Baseerat Online News Portal

ظلمت کے غضب سے نہیں ڈرتا کوئی سورج

غزل

افتخار راغب، دوحہ قطر

ظلمت کے غضب سے نہیں ڈرتا کوئی سورج

تاریکی بڑھی حد سے کہ ابھرا کوئی سورج

 

کیا بھول گئے سارے اماوس کے پرستار

کرتا ہے ہر اِک رات کا پیچھا کوئی سورج

 

ظلمات سے ہے نور کی یہ جنگ پرانی

لڑتا ہے اندھیروں سے ہمیشہ کوئی سورج

 

ہوتے ہیں کئی چاند نمودار فلک پر

دیتا ہے جب انوار کا صدقہ کوئی سورج

 

جو تیرگیِ وقت کی وحشت سے ہو خائف

مومن کوئی ایسا ہے نہ ایسا کوئی سورج

 

ظلمت کی گھٹا چیر کے پھر تیرہ نصیبو!

نکلے گا دمِ صبح چمکتا کوئی سورج

 

کیسے نہ تِرے فن کی ضیا بکھرے جہاں میں

سچ ہے کہ چھپائے نہیں چھپتا کوئی سورج

 

لڑنا ہے اندھیروں سے تو مت دیر لگاؤ

’’لاؤ کوئی جگنو، کوئی تارا، کوئی سورج‘‘

 

اِس درجہ اُجالوں سے ہے رغبت مجھے راغبؔ

ہوتا نہ میں انسان تو ہوتا کوئی سورج

 

افتخار راغبؔ

دوحہ، قطر

کتاب: خیال چہرہ

You might also like