Baseerat Online News Portal

شہبازحکومت کی کامیابی تبھی ممکن ہےجب۔۔۔!

شہباز حکومت تب ہی کامیاب ہوگی جب عمران کے سیاسی حقوق، فرقہ واریت کا خاتمہ، یوکرین کی حمایت اور کشمیریوں اور نواز، زرداری وغیرہ کو انصاف یقینی بنایا جائے
گزشتہ 20 دنوں کے دوران یہ پاکستان کے وزیر اعظم شہباز شریف کے لیےمخلوط نتائج کی مدت ​​رہا ہے جہاں انہوں نے بہت سے اچھے کام کیے (جس کی ان سے توقع کی جاتی تھی کیونکہ وہ ایک اچھے ایڈمنسٹریٹر تصور کیے جاتے ہیں) لیکن اس سے شہباز کے سیاسی سرمایہ میں زیادہ اضافہ نہیں ہوگا. شہباز نے دو بڑی سیاسی غلطیوں کا بھی ارتکاب کیا، ایک اپنے بیٹے حمزہ کو وزیراعلیٰ پنجاب لگانا جو قانونی تو ہو سکتا ہے (عدالتی حکم کی وجہ سے) لیکن جائز نہیں کیونکہ یہ عمران کی پارٹی کے منحرف افراد کی حمایت سے تھا اس لیے اس نے عمران کو سیاسی طور پر فائدہ پہنچایا۔
دوسرا سعودی عرب میں مسجد نبوی میں نعرے لگانے پر مضحکہ خیز FIR ایف آئی آر 150 کے خلاف بشمول عمران، پی ٹی آئی کے عہدیداران، ممبران اور دیگر کے خلاف درج کروانا ان لوگوں کے خلاف بھی جو جائے وقوع پر موجود نہیں تھے [ایسی ایف آئی آر پولیس درج نہیں کر سکتی حکومت کی رسمی منظوری کے بغیر، (جو اس وقت مسلم لیگ ن کی حکومت ہے) کیونکہ .Cr.P.C کے سیکشن 196 کے مطابق کوئی بھی عدالت P.P.C کی دفعہ 295-A وغیرہ کے تحت قابل سزا جرم کا نوٹس نہیں لے گی جب تک کہ وفاقی حکومت یا متعلقہ صوبائی حکومت کے حکم سے یا اس کے تحت کی گئی شکایت پر]۔ بلکہ شہباز حکومت کو ایسی ایف آئی آر صرف سعودی عرب حکومت کی درخواست پر درج کرنی چاہیے تھی لیکن سعودی عرب کی طرف سے ایسی کوئی درخواست نہیں تھی اس لیے شہباز حکومت نے غیر ضروری طور پر ’بادشاہ سے زیادہ وفادار‘ بننے کی کوشش کی اور اس کا ایک بار پھر عمران کو سیاسی فائدہ ہوا۔
میڈیا رپورٹس کے مطابق اعلیٰ عدلیہ ان دونوں معاملات میں مداخلت کر چکی ہے اور امید ہے کہ عدلیہ شہباز حکومت کو مزید سیاسی نقصان نہیں پہنچنے دے گی۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ اس وقت پاکستان میں سیاسی ماحول بہت زیادہ چارج ہے کیونکہ عمران کی طرف سے جہادی اسلام اور امریکہ مخالف جذبات کو استعمال کرتے ہوئے تحریک عدم اعتماد (جس میں عمران کو 10 اپریل کو عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا) کے خلاف بیانیہ تیار کیا گیا ہے لیکن اس بیانیہ میں شہباز حکومت کو فوری / قبل از وقت انتخابات کرانے پر مجبور کرنے کی طاقت اور خاطر خواہ صلاحیت نہیں ہے۔ دوسرے لفظوں میں عمران 2023 کے انتخابات تک شہباز حکومت کو اقتدار سے نہیں ہٹا سکتا بلکہ اگر ہوتا ہے تو شہباز صرف اپنی سیاسی غلطیوں کی وجہ سے ہی اقتدار سے بے دخل ہو گا۔ شہباز حکومت (شیڈول کے مطابق) 2023 کے انتخابات تک آسانی سے اقتدار میں رہ سکتی ہے اگر وہ عمران کے سیاسی حقوق، یوکرین کی حمایت، فرقہ واریت کے خاتمے اور نواز، زرداری وغیرہ اور کشمیریوں کو انصاف فراہم کرے جیسا کہ ذیل میں بتایا گیا ہے:-
