Baseerat Online News Portal

ووٹرلسٹ میں صرف ۹۰ نام ۱۷۱ لوگوں نے ووٹ ڈالا ، آسام کے پولنگ بوتھ کا واقعہ

گوہاٹی۔ ۶؍اپریل: آسام اسمبلی الیکشن کے دوسرے مرحلے میں ایک بڑی گڑبڑی سامنے آئی ہے۔ حال ہی میں ایک بی جے پی لیڈر کی گاڑی میں ای وی ایم ملنے پر کافی ہنگامہ ہوا تھا، اور اب 90 ووٹرس والے بوتھ پر 171 ووٹ پڑنے کی خبریں سامنے آ رہی ہیں۔ میڈیا میں اس خبر کے سامنے آنے کے بعد لوگ حیران ہیں اور اس بات کا انتظار کر رہے ہیں کہ اس تعلق سے الیکشن کمیشن کیا قدم اٹھائے گی۔ معاملہ سامنے آنے کے بعد انتخابی افسروں میں بھی ہلچل مچ گئی ہے۔ ہندی نیوز پورٹل ’آج تک‘ پر شائع ایک خبر کے مطابق پانچ افسروں کو معطل بھی کر دیا گیا ہے۔میڈیا ذرائع سے موصولہ خبروں کے مطابق آسام میں دوسرے مرحلہ کے دوران دیما ہساؤ ضلع میں ایک پولنگ مرکز میں یہ گڑبڑی سامنے آئی ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ اس پولنگ بوتھ پر صرف 90 ووٹرس ہیں جب کہ یہاں ووٹنگ کے دوران 171 ووٹ پڑے ہیں۔ یہ پولنگ مرکز ہاف لونگ اسمبلی میں آتا ہے۔ 74 فیصد ووٹنگ درج کرنے والے اس سنٹر کی خبر سامنے آنے کے بعد پانچ پولنگ افسر کو معطل کیا گیا ہے اور اب ایسی باتیں بھی چل رہی ہیں کہ اس پولنگ بوتھ پر دوبارہ ووٹنگ کرائی جائے گی۔موصولہ اطلاعات کے مطابق گڑبڑی کی جانکاری ملتے ہی دیما ہساؤ کے پولس ڈپٹی کمشنر اور ضلع الیکشن افسر پال بروا نے 2 اپریل کو ہی مذکورہ افسران کی معطلی کا حکم صادر کر دیا تھا۔ یہ معاملہ پیر کے روز سامنے آیا ہے۔ افسران نے بتایا کہ اس پولنگ مرکز پر صرف 90 ووٹرس کے نام ہی فہرست میں ہیں، لیکن 171 ووٹ پڑ گئے۔ اس معاملے کی اعلیٰ سطحی جانچ کا حکم دے دیا گیا ہے۔کچھ رپورٹس کے مطابق گاؤں کے پردھان نے الیکشن کمیشن کی ووٹر لسٹ کو ماننے سے انکار کر دیا اور اپنی ایک لسٹ لے کر آیا جس کے تحت لوگوں نے حق رائے دہی کا استعمال کیا۔ ایسے میں جانچ کا حکم دے دیا گیا ہے کہ پولنگ مرکز پر سیکورٹی وغیرہ کی بھی جانچ کی جائے۔ ساتھ ہی پردھان کو ایسا کیوں کرنے دیا گیا، اس سوال کا جواب بھی تلاش کرنے کے لیے کہا گیا ہے۔

You might also like