکار معاملہ میں سلمان خان کو ملی پھر راحت

جودھ پور؍جے پور ، یکم دسمبر ( بی این ایس )
کالے ہرن شکار معاملہ میں منگل کے روز سلمان خان دوبارہ عدالت میں پیش نہیں ہوئے۔ انہو ںنے وبا کا حوالہ دیتے ہوئے حاضری سے استثنیٰ حاصل کرنے کے لئے ضلعی عدالت میں رجوع کیا تھا، خیال رہے کہ اب اگلی سماعت 16 جنوری کو ہوگی۔ یہ چھٹا موقع ہے جب انہیں کرونا دور میں آٹھ مہینوں میں رعایت دی گئی ہے۔ اس معاملہ میں اب تک 15 ویں بار انہوں نے حاضری سے معافی حاصل کی ہے۔منگل کو سلمان خان کو ہرن شکار سے متعلق دو مقدمات اور ایک آرمس ایکٹ سے متعلق عدالت میں پیش ہونا تھا۔ 5 اپریل 2018 کو کالے ہرنوں کے شکار کے کیس میں ٹرائل کورٹ نے سلمان کو مجرم قرار دیتے ہوئے انہیں پانچ سال قید کی سزا سنائی تھی،انہوں نے اسے ضلعی عدالت میں چیلنج کیا ہے۔دیگر ملزم اداکار سیف علی خان ، نیلم ، تبو اور سونالی وغیرہ کوبری کردیا گیا تھا، جب کہ سلمان خان کو جودھ پور جیل بھیج دیا گیا تھا۔ اسی دوران ، آرمس ایکٹ کے معاملے میں بھی عدالت نے سلمان کو بری کردیاتھا، تین دن بعد وہ عدالت سے ضمانت پر رہا ہوئے تھے۔خیال رہے کہ جودھپور پولیس نے 2 اکتوبر 1998 کو سلمان خان اور دیگر ملزمان کے خلاف کالے ہرن شکار کا مقدمہ درج کیا تھا۔ وشنوئی برادری کی جانب سے سلمان خان کیخلاف کالے ہرن کے شکار کا مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ اس کے بعد سلمان خان کو 12 اکتوبر 1998 کو ہرن شکار اور اسلحہ ایکٹ میں گرفتار کیا گیا تھا۔ پانچ دن بعد وہ ضمانت پر رہا ہوئے تھے۔سلمان کو 17 فروری 2006 کو بھوادمیں ہرن کے شکار کے ایک کیس میں سزا سنائی گئی تھی۔ 10 اپریل 2006 کو گھوڑے کے فارم ہاؤس ایریا میں شکار کے معاملہ میں ، عدالت نے سلمان کو مجرم قرار دیتے ہوئے پانچ سال اور 25 ہزار جرمانے کی سزا سنائی تھی۔ ان دونوں معا ملہ میں سلمان کو ہائی کورٹ سے راحت ملی تھی، ریاستی حکومت نے اس فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کیا ہے۔ یہ دونوں مقدمات ہائی کورٹ میں ہیں۔

You might also like