Baseerat Online News Portal

ماسٹر امجد علی کو صدمہ، والدہ کا انتقال

 

جالے: 4 مئی (رفیع ساگر /بی این ایس) مقامی بلاک کے دوگھرا گاوں باشندہ امجد کلاسیز کے ڈائریکٹر ماسٹر امجد علی کی والدہ رویدا خاتون کا منگل کو مختصر علالت کے بعد انتقال ہوگیا۔وہ تقریبا 60 برس کی تھیں۔مرحومہ دیندار، مخلص، صوم و صلواۃ کی پابند کے ساتھ ساتھ نہایت سادہ زندگی گزاری اور اپنے اعلی اخلاق کی وجہ سے ہر طبقے میں یکساں مقبول رہیں۔پسماندگان میں 2 بیٹے انور علی اور ماسٹر امجد علی کے علاوہ 2 بیٹیاں اور شوہر شامل ہیں۔ان کے جنازے کی نماز گاوں کے مغربی محلہ واقع گرلس اردو مکتب کے احاطے میں ادا کی گئی۔جنازے کی نماز بعد نماز عصر حافظ اطہر حسین نے پڑھائی جس میں کورونا پروٹوکول کے مطابق لوگ شامل ہوئے اور نم آنکھوں کے ساتھ لتراہا قبرستان میں سپرد خاک کیا۔مرحومہ کے انتقال پر مولانا ماسٹر عبدالمغنی، ڈاکٹر سرفراز احمد، مولانا عظمت اللہ قاسمی، حافظ حفظ الرحمن،ماسٹر کشف الدجی لڈن، انوار احمد، اطہر راغب، اصغر حسین، نظر عالم، اسمائیل انصاری، قمرالزماں، مولانا رضاء اللہ قاسمی، انجینئر شہزاد تمنا سمیت کئی سرکردہ شخصیات نے گہرے صدمے کا اظہار کیا ہے۔

وہیں پیام انسانیت ٹرسٹ کے چئرمین مولانا محمد ارشد فیضی قاسمی، دوگھرا اساتذہ گروپ سمیت یہاں کی دیگر موقر شخصیات نے ماسٹر امجد علی سے اظہار تعزیت کرتے ہوئے ان کی والدہ کے انتقال پر گہرا دکھ جتایا ہے۔غور طلب ہو کہ مرحومہ نہایت نیک سیرت،عبادت گزار اور خلیق انسان تھیں جس کی وجہ سے سماج میں ان کا احترام ہوتا تھا۔مولانا فیضی نے اپنے تعزیتی پیغام میں کہا کہ دکھ کی اس لمحے میں میں ماسٹر امجد کے ساتھ برابر کا شریک ہوں اور ان کے غم کو اپنا غم مان کر انہیں صبر کی تلقین کرتا ہوں۔

You might also like