Baseerat Online News Portal

یوکرین کی جنگ کی وجہ سے بدلی ہوئی صورت حال

محترم ایڈیٹر
موضوع:- (یوکرین کی جنگ کی وجہ سے بدلی ہوئی صورت حال میں) پاک فوج کو فوج کے زیر تسلط FSDSAARC کو عملی جامہ پہنانے کے لیے سارک میں ‘US-Support for FSDSAARC’ سیل شروع کرنے کے لیے قیادت کرنی چاہیے۔
کوئی بھی پاکستان کے ’انٹر سروسز پبلک ریلیشنز‘(آئی ایس پی آر) کے غصے کو سمجھ سکتا ہے جس نے اتوار کے روز کچھ سیاسی رہنماؤں، صحافیوں اور تجزیہ کاروں کی طرف سے ملک کے جاری سیاسی مباحثے میں اس کا نام گھسیٹنے کی تیز اور دانستہ کوششوں پر سخت اعتراض کیا ۔
تاریخ میں جانے کا کوئی مطلب نہیں کہ کس طرح پاکستان کی فوج نے پاکستان کی سیاست میں مداخلت کی، جہاں اس نے پاکستان کے وجود کے کافی حصے میں فوجی طور پر پاکستان پر حکومت کی، یا ماضی کے واقعات میں جہاں PDM کے رہنما بنیادی طور پر PML- N کے رہنما (جو مرکز میں اور پنجاب کے سب سے بڑے اور اہم صوبے میں اب اقتدار میں ہیں) نے 2020 سے فوج اور اس کے رہنماؤں پر (گوجرانوالہ کے جلسے وغیرہ میں) 2018 کے انتخابات میں دھاندلی کا الزام لگایا، جس نے (ان کے مطابق عمران کو اقتدار کا موقع دیا)۔ ان تمام باتوں کو پاک فوج کو ایک طرف رکھنا چاہیے اور بنیادی طور پر بھول جانا چاہیے کیونکہ یوکرائن کی جنگ (جس میں فوجی طاقت کی اہمیت ظاہر کی گئی ہے) نے پوری دنیا کا سیاسی نظام بدل کر رکھ دیا ہے اور اب ہر ملک کو (i) فیصلہ کرنا ہوگا کہ آیا وہ امریکہ کی قیادت میں مغرب کی ‘لبرل مغربی جمہوریت’ یا روس-چین اتحاد کی ’جابر چینی جمہوریت‘ کے ساتھ ہیں اور (ii) – ایک متبادل سیاسی نظام کو اپنانا جہاں فوج کا بڑا کردار ہوگا۔
اتفاق سے پہلے سوال کا جواب روس کی طرف سے فراہم کیا جا چکا ہے جس نے یوکرین پر حملہ کر کے 1945 میں امریکہ کے زیر سرپرستی UN کے موجودہ عالمی سیاسی نظام کو تباہ کر دیا ہے یہ جاننے کے باوجود کہ روس متبادل عالمی سیاسی نظام شروع کرنے کے لیے تیار نہیں ہے۔ عصری دنیا میں (جدید سائنس اور ٹیکنالوجی کی بے مثال ترقی کی وجہ سے بالخصوص آئی ٹی کے شعبے میں) عالمگیریت ناگزیر ہے اور جو کہ عالمی سیاسی نظام کے بغیر ممکن نہیں۔ لہٰذا باقی دنیا کے پاس امریکہ کے زیر اہتمام عالمی سیاسی نظام کے ساتھ چلنے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہے۔ لیکن ایک سنگین مسئلہ ہے جس کا سامنا نہ صرف پاکستان بلکہ سارک کے ہر ملک کو ہے۔ یعنی اگر سارک بکھرا رہتا ہے تو دونوں بلاک (امریکہ کی قیادت میں مغرب اور روس – چین) ان کے اندرونی اور بیرونی مسائل سے فائدہ اٹھائیں گے اور جو بالآخر پورے سارک خطے کو معاشی سمیت ہر میدان میں اپنی حقیقی صلاحیتوں کو حاصل کرنے سے دور رکھیں گے۔
ایسی صورت حال میں اگر سارک کے تمام 8 ممالک کی عسکری قیادت ایک ساتھ ہو جائے تو وہ آسانی سے ‘فیڈریشن آف سیکولر ڈیموکریٹک سارک’ (FSDSAARC) حاصل کر سکتے ہیں لیکن یہ تب ہی ہو گا جب پاک فوج قیادت کرے جیسا کہ ذیل میں بتایا گیا ہے کیونکہ بھارت بہت پہلے مارشل روایات کھو چکا ہے اس لیے اس کی فوج سویلین کلچر کے کنٹرول میں ہے:
(1)- سب سے پہلے پاک فوج کو یہ سمجھ لینا چاہیے کہ سارک خطے میں اصل مسئلہ فرقہ واریت ہے جو اس خطے کو متحد ہونے سے روک رہی ہے۔ اس معاملے میں پاک فوج کو مغلیہ سلطنت کے عظیم اکبر سے سبق سیکھنا چاہیے جس نے ہندوستان پر حکومت کی اور اسلام سمیت تمام مذاہب کو اس کی مناسب جگہ پر رکھا۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ جب اکبر کو معلوم ہوا کہ کوئی بھی مذہب سلطنت کے مفادات کے لیے موزوں نہیں ہے تو اس نے ایک نیا مذہب بھی شروع کیا، جس کا نام ‘دین الٰہی’ تھا، حالانکہ وہ مر گیا اور اس کی تشہیر کے لیے کافی وقت نہیں ملا۔ دوسرے لفظوں میں پاک فوج کو سمجھنا چاہیے کہ مذہب کا فرض ریاست (جس میں فوجی طاقت کی اولیت ہے) کے مفادات کی خدمت ہے .
