Baseerat Online News Portal

عمران وزیر اعظم بننے کی جدوجہد کے بجائےSAARC میں ریاست مدینہ کے لیے PTI کو مسابقتی اور جدید اسلام کے ذریعے مضبوط کرے

محترم ایڈیٹر!
پاکستان میں لوگ سابق وزیراعظم عمران خان کی حمایت میں سڑکوں اور جلسوں میں بڑی تعداد میں آ رہے ہیں جو کہ کوئی حیران کن بات نہیں۔ عام تاثر کے مطابق عمران کو امریکہ کی مبینہ سازش کی وجہ سے 10 اپریل کو تحریک عدم اعتماد کے ذریعے عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔ مسلم دنیا (بشمول پاکستان) آج کل امریکہ کے خلاف کسی بھی بات (صحیح یا غلط) پر یقین کرنے کو تیار ہے لہذا وہ کسی بھی ایسے رہنما کی حمایت کریں گے جو امریکہ کو ٹکراتے ہوئے نظر آئے گا۔ اگر پاکستانیوں کا یہ جذباتی اظہار قلیل مدتی نہ بھی ہو تو بھی عمران اگر دوبارہ پاکستان کا وزیراعظم بننے کی کوشش کرتا ہے تو پاکستان میں ریاست مدینہ کے قیام کے مفاد میں کچھ حاصل نہیں کر سکے گا۔ لہٰذا (یہ فرض کرتے ہوئے کہ عمران ریاست مدینہ کے بارے میں واقعی سنجیدہ ہیں اور اسے محض وقتی طور پر وزارت عظمیٰ کے اقتدار پر قبضہ کرنے کے لیے استعمال نہیں کر رہے ہیں) عمران کو (پاکستان میں اپنے جلسوں کو جاری رکھتے ہوئے) اپنی پارٹی ‘پاکستان تحریک انصاف’ (PTI) کو مسابقتی اسلام کے ذریعے پورے SAARC (سارک) خطے میں ریاست مدینہ کے قیام کے لیے مضبوط کرنے کے لیے، جیسا کہ ذیل میں ذکر کیا گیا ہے, کوشش کرنی چاہیے:-
(A) عمران کو معلوم ہونا چاہیے کہ جب بطور وزیر اعظم وہ ساڑھے تین سال میں معیشت، کرپشن، فوری انصاف وغیرہ کے لیے [ریاست مدینہ کی فلاحی ریاست کے لیے] تسلی بخش طور پر کچھ بھی نہیں کر سکے تو پھر وہ دوبارہ وزیر اعظم بن کر بھی کیسے کریں گے۔ مزید یہ کہ عمران کو یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ کسی بھی جمہوریت میں لوگوں کو محنت اور ذمہ داریاں نبھانی پڑتی ہیں اور وہ براہ راست کچھ نہیں کر سکتےبلکہ صرف شراکتی سیاسی جماعتوں کے ذریعے کر سکتے ہیں ۔
(B)- عمران کو یہ بھی سمجھنا چاہیے کہ جب تک پاکستان نہ صرف تھیوکریسی اور ‘دو قومی نظریہ’ کا دفاعی رویہ ترک نہیں کرتا بلکہ پورے SAARC خطے کو جدید اسلام میں تبدیل کرنے کی کوشش نہیں کرتا ہے، عمران جو بھی ریاست مدینہ, اسلام وغیرہ کی بات کر رہا ہے، محض ایک خواب اور کھوکھلی بیان بازی ہے۔ اس کے بجائے عمران اسلام کے مذہبی رہنماؤں کے ساتھ مل کر ایسا کر سکتے ہیں (i) اسلام کو مسابقتی اور جدید ترین اسلام بنا کر اور (ii)- علامہ اقبال، جناح وغیرہ کا شکست خوردہ رویہ ترک کرکے جو یہ نہیں سمجھتے تھے کہ اسلام آریائی غلبہ والے برصغیر پاک و ہند کو تبدیل کرنا چاہتا ہے (جیسا کہ ہمسایہ اور سرحدی اشتراکی پورے آریائی ایران پر غلبہ حاصل کیا اور اس نے اسلام قبول کرلیا). برصغیر پاک و ہند کو اسلام میں تبدیل کرنے کے بجائے [جیسا کہ مسلمان (دیگر مذاہب کے ماننے والوں کی طرح) بجا طور چاہتے ہیں]. لیکن انہوں نے اپنے مسلمان پیروکاروں کو پاکستان کے ایک چھوٹے سے کونے (مشرق اور مغرب) میں قید کردیا جو کہ اسلام کی روح کے خلاف ہے۔