(1)- سب سے پہلے شہباز اس بات کو یقینی بنائیں کہ عمران اور ان کی پارٹی پی ٹی آئی جب بھی اور جہاں کہیں مظاہرے، ریلیاں، مارچ، احتجاج، جلسہ، دھرنا وغیرہ کرنا چاہیں انہیں فوری طور پر قانون کے مطابق مناسب پولیس/انتظامی اجازت دی جائے. اس کے ساتھ ساتھ اگر ان سیاسی سرگرمیوں میں پی ٹی آئی تشدد یا کسی اور غیر قانونی سرگرمی میں ملوث ہوتی ہے تو انہیں فوری طور پر روکا جائے اور قانون کے مطابق سزا دی جائے۔ شہباز کو کچھ اضافی کرنے کی ضرورت نہیں ہے، بلکہ اگر ان سب کو یقینی بنا لیا گیا تو وقت کے ساتھ ساتھ (جلد ہی) عمران ان سیاسی سرگرمیوں میں عوامی موجودگی سے کافی حد تک محروم ہو جائیں گے کیونکہ شہباز حکومت نہ صرف قانونی ہے بلکہ جائز بھی ہے۔ کیونکہ اگر عمران حکومت کو ہٹانے کی مبینہ امریکی سازش تھی تو بھی یہ امریکی حکومت اور پاکستان کی حکومت (اس وقت کی عمران حکومت) کے درمیان معاملہ تھا اور ممبر آف پارلیمنٹ (MNAs) کا اس سے کوئی تعلق نہیں تھا۔ لہٰذا MNAs کی طرف سے لائی گئی تحریک عدم اعتماد قانونی اور جائز تھی جب تک کہ ان MNAs نے کوئی ایسا جرم نہ کیا ہو جس میں ان کو نااہل قرار دیا جا سکے۔ عمران حکومت (تقریباً متعلقہ دو ماہ کے دوران جب وہ اقتدار میں تھی) نے کبھی بھی امریکہ اور ان MNAs کے درمیان منی ٹریل وغیرہ کا کوئی قابل عمل ثبوت فراہم نہیں کیا، لہٰذا شہباز شریف کی حکومت ( پی ٹی آئی سے منحرف کے ووٹ کے بغیرعمران حکومت کے خلاف عدم اعتماد کے بعد) ایک قانونی اور جائز حکومت ہے۔
(2)- شہباز حکومت کو روس کے خلاف یوکرین کی حمایت پر معذرت خواہ ہونے کی ضرورت نہیں۔ اگر روس (یوکرین پر حملہ کر کے موجودہ عالمی سیاسی نظام کو تباہ کرنے کے بعد) ایک متبادل عالمی سیاسی نظام قائم کرنے کے لیے تیار ہوتا تو باقی دنیا روس کی قیادت کو قبول کر لیتی لیکن روس ایسا نہیں کر رہا۔ لہٰذا ایٹمی پاکستان (جو بھی کہ اقوام متحدہ کے ناگزیر عالمی سیاسی نظام سے فائدہ اٹھا رہا ہے) سمیت پوری دنیا کی ذمہ داری ہے کہ اسے یوکرین کی خودمختاری، آزادی، علاقائی سالمیت اور انسانی حقوق کے تحفظ کے لیے امریکہ کا ساتھ دینا چاہئے. اس کے ساتھ ہی شہباز حکومت کو امریکہ سے یہ کہنا چاہئے کہ یوکرین کا بحران ختم ہونے کے بعد، ایک نیا ‘شریک عالمی سیاسی نظام’ اقوام متحدہ کے موجودہ (5 ممالک کو) ویٹو دینے والے عالمی سیاسی نظام کی جگہ لے کیونکہ دو ویٹو والے ممالک ( روس اور چین) تین دیگر ویٹو والے ممالک (امریکہ، برطانیہ اور فرانس) کے ساتھ مسلسل 24×7 لڑ رہے ہیں اور جو پوری دنیا کو پریشان کر رہے ہیں۔
(3)- مذہب کسی بھی معاشرے کے لیے اچھا ہوتا ہے لیکن جب یہ فرقہ واریت کو فروغ دیتا ہے تو اس سے معاشرے کو نقصان پہنچتا ہے اور یہ پاکستان کو بھی بہت زیادہ نقصان پہنچا رہا ہے جہاں دوسرے مسلمانوں (شیعوں، احمدیوں وغیرہ) کو اب بھی مارا اور ستایا جاتا ہے۔ آزاد ہندوستان اور پاکستان (مشرق و مغرب) ’’انڈین انڈیپنڈنس ایکٹ 1947‘‘ کی بنیاد پر وجود میں آئے جس میں آبادی کو اپنے اپنے ملک سے غیر قانونی طور پر زبردستی بے گھر نہیں کرنا چاہیے تھا (جو خطے کو فرقہ وارانہ زہر سے پاک رکھنے کے لیے اور کسی بھی مناسب طریقے سے کام کرنے والی اور ترقی پسند ریاست کے لیے ضروری ہے)۔ ہندوستان کی اس آزادی / تقسیم کو اس سادہ وجہ سے غیر قانونی قرار دیا گیا ہے کہ تقسیم کے دوران جبری آبادی کی منتقلی (بذریعہ بڑے پیمانے پر نسل کشی) کی اجازت دی گئی تھی۔ یہ تقسیم (جب ہندوستان, امریکہ کے زیر اہتمام اقوام متحدہ کا رکن تھا) مذہب کی بنیاد پر برطانیہ اور امریکہ نے پاکستان (خاص طور پر مغربی پاکستان) بنانے کے لیے انجینیئر کیا تھا جس کی انہیں افغانستان کی سرحد پر سوویت یونین کے خلاف ضرورت تھی (جو انہوں نے سیٹو SEATO اور CENTO سینٹو کے ذریعے حاصل کی تھی) اور ہندوستان اور پاکستان (مشرق اور مغرب) کے اس وقت کے سیاسی رہنما اس جال میں پھنس گئے۔ تقسیم کے بعد اور اس طرح کی جبری آبادی کی منتقلی کے بعد ہندوستان اور پاکستان (مشرق اور مغرب) کی حکومتوں نے کبھی بھی ان جبری اور غیر قانونی طور پر بے گھر ہونے والے لوگوں کی بحالی کی کوشش نہیں کی کیونکہ ان حکومتوں نے اپنے ممالک میں کبھی بھی مناسب امن و امان نہیں دیا جو اس طرح کی بحالی کے لیے ضروری تھا۔
(4)- کوئی بھی یہ نہیں کہتا ہے کہ ہندو اکثریت والا ہندوستان فرقہ پرست نہیں ہے جیسا کہ ہندوستان میں, خاص طور پر اسی کی دہائی کے اواخر سے بابری مسجد کے تنازعہ اور 1992 میں اس کے انہدام کے بعد جو کچھ ہوا, اس سے ظاہر ہوتا ہے جہاں گجرات میں 2002 سمیت ہزاروں بنیادی طور پر بے گناہ مسلمان مارے گئے، زخمی ہوئے، ان کی املاک تباہ ہوئے، خواتین کی بے عزتی کی گئی۔ لیکن مسلم پاکستان اور بنگلہ دیش میں حالت اس سے بھی بدتر ہے کیونکہ تقریباً 20% ہندو/ سکھ آبادی کو پاکستان اور بنگلہ دیش میں سے ہر ایک سے زبردستی بے دخل کر دیا گیا ہے جب کہ ہندوستان میں مسلمانوں کی آبادی وہی رہی ہے بلکہ تقریباً 15% تک بڑھ گئی ہے (بشمول لاکھوں بنیادی طور پر بنگلہ دیش سے غیر قانونی تارکین وطن)۔ برصغیر پاک و ہند میں یہ فرقہ وارانہ زہر انسانی حقوق کے نفاذ میں (جیسا کہ اقوام متحدہ کے آئی سی سی پی آر ICCPR میں درج ہے) اور خطے کی ترقی (معاشی سمیت) میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔ لہٰذا زیادہ تفصیلات میں جائے بغیر کہ تقسیم ہند سے قبل برصغیر پاک و ہند میں فرقہ واریت کا وائرس کس طرح پھیلا یہ کہنا کافی ہے کہ اب شہباز حکومت کو(ان جبری طور پر بے گھر ہونے والے ہندوؤں، مسلمانوں اور سکھوں اور ان کی اولادیں جن کی تعداد تقریباً 16 کروڑ ہے) کو کم از کم ہندوستان، پاکستان اور بنگلہ دیش کی ‘دوہری شہریت’ کے لیے کام کرنا چاہیے ( ان ممالک میں مناسب امن و امان کے ساتھ جہاں اس ‘دوہری شہریت’ والے لوگ جائیں گے) ۔