(2)- دوسرا سب سے اہم عنصر پاک فوج کو سمجھنا ہوگا کہ طاقتور جدید سائنس اور ٹیکنالوجی کے لیے آزاد ذہن کی ضرورت ہے جو صرف ایک سیکولر جمہوریت میں ممکن ہے۔ لیکن سارک خطے میں غالب مذاہب سیکولر جمہوریت کی ضرورت کے لیے وقت دینے کے لیے تیار نہیں ہیں (جو کہ یورپ میں عیسائیت نے 17ویں صدی کے لگ بھگ ‘مذاہب کی جنگ’ کے دوران کیا تھا)۔ لہٰذا، دی گئی صورت حال میں، واحد حل یہ ہے کہ تمام سارک ممالک میں مذہبی آزادی کو یقینی بنایا جائے (مختلف مذاہب کے درمیان مسابقت کو یقینی بنانے کے مفاد میں) جہاں سارک کا ایک ادارہ انسانی حقوق (بشمول مذہبی حقوق) کی سنگین خلاف ورزیوں کے معاملات میں سارک کے قصوروار ارکان ملک میں فوجی مداخلت بھی کر سکتے ہیں۔ ایسا فی الحال اس وجہ سے نہیں کیا جا سکتا کہ سارک میں فوجی مداخلت کا ایسا کوئی طریقہ کار موجود نہیں ہے۔
(3) – پاک فوج / سارک اس معاملے میں امریکہ کی مدد لے سکتی ہے – (i) – امریکہ سے یا تو اقوام متحدہ کے ذریعے یا کسی اور تنظیم کے ذریعے فوجی مداخلت کا ایسا طریقہ کار مہیا کیا جا سکتا ہے۔ (جب تک کہ سارک اپنا کوئی ایسا طریقہ کار تیار نہیں کرتا ہے) (ii) اقوام متحدہ میں ترمیم کرنے کے لیے (یا ایک متبادل عالمی ادارہ متعارف کرانے کے لیے) کہے جہاں کچھ ممالک کی جانب سے ویٹو کا کوئی نظام نہیں ہو گا، لیکن ایک شراکتی نظام ہوگا جہاں FSDSAARC کے پاس عوامی (بشمول فوج)، رقم، مواد (بشمول فوج) کی شراکت اور انسانی حقوق کے حوالے سے اس کے ریکارڈ کے مطابق ووٹنگ کے حقوق ہوں گے۔
(4)- پاک فوج کے لیے درج بالا کام اتنا مشکل نہیں جتنا کہ سطح پر نظر آتا ہے۔ پاک فوج یہ کام آسانی سے کر سکتی ہے اگر وہ (i) سارک کے تمام 8 ممالک کی سیاسی جماعتوں سے رابطہ کرے جو فوج کے حامی ہیں خاص طور پر بھارت میں جو سارک کا سب سے بڑا ملک ہے اور (ii)- پاکستان کی سیاست میں اپنا وقت اور توانائی ضائع نہیں کرے، جو وہ آسانی سے کرسکتے ہیں جیسا کہ ذیل میں بیان کیا گیا ہے۔
(5) – شہباز – حکومت نہ صرف قانونی ہے بلکہ جائز بھی ہے۔ کیونکہ اگرچہ عمران حکومت کو ہٹانے کی مبینہ امریکی سازش تھی، لیکن یہ امریکی حکومت اور پاکستان کی حکومت (سابقہ عمران حکومت) کے درمیان معاملہ تھا اور ممبران پارلیمنٹ (ایم این اے) کا اس سے کوئی تعلق نہیں تھا۔. لہٰذا ایم این ایز کی طرف سے لائی گئی تحریک عدم اعتماد قانونی اور درست تھی جب تک کہ ان ایم این ایز نے کوئی ایسا جرم نہ کیا ہو جس میں انہیں نااہل قرار دینے کا امکان ہو۔ عمران حکومت نے (جب وہ اقتدار میں تھی تقریباً دو ماہ کے دوران) کبھی بھی امریکہ اور ان ایم این ایز کے درمیان کسی بھی رقم کی لین دین وغیرہ کا کوئی قابل عمل ثبوت نہیں دیا، اس لیے ( پی ٹی آئی سے منحرف ہونے والوں کے ووٹ کے بغیر عمران کے خلاف عدم اعتماد کے بعد) وزیر اعظم شہباز شریف کی حکومت ایک قانونی اور جائز حکومت ہے۔
