Baseerat Online News Portal

حصول اراضی کے بعد زرعی قوانین وزیراعظم مودی کی دوسری شکست کاذریعہ بنیں گے:کسان لیڈر حنان ملا

نئی دہلی، 10 جنوری (آئی این ایس انڈیا)
آل انڈیا کسان سبھا کے جنرل سکریٹری حنان ملاکا کہنا ہے کہ مرکزی حکومت کی طرف سے لائے گئے تینوں زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کرنے والے کسانوں کی حکومت کے ساتھ8 دورکی بات چیت کے بعد بھی کوئی حل نہیں نکلنا مودی کی ذاتی ناکامی ہے۔ 8 بار لوک سبھا میں مغربی بنگال کے الوبیریا پارلیمانی حلقہ کی نمائندگی کر چکے حنان ملا نے کہا کہ پارلیمنٹ کے ذریعے اراضی حصول بل منظور نہ کرنا وزیر اعظم کی پہلی شکست ہے اور اس بار یہ تینوں زرعی قوانین ان کی دوسری شکست کا باعث ہوں گے۔ بات چیت کے 8 دورکے بعدبھی کوئی نتیجہ نہیں نکلا،آپ حکومت سے کیا توقع کرتے ہیں اور تحریک کا رویہ کیا ہوگا؟ کے جواب میں کسان لیڈر کہاکہ مجھے کوئی امید نظر نہیں آرہی ہے،کیونکہ آخری میٹنگ اچھے ماحول میں نہیں ہوئی تھی۔ ماحول گرم تھا اور تیز آواز میں بولا جارہاتھا، اب تک کی بات چیت میں یہ پہلا موقع تھا۔ حکومت پیچھے ہٹنے کو تیار نہیں ہے، حکومت کا رویہ کہیں بھی تعاون والانہیں رہا، وہ کسانوں پر اپنے الفاظ مسلط کرنے کی کوشش کر رہی ہے اور وہ اس مقصد کے ساتھ آگے بڑھ رہی ہے، اب حکومت ہم سے سپریم کورٹ جانے کے لئے کہہ رہی ہے، ہم نے ان پر واضح کردیا کہ ہم عدالت نہیں جائیں گے، کیونکہ کسانوں کا حکومت سے براہ راست تعلق ہے، صرف حکومت ہی کسانوں کے مسائل حل کرسکتی ہے، یہ پالیسی ساز معاملہ ہے، اس میں عدالت کی کوئی جگہ نہیں ہے۔ حکومت کو یہ واضح کرنا چاہئے کہ وہ کسانوں کے ساتھ ہے یا صنعتکاروں کے ساتھ ہے، ہم بحث چاہتے ہیں لیکن حکومت اس بحث کو اختتام تک نہیں لانا چاہتی ہے۔ گذشتہ سات ماہ سے ہم جو مطالبہ ہم کررہے ہیں حکومت اس پر تبادلہ خیال کرنے کے لئے بھی تیار نہیں ہے۔

You might also like