(5)- شہباز حکومت کو چاہیے کہ وہ غیر ضروری ’’قومی احتساب بیورو‘‘ (NAB) کو فوری طور پر تحلیل کردے اور بدعنوانی میں ملوث ہر شخص کو سزا دینے کے لیے عام عدالتی کارروائی شروع کرے۔ آخر کار ہندوستان میں بھی حکومتی عہدیداروں بشمول کئی وزرائے اعلیٰ کو بدعنوانی کے مقدمات میں سزائیں سنائی گئی ہیں اور بغیر کسی ظلم و ستم کی کارروائی (جیسا کہ NAB نے پاکستان میں کیا ہے) کے جیل بھیج دیا گیا ہے ۔ مزید برآں شہباز کو چاہیے کہ وہ متعلقہ لوگوں کی طرف سے سپریم کورٹ آف پاکستان (SCP) میں رٹ پٹیشنز دائر یقینی کریں (i) نواز شریف، آصف علی زرداری اور دیگر کے خلاف پاناما پیپرز وغیرہ سے متعلق تمام مقدمات کے فیصلوں پر نظرثانی کریں۔ ​​(ii) – کسی بھی کیس کو پہلے ٹرائل کورٹ میں بھیجا جانا چاہیے (iii) – اس بات کو یقینی بنائیں کہ ان تمام متاثرین کو مقدمے کی سماعت کے دوران اور ہائی کورٹ اور SCP میں تمام اپیلیں کے دوران ضمانت اور الیکشن لڑنے کا اور پارٹی عہدوں پر فائز ہونے کا حق ملنا چاہیے ( iv) ان متاثرین کو مکمل انصاف کے مفاد میں SCP کی طرف سے کوئی اور ریلیف۔ مزید برآں شہباز حکومت کو آئین اور قوانین میں مناسب ترامیم کو یقینی بنانا چاہیے جو مستقبل میں اس طرح کی عدالتی کی حد سے تجاوز (جیسا کہ نواز کے معاملے میں کیا گیا تھا ​​جب انہیں وزیر اعظم کے عہدے سے غیر قانونی طور پر ہٹا دیا گیا تھا) کو ناممکن بنا دیں گے اور تاحیات نااہلی اور ظالمانہ NAB کو وجود میں لانے جیسے برے قوانین کو ختم کر دیں گے۔
(6) شہباز حکومت کی طرف سے پاک فوج (اور دیگر سیکورٹی فورسز) کو حکم دیا جائے کہ وہ ایل او سی LoC پرغیر مسلح پاکستان کے اور جموں و کشمیرکے 10 لاکھ سے زائد لوگوں کے (بین الاقوامی میڈیا کی موجودگی میں) غیر متشدد امن مارچ جو جموں و کشمیر (AJK + گلگت بلتستان) سے سری نگر، ہندوستان تک ہوگا, میں رکاوٹ نہ ڈالی. یہ امن مارچ ہندوستانی حکام کے سامنے گرفتاری کی پیشکش کریں گے اور کشمیریوں کے انسانی حقوق (جس سے انہیں انکار کیا جا رہا ہے) کی فوری بحالی کا مطالبہ کریں گے اور متحدہ جموں و کشمیر میں استصواب رائے کا مطالبہ کیا جائے گا, جیسا کہ جموں و کشمیر کے ہندوستان سے الحاق کے آلے IoC اور اقوام متحدہ کی قرارداد 1948 کے ذریعہ لازمی قرار دیا گیا ہے۔ (شہباز حکومت کو اس بات کو یقینی بنانا چاہئے کہ پاکستان غیر ضروری اور بے وقوفانہ طور پر UNPKF کی مدد کے ساتھ یا اس کے بغیر ہندوستان کی سیکیورٹی فورسز کے تحت اس رائے شماری کو انجام دینے کے لئے, آزاد جموں و کشمیر اور GB کو پاکستانیوں سے خالی کرنے کے بارے میں ہنگامہ خیزی نہیں کرے گا)۔ یہ امن مارچ نہ صرف عمران کے جھوٹے جہادی / اسلامی بیانیے کی ہوا نکالنے کے لیے کافی ہے بلکہ شہباز حکومت کا نام انسانی حقوق کی تاریخ میں سنہرے حروف میں درج کرائے گا کیونکہ یہ دسیوں لاکھ کشمیری مسلمانوں اورلاکھوں زبردستی بے گھر ہندو کشمیری پنڈتوں کو حقیقی راحت اور مدد فراہم کرے گا جو تمام دہائیوں سے مصائب کا شکار ہیں۔
اس میں کوئی شک نہیں کہ پاکستان کی معیشت کو پٹری پر لانا کم از کم شرط ہوگی جو شہباز حکومت کو 2023 کے انتخابات تک (اور اس سے آگے بھی) آرام سے اقتدار میں رکھے گی لیکن یہ اس وقت تک کافی نہیں ہوگا جب تک شہباز حکومت مطلوبہ سیاسی عزم اور دیانتداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے مذکورہ بالا کام نہیں کرتی۔ .
آپ کا مخلص
ہیم راج جین
شکوپی، MN، USA
Whatsapp: +91-7353541252 Mo: +1 9529991758

You might also like