Baseerat Online News Portal

پروین شاکر کی یوم پیدائش پر خصوصی

 

خرّم ملک کیتھوی

موبائل – 9304260090

 

ویسے آج ہی 24 نومبر 1952 اردو ادب کی ممتاز شاعرہ محترمہ پروین شاکر صاحبہ کی بھی یومِ پیدائش ہے،

پروین شاکر کو اردو کی منفرد لہجے کی شاعرہ ہونے کی وجہ سے بہت ہی کم عرصے میں وہ شہرت حاصل ہوئی جو بہت کم لوگوں کو حاصل ہوپاتی ہے

انگریزی ادب اور زبان دانی میں گریجویشن کیا اور بعد میں انہی مضامین میں جامعہ کراچی سے ایم اے کی ڈگری حاصل کی۔ پروین شاکر استاد کی حیثیت سے درس و تدریس کے شعبہ سے وابستہ رہیں

پروین کی شادی ڈاکٹر نصیر علی سے ہوئی جس سے بعد میں طلاق لے لی۔

شاعری میں آپ کو احمد ندیم قاسمی صاحب کی سرپرستی حاصل رہی۔ آپ کا بیشتر کلام اُن کے رسالےفنون میں شائع ہوتا رہا۔

شاکر کی شاعری میں سب سے اہم موضوعات محبت، نسائی، اور سماجی محاذ ہیں، اگرچہ انہوں نےکبھی کبھی دوسرے موضوعات پر بھی لکھا. ان کا کام اکثر رومانیت پر مبنی تھا، پیار، خوبصورتی اور ان کے تضادات کے تصورات کی تلاش میں وہ ہمیشہ سرگرداں رہیں۔۔۔۔

ادب میں آپکی گراں قدر خدمات کے اعتراف میں حکومت پاکستان نے آپ کو

Pride of Performance Award (1976) اور Adamjee Award سے نوازا

 

تخلیقات

خوشبو (1976ء)،

صد برگ (1980ء)،

خودکلامی(1990ء)،

انکار (1990ء)

ماہ تمام (1994ء)

 

انکی شاعری کا موضوع محبت اور عورت ہے

 

26 دسمبر 1994ء کو ٹریفک کے ایک حادثے میں اسلام آباد میں ، بیالیس سال کی عمر میں مالک حقیقی سے جا ملیں۔ لواحقین میں ان کے بیٹے کا نام مراد علی ہے۔

You might also like