(6) لیکن یہ پنجاب حکومت کا معاملہ نہیں ہے جو قانونی ہو سکتی ہے (عدالتی حکم کی وجہ سے) لیکن ناجائز ہے۔ فقہ کے اصولوں میں سے ایک یہ ہے کہ ‘کسی کو بھی اس کی غلطیوں سے فائدہ اٹھانے کی اجازت نہیں ہونی چاہیے’۔ پنجاب کے موجودہ وزیراعلیٰ حمزہ نے پی ٹی آئی کے 26 منحرف (جو نااہل قرار دیئے جائیں گے) کی حمایت کے ساتھ 197 ووٹوں کے ساتھ اکثریت حاصل کی۔ اسی لیے حمزہ کا اکثریتی ووٹ کی بنیاد عوام کی نظر میں ناجائز ہے۔ اس لیے پاک فوج کو ایسی پالیسی کی حمایت کرنی چاہیے۔ (i) – پنجاب میں پی ٹی آئی کے ارکان کے منحرف ہونے کے معاملے میں اعلیٰ عدلیہ کی طرف سے انصاف اور (ii) – صرف عمران اور ان کی پارٹی پی ٹی آئی کو سیاسی اختیار، قانون کے مطابق فوری طور پر مناسب پولیس / انتظامی اجازت دے کر، اگر وہ مظاہرے ، ریلیاں، مارچ، احتجاج، جلسہ، دھرنا وغیرہ کرتے ہیں۔ لیکن اس کے ساتھ ساتھ اگر ان سیاسی سرگرمیوں میں پی ٹی آئی تشدد یا کسی اور غیر قانونی سرگرمی میں ملوث ہوتی ہے تو انہیں فوری طور پر روکا جائے اور قانون کے مطابق سزا دی جائے۔
(7)- اگر پاک فوج امریکہ کے قوانین کے مطابق سارک کو ‘US-support for FSDSAARC’ کے نام سے سیل شروع کرنے پر آمادہ کرتی ہے تو اس سے مقاصد حاصل کرنے میں مدد ملے گی۔ اتفاق سے یہ امریکی-کانگریس کے انتخابات کا سال ہے اس لیے اس سے ‘FSDSAARC کے لیے امریکی حمایت حاصل کرنے کے لیے پاک فوج کا کام آسان ہو جائے گا۔ ‘US-support for FSDSAARC نہ صرف US-انتظامیہ کی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کر سکتا ہے بلکہ US-کانگریس کی دو طرفہ حمایت بھی حاصل کرنے کی کوشش کر سکتا ہے (امریکی میڈیا وغیرہ کے ذریعے 2022 کے امریکی-کانگریس انتخابات کے دوران اسے ایک اہم مسئلہ بنا کر)۔
لہٰذا پاک فوج (خطے میں واحد آؤٹ فٹ جو مارشل ڈومیننس کی اہمیت کو سمجھتی ہے) کو پاکستان کے سویلین معاملات میں غیر ضروری طور پر اپنا وقت اور توانائی ضائع کرنے کی بجائے (بقیہ 7 سارک ممالک کی فوجوں کے تعاون سے) فوج کے زیر تسلط علاقائی سیاسی ترتیب FSDSAARC قائم کرنے کی قیادت کرنی چاہیے جو کہ یوکرین کی جنگ کی وجہ سے بدلے ہوئے عالمی منظر نامے میں پورے سارک خطے میں امن، خوشحالی اور انصاف کے مفاد میں ناگزیر ہو گیا ہے۔
آپ کا مخلص
ہیم راج جین
شکوپی، MN، USA
Whatsapp: +91-7353541252 Mo: +1 9529991758

You might also like