Baseerat Online News Portal

نتیش کمارکے وزیرنے ہی بہارکے طبی نظام کوناقص بتایا

پٹنہ19اپریل(بی این ایس )
کورونا کی وجہ سے سابق وزیر تعلیم اور بہار حکومت کے ایم ایل اے ڈاکٹر میوہ لال چودھری کی موت کے بعد سیاست میں شدت آگئی ہے۔ حزب اختلاف کے ساتھ ہی حکمراں جماعت کے لوگ بھی حکومت کو نشانہ بنا رہے ہیں۔ حکومت کی جانب سے کورونا کے دوران ہونے والے کام پر بھی سوالات اٹھائے جارہے ہیں۔ حکومت کے پنچایتی راج کے وزیر سمراٹ چودھری نے اپنی ہی حکومت اور بہار کے ناقص صحت کے نظام پر سوال اٹھایا ہے کہ جب ہم ایم ایل اے اور ممبران اسمبلی کو نہیں بچاسکتے ہیں تو ہم عام لوگوں کو کس طرح بہتر صحت فراہم کرسکتے ہیں۔ کورونا انفیکشن کی وجہ سے ڈاکٹر میوہ لال چودھری کی موت پراپوزیشن جماعتوں کے رہنماؤں نے حکومت کے نظام پر برہمی کا اظہار کیا۔ آر جے ڈی کے ایم ایل اے مکیش روشن نے اس کے لیے بہار حکومت کو مورد الزام ٹھہرایا اور کہا کہ کرونا سے لوگوں کو مارا جارہا ہے اور حکومت ہاتھ جوڑ کر بیٹھی ہے۔تاہم جے ڈی یو نتیش حکومت کے دفاع میں سامنے آئی ہے ۔جے ڈی یو ایم ایل سی کمود ورما نے پنچایت راج کے وزیر سمراٹ چودھری اور آر جے ڈی کے ایم ایل اے ڈاکٹر مکیش روشن کے بیان پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ کسی عہدے یا شخص کو دیکھنے کے بعد کورونا متاثر نہیں ہو رہا ہے۔ کہیں سے بھی بہار کے صحت کے نظام پر سوال اٹھانا مناسب نہیں ہے۔ تمام عام اور خصوصی افراد کا علاج ایک ہی ہموار طریقہ سے کیا جارہا ہے اور حکومت کورونا کی حفاظت اور متاثرہ افراد کے علاج کے لیے مستقل کام کررہی ہے۔ وزیراعلیٰ نتیش کمارخودسارے نظام کی نگرانی کر رہے ہیں۔

You might also like