پورے برصغیر پاک و ہند (سارک ریجن) کو جدید اسلام میں (تلوار/ زبردستی کے ذریعے نہیں جیسا کہ مختلف اوقات کے ماضی میں ایران میں کیا گیا تھا بلکہ پرامن طریقے سے اور عصری انسانی حقوق کی دوست دنیا میں آزادانہ انتخاب سے) تبدیل کرنے کے لیے، عمران کو محض درج ذیل کام کرنا ہوں گے:-
(1)- سب سے پہلے عمران کو یہ سمجھنا چاہیے کہ اسلام نہ صرف جدید ترین مذہب ہے (کیونکہ یہ تجرید کی عبادت کرتا ہے اس لیے جدید سائنس اور ٹیکنالوجی کے مطابق ہے) بلکہ یہ ایک سادہ مذہب بھی ہے جو اس کا سب سے مشکل حصہ ہے (کیونکہ سادہ ہونا مشکل ہے)۔ لہٰذا عمران کو اسلام کے نام پر کوئی گیم نہیں کھیلنی چاہیے کیونکہ اس دنیا میں ایسے لوگ موجود ہیں جنہوں نے قرآن صرف پڑھا ہی نہیں بلکہ اس کے بنیادی اصولوں پر عمل بھی کیا ہے۔ لہٰذا اگر عمران اسلام کے ساتھ کھیل کھیلنے کی کوشش کرے گا تو یہ نہ صرف ایسے حقیقی مسلمانوں (حالانکہ وہ منظم اسلام کی پیروی نہیں کر رہے ہوں گے اور پانچ وقت کی نماز بھی نہیں پڑھ رہے ہوں گے) کو معلوم ہو گا بلکہ اس سے اللہ کا غضب بھی ہو سکتا ہے۔
(2)- عمران کو چاہیے کہ وہ سارک خطے کے تمام ممالک میں تحریک انصاف کی پارٹیاں شروع کریں۔ کیونکہ ہندوستان (جو سماجی طور پر نچلی ذاتوں، نام نہاد دلت، SC اور ST اور پسماندہ ذاتوں کے مصائب سے بے نیاز ہے) کو جدید اسلام میں تبدیل کرنا بہت آسان ہے۔ اس لیے سب سے پہلے عمران کو انڈیا-تحریک انصاف (ITI) کا آغاز کرنا چاہیے اور ساتھ ہی سارک سے بات کرنی چاہیے تاکہ ایسا طریقہ کار تیار کیا جا سکے جہاں سارک ممالک میں تحریک انصاف کی یہ جماعتیں (اسی طرح Pan-SAARC دیگر سیاسی جماعتیں) سارک میں رجسٹرڈ ہوں۔ جب تک سارک ایسا میکنزم تیار نہیں کرتا، عمران کو سارک کے ہر ملک میں کچھ لوگ آسانی سے مل سکتے ہیں جو اپنے ملکوں میں تحریک انصاف کی پارٹیاں شروع کریں گے۔
(3)- سارک کے ہر ملک میں (بشمول پاکستان) عمران کو تحریک انصاف کی ان جماعتوں سے سیکولرازم کی پالیسی اپنانے کے لیے (جو کہ آزاد ذہن کے لیے ضروری ہے جو طاقتور جدید سائنس اور ٹکنالوجی کی ترقی کے لیے ضروری ہے۔ ) اور بین جماعتی جمہوریت کے لیے کہنا چاہیے جہاں (i) پارٹی کے نیچے سے اوپر تک تمام عہدیداروں کا انتخاب نچلی سطح کے ارکان کے ذریعے کیا جائے گا اور (ii) پارٹی امیدواروں (پارلیمنٹ، قانون ساز اسمبلیوں اور مقامی باڈیز کے لیے) کو پارٹی کی طرف سے مالی اعانت فراہم کی جائے گی (کیونکہ منتخب نمائندے ان لوگوں کے لیے کام کرتے ہیں جو ان کو انتخابات میں مالی معاونت کرتے ہیں)۔
(4) – ہندوستان کے معاملے میں عمران کے لیے مرکز، ریاستوں اور ہندوستان کے مقامی اداروں میں اپنی پارٹی ITI کو اقتدار میں لانا بہت آسان ہو گا اگر ITI صرف مندرجہ ذیل کام کرے ):-
