Baseerat Online News Portal

ذراغیرت ایمانی کوآوازدینا!

محمدشارب ضیاء رحمانی
خبردرخبر
ایک طرف ملک میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی بگاڑنے کی مہم پوری طاقت کے ساتھ جاری ہے وہیں ہندوتو کے نام پرہندؤں کومتحدکرنے کی کوشش بھی ہے۔اس کیلئے مختلف ہتھکنڈے اپنائے جارہے ہیں۔ملک کی فضاکومسموم کرنے کے ساتھ ساتھ آرایس ایس اوراس کی تمام مرکزی اورذیلی تنظیمیں ملک کی یکجہتی اورگنگاجمنی تہذیب کومتاثرکررہی ہیں۔ساتھ ہی وہ مسلمانوں کے ناخواندہ طبقہ کے درمیان اسلامی تعلیمات کے حوالہ سے کنفیوژن اورغلط فہمی کے فروغ میں کوشاں ہیں۔ایسے وقت میں توضرورت یہ تھی کہ مشترکہ اصولوں کے تحت تمام اقلیتیں اورمظلوم طبقات ساتھ آتے۔اس کی کوششیں بھی مختلف سطح پرہورہی تھیں لیکن یہ اس امت کی حرماں نصیبی ہے کہ ایسے نازک ترین دورمیں جب کہ اتحادامت کی سب سے زیادہ ضرورت تھی،مسلکی بنیادوں پران کے درمیان تفریق کوہوادی جارہی ہے۔علامہ شبلی نے کیاخوب لکھاہے کہ جتنی کوششیں صحابہ کافروں کومسلمان بنانے کی کرتے تھے ،اس سے زیادہ کوششیں ہمارے دورمیں مسلمانوں کوکافربنانے کی کی جارہی ہیں۔
وزیراعظم نے صوفی ازم کی تعریف کیاکردی کہ ایک طبقہ بی جے پی کواپنی ہم نواسمجھ کرسطحیت پراترآیا۔مودی نے کہاتھاکہ اگرمسلمانوں نے صوفی ازم کواپنایاہوتاتودہشت گردی نہیں ہوتی گویاوزیراعظم اسی وقت ان لوگوں کوجوصوفی ازم سے الگ ہیں،دہشت گردقراردے دیاتھابس کیاتھایہ لوگ اپنے ہمنوابن کردلالی کرنے لگے۔وزیراعظم کے اس بیان سے اسی وقت’دال میں کالا‘نظرآنے لگاتھایہ لوگ یونہی کسی کی تعریف نہیں کرتے،ان کے پس پردہ محرکات اورمقاصدسے آگہی بروقت ضروری ہوتی ہے۔ اس کی امیدنہیں تھی کہ مسلکی منافرت کوہوادینے کی کوششوں کا شکارخودمسلمانوں کاایک طبقہ ہوجائے گا۔
قارئین یادفرمائیں کہ جب گستاخی رسول کامعاملہ سامنے آیاتھاتوسب سے پہلی آوازددارالعلوم یوبندسے اٹھ کرآئی،بعدمیں جب محب رسول کے مدعیوں کوعاردلائی گئی تویہ سامنے آئے۔یہ بھی ایک حقیقت ہے۔یہ توعام بات ہے کہ فلاں مسجدمیں فلاں نہیں جاسکتا،فلاں قبرستان میں فلاں کی تدفین نہیں ہوسکتی،فلاں امام نہیں ہوسکتالیکن اب اس سے بڑھ کرگھٹیاحرکت کیاہوگی کہ دوسرے مسلک پرکھلے عام دہشت گردی کابے بنیادالزام لگایاجائے،اورحکومتی خوشنودی کیلئے اس گندی سطح تک اترجایاجائے۔میری تمام مسلمانوں سے اپیل ہے کہ یہی وہ وقت کہ ہم ان رنگ برنگے لوگوں کواصل روپ میں پہچانیں۔