Baseerat Online News Portal

مرکزی فوج کو صرف بنگال نہیں بھیجا جارہا ہے، انتخابی ریاستوں میں تعیناتی ایک باقاعدہ عمل ہے: الیکشن کمیشن

نئی دہلی،22فروری(بی این ایس )
الیکشن کمیشن (ای سی) نے پیر کو کہا کہ مرکزی پولیس دستوں کو خصوصی طور پر مغربی بنگال نہیں بھیجا جارہا ہے بلکہ تمام انتخابی ریاستوں میں تعینات کیا جارہا ہے۔وہیں کمیشن نے کہاکہ یہ کئی دہائیوں سے باقاعدہ عمل ہے۔ الیکشن کمیشن نے ایک بیان میں کہا ہے کہ مرکزی پولیس فورس (سی پی ایف) معمول کے ساتھ ان تمام ریاستوں اور مرکز ی علاقوں میں روانہ کی جاتی ہے جہاں لوک سبھا یا اسمبلی انتخابات ہونے ہیں۔ کمیشن نے کہاکہ مرکزی پولیس دستے باقاعدگی سے پیشہ ورانہ اختیارات کے لئے لوک سبھا اور قانون ساز اسمبلی والی ریاستوں کو باقاعدگی سے بھیجے جاتے ہیں، خاص طور پر ان سنجیدہ اور نازک علاقوں میں جن کا پیشگی جائزہ لیا جاتا ہے اور جن کی سیاسی جماعتوں سمیت مختلف ذرائع سے مضبوط رائے ملتی ہے۔ الیکشن کمیشن نے کہا کہ 1980 کی دہائی سے یہ عمل جاری ہے۔ کمیشن نے کہا کہ اس کے علم میں آیا ہے کہ میڈیا کے کچھ حصوں میں خصوصا مغربی بنگال میں سینٹرل پولیس فورس بھیجنے کی خبر شائع ہوئی ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ 2019 کے لوک سبھا انتخابات کے دوران بھی تمام ریاستوں اور مرکزی علاقوں میں مرکزی فوجیں بھیجی گئیں۔ اسی طرح ان تمام ریاستوں میں جہاں مرکزی انتخابات ہونے ہیں، وہاں مرکزی فوج بھیجی جارہی ہے۔ موجودہ معاملے میں مرکزی پولیس دستوں کو چاروں ریاستوں آسام، کیرالہ، تمل ناڈو، مغربی بنگال اور مرکز ی علاقے پنڈوچیری میں بھیجا گیا ہے۔ ان ریاستوں میں انتخابات ہونے والے ہیں۔کمیشن نے کہا کہ مرکزی پولیس فورس کی تعیناتی کے احکامات اسی دن یعنی 16 فروری کو چیف سیکریٹری، پولیس ڈائریکٹر جنرل اور چیف الیکشن آفیسرز کو جاری کئے گئے تھے۔

You might also like