(i) – ہندوستان کی تقریباً دو تہائی آبادی مکمل یا جزوی طور پر کھیتی کی آمدنی پر منحصر ہے اور کسان کھیتی کی پیداوار کی غیر منافع بخش قیمتوں کی وجہ سے لاکھوں میں خودکشی کر رہے تھے اس لیے وہ ‘دھرنوں’ سمیت اپنی روزی روٹی کے لیے احتجاج کر رہے تھے ( دہلی کی سرحدوں پر نومبر 2020 سے ایک سال سے زیادہ عرصے تک)۔ کسان بنیادی طور پر اس وقت 23 اشیاء کی ‘قانونی طور پر قابل نفاذ کم از کم امدادی قیمت’ (LEMSP) چاہتے ہیں (جسے کسان پھلوں، سبزیوں، دودھ کی مصنوعات وغیرہ سمیت تقریباً 40 اشیاء تک بڑھانے کا مطالبہ کر رہے ہیں) لیکن کسانوں کے رہنما اور ہندوستان کی تمام سیاسی پارٹیاں سمجھوتہ کر رہے ہیں اس لیےتقریباً 10 لاکھ جعلی کسانوں سے (جو سیاسی طور پر طاقتور ہی) تقریباً 1,000 لاکھ کروڑ روپے انکم ٹیکس (2,200 لاکھ کروڑ سے زیادہ کا تقریباً 45%) کی وصولی کا مطالبہ نہیں کر رہے ہیں (جیسا کہ میڈیا میں رپورٹ کیا گیا اور اپریل 2016 میں پارلیمنٹ میں زیر بحث آیا) . حالانکہ یہ بہت بڑی رقم ہندوستان میں کسانوں اور دوسروں کے تمام مسائل حل کرسکتا ہے۔
(ii) – عمران کو صرف ITI کے ذریعے تقریباً 40 اشیاء کے لیے LEMSP کا مطالبہ کرنا ہے [اس کے لیے ‘عوامی تقسیم کے نظام’ (PDS) کے جامع انفراسٹرکچر کے ساتھ, جو کہ 1,000 لاکھ کروڑ روپے کے مالی وسائل سے قائم کیے جا سکتے ہیں۔ جہاں یہ 40 LEMSP آئٹمز PDS کے ذریعے حکومت کی طرف سے خریدے اور فروخت کیے جائیں گے] اور پھر کوئی بھی چیز ITI کو ہندوستان کے سیاسی منظر نامے پر غلبہ حاصل کرنے سے نہیں روکے سکے گی۔
(iii)- لیکن عمران اور ITI کو کچھ حاصل نہیں ہوگا اگر سب سے پہلے برصغیر پاک و ہند سے فرقہ وارانہ زہر کو ختم نہ کیا گیا اور ہند چین تعلقات بہتر نہ ہوئے۔ خوش قسمتی سے عمران آسانی سے ایسا کر سکتے ہیں اگر ITI مطالبہ کرے – (a)- جموں و کشمیر اور بلوچستان میں رائے شماری (b) – تقریباً 16 کروڑ ہندوؤں، مسلمانوں اور سکھوں (اور ان کی اولاد) کی دوہری شہریت جو تقسیم ہند کے دوران غیر قانونی طور پر ہندوستان , بنگلہ دیش اور پاکستان سے بے گھر ہوئے تھے اور (c) – اقوام متحدہ کے عدالتی کمیشن کے ذریعے (جموں و کشمیر پر ہندوستان اور پاکستان کے درمیان سیاسی تنازعہ کے برعکس) ہندوستان اور چین کے درمیان قانونی سرحدی تنازعہ کو حل کرنا (d) – مذہبی آزادی کو ایک بنیادی حق بنانا (بشمول پاکستان میں جہاں لوگ پرامن طریقے سے اور اپنی آزادانہ پسند سے اسلام چھوڑ کر کسی دوسرے مذہب میں تبدیل ہو سکتے ہیں)۔
(5)- یہ جاننے کے لیے سیاسیات کے ذہین کی ضرورت نہیں ہے کہ ایک بار جب عمران اور ان کی پارٹی ITI ہندوستان میں کامیاب ہو جاتی ہے (جو کہ اس وقت بہت آسان ہے) تو باقی سارک خطے کو اپنی جماعتوں (تحریک انصاف) کے سیاسی تسلط کے تحت لانا بہت آسان ہو جائے گا بشمول سری لنکا جس کو (چین کی وجہ سے بھی) معاشی تباہی کا سامنا ہے کیونکہ وہ اپنے غیر ملکی قرضوں میں پہلے ہی نادہندہ ہے۔
لہٰذا، عمران خان کو وزارت عظمیٰ کے وقتی اقتدار کی خواہش کرنے کے بجائے اس موقع کو (جو اللہ نے انہیں ایک مقصد کے لیے دیا ہے) بروئے کار لاتے ہوئے تقریباً 2 ارب لوگوں کے فائدے کے لیے پورے سارک خطے کو نہ صرف سیکولر ریاست مدینہ کے سیاسی نظام کے تحت بلکہ جدید، ترقی پسند اور مسابقتی اسلام کے تحت بھی لانا چاہیے۔۔

آپ کا مخلص
ہیم راج جین
شکوپی، MN، USA
Whatsapp: +91-7353541252 Mo: +1-9524911507

You might also like