ان حضرات کوتوشرم آنی چاہئے جودرگاہوں سے متعلق ہیں،اسی ہندتواتنظیم نے کھلے عام حضرت خواجہ معین الدین چشتی اجمیری ؒ پرسنگین الزامات لگائے،خواجہ اجمیری کی درگاہ کامذاق اڑایاجس کی ویڈسوشل میڈیاپرموجودہے،آج انہی لوگوں کے ساتھ وہی لوگ اپنی ہمنوائی میں مصروفِ عمل ہیں،مسلمانوں کے نام پرقوم کورسواکرنے والوشرم کروشرم کرو!،حدتویہ ہے کہ اسی سنگھی طبقہ کی ذیلی تنظیم کے رکن نے رسول اللہ ﷺکی شان میں گستاخی کی آج تم پھران کے سامنے جاکر خودکوبھولے بھالے بن کردوسروں پربے بنیادالزامات لگارہے ہو؟۔ذراغیرت ایمانی کوآوازدو۔
مسلک ومشرب کااختلاف اپنی جگہ لیکن اس گھٹیاحرکت تک پہونچ جانے کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔ تمام مکاتب فکرکے سنجیدہ لوگوں سے اپیل کرتاہوں کہ وہ صبرکریں،معاملہ خداکے حوالہ چھوڑدیں اورالزام تراشی سے بچیں۔یہ آرایس ایس سرکارکی واضح منصوبہ بندی ہے کہ مسلمانوں کے درمیان تفریق کوہوادے کرانہیں آپس میں لڑایاجائے اورہندؤؤں کومتحدکیاجائے جیساکہ گذشتہ مضمون میں بھی میں نے سبرامنیم سوامی کے انٹرویوکاحوالہ دیاتھا۔ہرگزہرگزمسلمان سنگھ پریوارکی ان سازشوں کے شکارنہ ہوں،جوکچھ کسی نے کیاعام معافی کااعلان کردیں،اوروسعت قلبی کامظاہرہ کرتے ہو ئے ایک اورنیک رہنے کاعہدکریں۔بی جے پی کی حکومت کتنے دن ہے اورکس کی سرکارکتنے دنوں تک رہتی ہے،اہل ایمان اس پرمنحصرنہیں ہیں۔ان کایقین توسچائی کاساتھ دینے اورانصاف پرعمل پیرارہنے پرہے۔یہ وقت انتہائی نازک ہے۔خدا،رسول ،حرم،قرآن،سب ایک ہیں،عقیدۂ آخرت سے لے کرایمان مفصل پرہمارایقین مشترک ہے توفروعی اختلاف کے چکرمیں پڑنے کی کیاضرورت ہے۔آیئے ہم سب یہ عہدکرتے ہیں کہ ان بنیادوں پراورکلمہ واحدہ کی بنیادپرہم ایک ہوکر اورایک بن کررہیں گے۔اپنے درمیان پنپنے والی دشمن کی سازشوں کوناکام بنائیں گے۔صفوں کومنتشرنہیں ہونے دیں گے ،یہ وقت کی اہم ضرورت ہے۔ وطن کی اوردین کی خدمت کل بھی کی ہے آج بھی کریں گے۔وطن سے وفاداری اورمحبت ہماری روایت ہے ۔ہمارایہ عزم ہے کہ ہم مل جل کرملک کی تعمیروترقی کے حصہ داربنیں گے اوربحیثیت امت واحدہ ایک نافع امت بن کراورمتحدہوکرآگے بڑھیں گے ا وراپنے صفوں میں انتشارکی کوئی کوشش بھی کامیاب نہیں ہونے دیں گے ۔ہماری غیرتِ ایمانی ہمیں اتحادِفکروعمل ویکجہتی کی دعوت دیتی ہے۔منفعت ایک ہے اس قوم کی ،نقصان بھی ایک ایک ہی سب کانبی ،دیں بھی ایماں بھی ایک حرم پاک بھی، ا للہ بھی ،قرآں بھی ایک کچھ بڑی بات تھی ہوتے جومسلماں بھی ایک۔
(مضمون نگار بصیر ت میڈیا گروپ کے فیچر ایڈیٹر ہیں) 
(بصیرت فیچرس )

You might also like