Baseerat Online News Portal

سعودی عرب اور امارات میں 50 سے 70 فیصد تک ملازمت میں اضافہ

آن لائن نیوزڈیسک
پروفیشنل سوشل نیٹ ورک لنکڈ اِن کی ایک تحقیق کے مطابق کورونا وائرس کی وبا سے نمٹنے کے بعد سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات میں 50 اور 70 فیصد کے درمیان ملازمت میں اضافہ ہوا ہے۔
عرب نیوز کے مطابق لنکڈ اِن کے مشرق وسطیٰ ڈویژن کے سربراہ علی مطیر نے کہا ہے کہ ملازمت میں اضافہ خوردنی اشیا کے شعبے سے ہوا جس کی وجہ سے ملازمت میں 72 فیصد اضافہ ہوا ہے۔
اخبار الشرق کے ساتھ ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ صحت کے شعبے میں بھی ملازمت کی شرح زیادہ ہے۔
علی مطیر نے کہا کہ ’وبا سے پہلے کی بنسبت اب ہم ملازمتوں میں اضافے کی شرح میں اضافہ دیکھ رہے ہیں جس کا مطلب ہے کہ معیشت بحال ہو رہی ہے۔‘
انہوں نے مزید کہا کہ ہر 15 سیکنڈ بعد بھرتی کا عمل لنکڈ اِن کے ذریعے ہوتا ہے۔
علی مطیر نے دعویٰ کیا کہ ڈیجیٹل مہارت اور کسٹمر سروسز کی مانگ میں اضافہ ہوا ہے۔
’آج کے لیبر مارکیٹ کی ضروریات کی فہرست میں ڈیجیٹل مہارت سب سے سرفہرست ہے۔ اس کے بعد کسٹمر سروسز کا تجربہ۔ خوردنی اشیا کے شعبے میں دونوں مہارتوں کی مانگ ہے۔‘
لنکڈ اِن نے ایک سروے کیا جس میں سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے ایک ہزار سے پروفیشنل سے گھر سے کام کے بارے میں پوچھا گیا۔
سروے سے معلوم ہوام ہے کہ اگر زیادہ تر لوگ گھر سے کام کرنے میں بہتر محسوس کرتے ہیں تو 70 فیصد کا خیال یہ ہے کہ اس سے ان کے سوشل سکلز متاثر ہو سکتے ہیں۔
اس تحقیق میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ 40 فیصد ملازمین کا خیال ہے کہ گھر سے کام کرنا کام اور زندگی میں توازن حاصل کرنے میں معاون ہے۔

You might also like