Baseerat Online News Portal

تعزیتی کلام بر وفات مفکرِ اسلام حضرت مولانا سید محمد ولی رحمانی صاحب نوراللہ مرقدہ

 

 

حسیب الرحمن شائق قاسمی

 

دینِ مبیں کا ماہِ درخشاں چلا گیا

شرعِ متیں کا نیّرِ تاباں چلاگیا

 

قائد ،خطیب ،عالمِ ذیشاں چلا گیا

یعنی ولیؒ،وہ ایک دبستاں چلا گیا

 

باطل کی صف میں جس کےسبب تھاوہ غلغلہ

ایوانِ ہند جس سے تھا لرزاں چلا گیا

 

لڑتا رہا ہمیشہ جوبہرِحصولِ حق

اپنا وہ رہنما وہ نگہباں چلا گیا

 

بےباک،حق پرست،نڈر اور صاف گو

دکھلا کے شانِ ہمتِ مرداں چلا گیا

 

گریہ کناں ہےدیکھیےارض وسمابھی آج

یہ کون سوئے شہرِ خموشاں چلا گیا

 

اپنے ہزار لاکھ مریدوں کو وہ ولی

بسمل کی طرح چھوڑکےرقصاں چلاگیا

 

راہِ سلوک کون دکھائے گا اب ہمیں

دنیائے معرفت کا وہ سلطاں چلا گیا

 

تاعمرجس نےہم کو سکھایا رموزِ دیں

وہ آہ ! سوئے رحمت یزداں چلا گیا

 

عصری علوم سے بھی مزیّن ہونسلِ نو

کر کے ہمارے واسطے ساماں چلا گیا

 

فعال وہ امارتِ شرعیّہ کا نظام

بےحدتھاجس پہ بورڈبھی نازاں چلاگیا

 

مولا!ولیؒ کوبخش دےاپنےکرم سےتو

تیرے حضور تیرا وہ مہماں چلاگیا

 

میخانہ ء علیؒ کا وہ پیرِ مُغاں حسیب

رندوں کودےکےضربتِ ہجراں چلاگیا

 

 

حسیب الرحمن شائق قاسمی

امام وخطیب جامع مسجدیکہتہ مدھوبنی

You might also like