Baseerat Online News Portal

مولانا کلیم صدیقی کی گرفتاری جمہوریت کا کھلا مذاق

 

از: محمد عظیم فیض آبادی دارالعلوم النصرہ دیوبند

9358163428

ــــــ ــــــ ــــــ ــــــ ــــــ ــــــ

جیسے جیسے الیکشن قریب آرہاہے یوگی حکومت اپنی ناکامیاں چھپانے کے لئے نئے نئے طریقوں کا استعمال کر رہی ہے نفرت کی پٹریوں پر دھوکے کی ریل چلانے والی بھاجپا حکومت کے کالے کرتوتوں کا پٹارہ اب پوری طرح کھل گیا ہے غریب مزدورکی تباہی اور بھوکھمری کے بعد اب کاروباری طبقہ اور نوکری پیشہ حضرات کو بھی مہگائی نے فٹ پات پر لاکھڑا کیا ہے کورونا کی دوسری لہر میں آکسیجن کے لئے تڑپ ٹرپ کر مرنے والوں کے ورثا کے سر بھی ہندوتو کا بھوت اترتا ہوا اب بی جے پی کو محسوس ہو رہاہے، گنگا کی لاشوں سے کھینچی ہوئی کفن کی چادریں بھی اب ان کی ناکامیاں چھپانے سے قاصرہیں، یوگی مودی کی تصویر والے چمکتے ہوئے تھیلوں میں پانچ کلو سڑے ہوئے اناج کی بھیک بھی کچھ امید جگانے کے بجائے بھاجپا کی نیتوں کو اجاگر کرکے عوام کی ناراضگی میں اضافے کا ذریعہ بن گئے مایوسی کے بادل کسی بھی طرح چھٹنے کے لئے تیار نہیں

کسانوں کی ناراضگی اور مسلسل ان کے احتجاجات سے نا امیدی بڑھتی گئی اور مظفر نگر میں کسانوں کے اسٹیج سے اللہ اکبر کے نعروں نے گھبرائی بوکھلائی ہوئی یوگی حکومت اب نئے نئے حربوں کا بے دریغ استعمال کرنے پر آمادہ ہے آئین وقانون اور جمہوریت کو بالائےطاق رکھ کر ایسے لوگوں کو گرفتار کر رہی ہےجومعاشرے کو محبت کی شیرینی تقسیم کرامن وامان کی فضا ہموار کر رہے ہیں جو ” دامن نچوڑ دیں تو فرشتے وضوکریں ” کے مصداق ہیں صرف مسلم دشمنی کی بنیاد پرجمہوریت کے تانے بانے کو بکھیرتے ہوئے مسلم دشمنی اجاگرکیا جارہاہے تاکہ ایک مخصوص طبقہ کی ہمنوائی حاصل کر کے مذہبی منافرت پھیلاکر اقتدار کی راہیں ہموار کی جا سکیں

لوجہاد کا ڈھکوسلہ ہویا مسلمانوں کی ماب لنچنگ، عمر گوتم و مفتی جہاگیر کی گرفتاری ہو یا *اب ہندستان کے چپہ چپہ پر امن ومحبت وبھائی چارے کا پیغام دینے والے ہندوستانی مسلمانوں کے دل کی ڈھڑکن حضرت مولانا کلیم صدیقی کی حراست* سب اسی پس منظر میں ہے اور یہ سب یوگی حکومت کی ناکامی کی دلیل ہے

مولانا کلیم صدیقی نے نہ صرف ہندوستان بلکہ بیرون ممالک میں بھی ہندوستان کا نام روشن کرنےمیں اہم کردار ادا کیا بلکہ ملک کے بھائی چارے اور جمہوری اقدارکو فروغ دینے میں ان کا بہت نمایا رول رہا ہے تعلیمی میدان میں بھی ان کی خدمات قابل قدر ہیں

جو لوگ امن وامنن کے لئے خطرہ ہیں جو علی الاعلان مسلمانوں کو خوف زدہ کر رہے ہیں مسجدوں کو ٹوڑ کر مندر بنانے کی دھمکیاں دینے والے سنگیت سوم اور نرسنگھا نند جیسا کھلے سانڈ کی طرح گھوم رہا ہے اور ملک کے امن وامان کی کھیتیاں تباہ کر رہا ہے اس کی ناک میں نکیل ڈالنے کے لئے نہ کوئی ایف آئی آر ہےنہ کہیں اے ٹی ایس نہ کوئی UAPA نہ کبھی NSA کیونکہ منافرت

اس میں کوئی شک نہیں کہ جھوٹ اور نفرت کے کمزور ستونوں پرکھڑی بی جے پی حکومت کی عمارت اب اپنے آخری دن گن رہی ہے اور

یوگی کو اب اپنی کرسی بچانے کا اس قدرجنون سوار ہے کہ وہ اس کے لئے نہ معلوم کتنے بے گناہ کو سیاست کی بھیٹ چڑھائیں گے لیکن انھیں یہ نہیں بھولنا چاہئے کہ کسی قوم کی لاشوں سے گذرکر حاصل ہونے والا اقتدار زیادہ دنوں تک قائم نہیں رہ سکتا

قانون کا نفاذ سب کے لئے یکساں ہونا چاہئے اورمجرم کو کبھی بھی مذہب کے آئینے سے نہیں بلکہ آئین وقانون کے چشمے سے دیکھنے کی ضرورت ہے جبھی ہر ایک کے ساتھ عدل وانصاف کو روا رکھا جا سکتا ہے اور معاشرے میں امن وامان کی فضا ہموار کی جا سکتی ہے ورنہ ظلم وناانصافی کسی بھی ملک ومعاشرے کی تباہی کا پیش خیمہ ثابت ہوتے ہیں اور معاشرے کا چین وسکون ملک وقوم کے ترقی سب پر پٹہ لگ جا جاتا ہے

You might also like