Baseerat Online News Portal

عر شی قریشی داعشوائی شروع :معاملے کی دس ماہ بعد پھر سےکارین آئی اے کے ڈی وائی ایس پی کی گواہی اور جرح مکمل

ممبئی:8؍جنوری (پریس ریلیز) آئی۔ آر۔ایف سے تعلق رکھنے والے عرشی قریشی جس پر غیر مسلم نو جوانوں کو مذہب تبدیل کراکے داعش میں بھرتی کرانے سمیت کئی سنگین الزامات لگائے ہیں اس مقدمہ کی کاروائی آج ایک طویل مدت تقریبا 10؍ مہینے کے بعدممبئی کی خصوصی این آئی اے عدالت میں شروع ہو گئی ہے استغاثہ کی جانب سے عدالت میں این آئی اے کے ڈی وائی ایس پی کی گواہی اور جرح مکمل ہو گئی ہے ، اس بات کی اطلاع آج یہاں اس مقدمہ کو قانونی امداد فراہم کرنے والی تنظیم جمعیۃ علماء مہا راشٹر کے صدر مولانا حافظ محمد ندیم صدیقی صاحب نے دی ہے۔
مزید تفصیلات دیتے ہوئے مولانا ندیم صدیقی نے بتایا کہ آج عدالت میں جس خصوصی سرکاری گواہ این آئی اے کے ڈی وائی ایس پی جوکہ 39 نمبر کے گواہ تھے انہوں نے اسٹیٹ بینک آف انڈیا برانچ پیامنور برانچ کا بینک اسٹیٹ منٹ کی بر آمدگی اور کار سار گوڑ سے موبائل فون کی ضبطی کا کام کیا تھا ۔ قابل غور یہ ہے کہ یہ گواہ عرشی قریشی سے منسلک نہ ہو نے کے باوجود دیگر ملز مین عبد الرشید و دیگر سےوابستہ ہے ،اس گواہی سے استغاثہ کا موقف مضبوط ہو نے کا بجائے دفاع کے حق میں کارگر ثابت ہوا۔
عدالت میں دفاع کے طورپر اس مقدمہ کی پیروی کرنے والے جمعیۃ لیگل ٹیم کےدفاعی وکلا نے کہا کہ اس مقدمہ میں بیشتر گواہیاں مکمل ہو چکی ہیں جس میںدفاع کا موقف مضبوط ہو رہا ہے انشاء اللہ جلد ہی اس کے بہتر نتائج سامنے آئیں گے، آ ج جمعیۃ علماء مہا راشٹر کی جا نب سے عدالت میںاس کیس کی پیروی کے لئے سینر کریمنل لائر ایڈوکیٹ پٹھان تہور خان صاحب ایڈوکیٹ عشرت علی خان ایڈوکیٹ فیضان قریشی و دیگر موجود تھے۔

You might also like