Baseerat Online News Portal

مولانا کلیم صدیقی سے جڑے مزید تین افراد گرفتار، اے ٹی ایس کا کھاتوں میں 20کروڑ ملنے کا دعویٰ

لکھنؤ : 26؍ستمبر(بی این ایس)
غیر قانونی تبدیلی مذہب معاملہ میں مولانا کلیم صدیقی سےجڑے تین مزید لوگوں کو اے ٹی ایس نے گرفتار کرلیا۔ ان میں پھلت کےحافظ محمدادریس قریشی اور محمد سلیم ہیں۔ حافظ ادریس گزشتہ کئی دنوں سے لاپتہ تھے ۔ تیسرے شخص کا نام کنال اشوک چودھری عرف عاطف ہے، جو ناسک کا رہنے والا ہے۔ اے ڈی جی لاء اینڈآرڈر پرشانت کمار نے بتایا کہ مولانا سے ریمانڈ کے دوران تفتیش کے بعدان لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے ۔ انہوں نے دعویٰ کیاکہ مولانا سے تفتیش کے بعد کئی اہم سراغ ملے ہیں۔ ان کے ادارے جامعہ امام ولی اللہ ٹرسٹ سے متعلق کھاتوں میں 20 کروڑ روپے آنے کی بات شامل ہے۔ اس میں سے کافی رقم مبینہ طور پر اپنے ساتھ کام کرنے والوں کو دی ہے ، جو پیسے ٹرسٹ کے کھاتوں میں آئے اس کاذریعہ نہیں بتاسکے۔

امر اجالا کی رپورٹ کے مطابق اے ڈی جی نے کہاکہ مولانا کلیم نے بتایا کہ دھرم پریورتن کرانے کے بعد غیرملکوں میں موجود اپنے معاونین کو آگاہ کرتے تھے جس کے عوض موٹا پیسہ ملتا تھا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ وہ جہاں بھی جاتے ہیں گرفتار شدہ تینوں لوگ ان کے ساتھ رہے۔ سیلم 17 سال سے اور ادریس 20 سال سے ان کے ساتھ ہیں۔ کنال نے روس میں اسلام قبول کیا جہاں اس نے میڈیکل کے تعلیم کے دوران اسلام قبول کیا۔ فنڈنگ کےذریعہ حافظ ادریس نے پھلت میں 60 لاکھ کا مکان بنوایا ، ڈھائی لاکھ روپے کی موٹر سائیکل لی۔ اس کا پیسہ کہاں سے آیا، وہ بتا نہیں سکے۔ مولانا اورحافظ ادریس کے دہلی اور مظفر نگر میں بھی املاک ہے۔ اے ٹی ایس کا کہنا ہے کہ یہ سارا کام سماجی ہم آہنگی کے نام پر ہورہا تھا۔ واضح رہے اب تک اس معاملہ میں 14 گرفتاریاں ہوچکی ہیں۔

You might also like