Baseerat Online News Portal

حکومت گستاخ رسول نرسنگھانند سرسوتی کو فوراً گرفتار کریں

مرکز تحفظ اسلام ہند کی جانب سے سلسلہ ”پیغمبر اسلام محمدؐ نامور غیر مسلم محققین و مفکرین کی نظر میں!“ کا آغاز!
بنگلور: 4؍مئی (پریس ریلیز)مسلمانوں کے نزدیک حضرت محمدؐ کی شخصیت سب سے محترم اور عزیز ہے۔ مسلمان سب کچھ برداشت کرسکتا ہے لیکن حضور اکرم ؐکی شان اقدس میں گستاخی کبھی برداشت نہیں کرسکتا۔ ملعون یتی نرسنگھا نند سرسوتی نے توہین رسالت کر کے جو ذہنی دیوالیہ پن کا ثبوت دیا ہے یہ ملک کی فرقہ وارانہ خیر سگالی کو متاثر کرنے والا ہے۔ نبی ؐ کی شان میں نرسنگھا نند سرسوتی کے ذریعہ گستاخی کرکے جو مذہبی منافرت پھیلائی جارہی ہے وہ دستور ہند کی سخت خلاف ورزی ہے۔حکومت کو چاہئے کہ فوراً ایسے شخص کو گرفتار کریں اور اسکے خلاف جو ملک کے امن و امان کے لیے خطرہ ہے سخت قانونی کارروائی کرے۔ ان خیالات کا اظہار مرکز تحفظ اسلام ہند کی جانب سے تحفظ ناموس رسالت ؐکے عنوان پر منعقد ایک اہم پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرکز تحفظ اسلام ہند کے ڈائریکٹر محمد فرقان نے کیا۔ انہوں نے کہا کہ نبیؐ نے پوری دنیا کو جو انسانیت کا درس دیا ہے اسکا نہ صرف مسلمان بلکہ دنیا کے سبھی مذاہب کے ماننے والے احترام کرتے ہیں۔ بلکہ عظمت مصطفیٰؐ پر غیر مسلم پیشواؤں کے سینکڑوں کتب اور بے شمار اقوال موجود ہیں۔ نرسنگھانند سرسوتی اور پشپیندر جیسے ملعون لوگ بھولے بھالے غیر مسلم بالخصوص ہمارے ہندو بھائیوں کے ذہنوں میں اپنے مکر و فریب اور جھوٹ سے مسلمانوں اور پیغمبر اسلامؐ کے خلاف غلط فہمی پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ ایسے وقت میں جہاں احتجاجی و قانونی کارروائی کی ضرورت ہے وہیں ضرورت ہیکہ ہم حضورؐ کی شان اقدس میں غیر مسلم مفکرین و محققین کے خیالات کو عام کریں تاکہ ہمارے غیر مسلموں کے ذہنوں میں جو غلط فہمی پیدا کی گئی ہے وہ ختم ہو۔ اسی کو مدنظر رکھتے ہوئے مرکز تحفظ اسلام ہند عظمت مصطفیؐ کا چھ روزہ آن لائن سلسلہ بنام ”پیغمبر اسلام محمد صلی اللہ علیہ و سلم نامور غیر مسلم محققین و مفکرین کی نظر میں!“ شروع کرنے جارہا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اس سلسلے میں مرکز کے ناظم اعلیٰ مولانا محمد رضوان حسامی و کاشفی ترتیب وار خطاب فرمائیں گے اور مرکز کے رکن شوریٰ مفتی محمد جلال الدین قاسمی انکی معاونت کریں گے۔ اس سلسلے کی تفصیلات بتاتے ہوئے مرکز کے ناظم اعلیٰ مولانا محمد رضوان حسامی و کاشفی نے فرمایا کہ آئے دن یتی نرسنگھا نند سرسوتی اور پشپیندر اور ان جیسے فرقہ پرست اور آتنکی لوگوں کی جانب سے مذہب اسلام، مقدس قرآن اور پیغمبر اسلام ؐکی شان میں گستاخی اور بے جا اعتراضات و الزامات کی بوچھار ہوتی رہتی ہے، انکا رد مثبت انداز میں کرنے اور حقیقت حال سے تمام لوگوں کو آگاہ کرنے کے لیے یہ سلسلہ شروع کیا جارہا ہے، جس میں تمام غیر مسلم مذاہب کے پیشواؤں، رہنماؤں، محققوں اور مفکروں کے آپؐ سے متعلق اقوال ذکر کیے جائیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ پہلے مرحلے میں ہندو، دوسرے مرحلے میں سکھ اور بدھ اور تیسرے مرحلے میں عیسائی مذہب سے تعلق رکھنے والے مبلغین، اور مفکرین و محققین کے اقوال بیان کیے جائیں گے۔ یہ سلسلہ بروز چہارشنبہ بتاریخ 5؍ مئی2021ء سے آئندہ چھ دنوں تک روزانہ رات 10:45 بجے مرکز تحفظ اسلام ہند کے آفیشیل یوٹیوب چینل اور فیس بک پیج تحفظ اسلام میڈیا سروس پر براہ راست نشر کیا جائے گا۔اس موقع پر پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرکز کے رکن شوریٰ مفتی محمد جلال الدین قاسمی نے فرمایا کہ شان رسالت ؐمیں زبان درازی کرنا اپنی موت آپ مرنے کے مترادف ہے۔ پچھلے چند سالوں سے ملک کی گنگا جمنی تہذیب کو خراب کرنے اور یہاں کے امن و امان کو نیست و نابود کرنے کیلئے ایک سازش کے تحت شان رسالت مآب میں گستاخیاں کی جارہی ہیں۔ جبکہ ہمارے ملک کے آئین کی دفعہ 295 اے اور 153 اے کے مطابق کوئی شخص کسی کی توہین نہیں کرسکتا لیکن افسوس کی بات ہے کہ ملعون نرسنگھانند سرسوتی ہمارے آقا ؐ کی شان اقدس میں مسلسل گستاخیاں کرتا جارہا ہے لیکن ملک کے سیاسی و سرکاری حلقوں میں ایسی دل آزری کا نوٹس نہیں لیا جارہا ہے، بلکہ خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں۔ حد تو یہ ہیکہ ملی و سماجی تنظیموں کی جانب سے جب ایف آئی آر درج کروانے کی کوشش کی جارہی ہے تو محکمہ اسے درج کرنے سے انکار کررہا ہے۔ اسکا واضح مطلب یہ ہیکہ اس ملک میں اب عدل و انصاف ختم ہوتا جارہا ہے اور قانون بطور نام رہ گیا ہے۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرکز کے رکن شوریٰ مولانا سید ایوب مظہر قاسمی نے فرمایا کہ نرسنگھانند سرسوتی نے ملک میں امن وامان کو نیست و نابود کرنے، یہاں افراتفری، عدم رواداری اور عدم تحمل میں اضافہ کرنے، لوگوں میں نفرت اور عداوت پیدا کرنے اور ہندو مسلم کے درمیان دشمنی اور فساد پربا کرنے کیلئے شان رسالت مآبؐ میں گستاخی کی ہے۔ لیکن مسلمانوں نے صبر و تحمل کا مظاہرہ کرتے ہوئے قانونی طور پر کارروائی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرکز تحفظ اسلام ہند کے ذمہ داران نے حکومت سے پرزور مطالبہ کرتے ہوئے واضح طور پر فرمایا کہ حکومت ملعون نرسنگھانند سرسوتی اور ان جیسے بدبختوں کو فوراً گرفتار کریں اور انہیں سخت سے سخت سزا دیں تاکہ وہ دوسروں کیلئے نشان عبرت ثابت ہوں اور ملک میں گنگا جمنی تہذیب اور امن و امان باقی رہے۔ اس موقع پر مرکز کے آرگنائزر حافظ محمد حیات خان نے تمام مذاہب کے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ مرکز کی جانب سے شروع ہونے والے عظمت مصطفیٰؐ کا چھ روزہ آن لائن سلسلہ ”پیغمبر اسلام محمد صلی اللہ علیہ و سلم نامور غیر مسلم محققین و مفکرین کی نظر میں!“ میں ضرور شرکت کریں اور اسے زیادہ سے زیادہ عام کرنے کی کوشش کریں۔ قابل ذکر ہیکہ پریس کانفرنس میں مرکز تحفظ اسلام ہند کے اراکین شوریٰ قاری عبد الرحمن الخبیر قاسمی بستوی اور مولانا محمد نظام الدین مظاہری وغیرہ بھی بطور خاص شریک تھے۔

You might also like